Sada E Waqt

چیف ایڈیٹر۔۔۔۔ڈاکٹر شرف الدین اعظمی۔۔ ایڈیٹر۔۔۔۔۔۔ مولانا سراج ہاشمی۔

Breaking

متفرق

Monday, November 26, 2018

جونپور۔ظفرآباد۔چیرمین کے خلاف مقدمہ۔پولس استحصال کے خلاف آواز اٹھانے کی سزا۔

جون پور  اتر پردیش۔(نمائندہ)۔
. . . . . . . . . . . . . . . . . . . . . . . . . . . 
دبنگوں کی پٹائی سے پریشان متاثرہ کنبہ کی مدد کرنا چیئرمین ظفرآباد کو مہنگا پڑ گیا۔ تھانہ انچارج ظفرآباد نے متاثرہ کنبہ سمیت اس کی مدد کرنے والے چیئرمین کے خلاف بھی مقدمہ درج کر لیا۔ پیر کو پولیس سپرنٹنڈنٹ، ضلع مجسٹریٹ، ڈی آئی جی وارانسی، پولیس ڈائریکٹر جنرل لکھنؤ، شہر ترقی وزیر مملکت، وزیر اعلی اتر پردیش حکومت اور قومی انسانی حقوق کمیشن نئی دہلی کو خط ارسال کر چیرمین نے کاروائی کی فریاد کی ہے۔
چیئرمین ظفرآباد پرمود برنوال کے مطابق گزشتہ 1 نومبر کو گولو،مولو ولد روندر اور گوداوری دیوی اہلیہ روندر ہریجن رہائشی چک محمود تھانہ ظفرآباد کو پڑوس کے ہی کچھ شہ زوروں نے مارپیٹ دیا تھا۔ متاثرین ان کے پاس آکر شکایت کیا تو انھوں نے تھانہ انچارج سے فون پر بات کی جس پر انھوں نے کاروائی کی یقین دہانی کراتے ہوئے متاثرین کو تھانے پر تحریر دینے کیلئے بلایا۔لیکن جب متاثرین تھانے پر پہنچے تو مقدمہ درج کرنے کے بجائے تھانہ انچارج پرو کمار سنگھ نے انھیں گالی دیتے ہوئے بھگا دیا۔متاثرین کے زریعے تھانہ انچارج کی بدسلوکی کے بارے میں بتانے پر انھوں نے اعلی افسران سے بات کی جس کے دباؤ میں تھانہ انچارج نے مقدمہ تو درج کیا لیکن کوئی کاروائی نہیں کی۔انھوں نے بتایا کہ تھانہ انچارج اعلی افسران کی ڈانٹ سے خفا ہو گئے اور متاثرین کے ساتھ ان پر بھی مقدمہ درج کر متاثرین کو ہی پریشان کر رہے ہیں۔انھوں نے اعلی افسران سے معاملے میں مداخلت کر تھانہ انچارج کے خلاف کاروائی کی مانگ کی ہے۔