Sada E Waqt

چیف ایڈیٹر۔۔۔۔ڈاکٹر شرف الدین اعظمی۔۔ ایڈیٹر۔۔۔۔۔۔ مولانا سراج ہاشمی۔

Breaking

متفرق

Monday, January 14, 2019

نمایاں افسانہ نگار، محقق،تنقید نگار و شاعر " ڈاکٹر شمس الرحمٰن فاروقی" کے یوم ولادت 15 جنوری کے ضمن میں

پیشکش۔۔۔صدائے وقت۔
. . . . . . . . . . . . . . . . . . . . . . . . . . . 
نام *شمس الرحمن فاروقی، ڈاکٹر* ۔ *۱۵؍جنوری۱۹۳۶ء* کو *پرتاب گڑھ یوپی (بھارت)* میں پیدا ہوئے۔ الہ آباد یونیورسٹی سے ۱۹۵۳ء میں انگریزی میں ایم اے کیا۔علم وفضل کی قدیم روایت باپ اور ماں دونوں سے ورثے میں ملی۔ ذریعۂ معاش کے لیے حکومت ہند میں طویل عرصے نوکری کی۔ یہ شاعر کے علاوہ افسانہ نگار ، نقاد اور محقق ہیں۔ رسالہ *’’شب خون‘‘* جو الٰہ آباد (پریاگ راج) سے نکلتا رہا ، اس کے ایڈیٹر تھے۔ یہ دودرجن سے زائد کتابوں کے مصنف اور مؤلف ہیں۔ چند کتابوں کے نام یہ ہیں:
*’’گنج سوختہ‘‘، ’’سبز اندرسبز‘‘، ’’چارسمت کا دریا‘‘، ’’آسماں محراب‘‘* (شعری مجموعہ)، *’’سوار اوردوسرے افسانے‘‘، ’’افسانے کی حمایت میں‘‘، ’’لفظ ومعنی‘‘، ’’فاروقی کے تبصرے‘‘، ’شعر شور انگیز‘‘، ’’عروض، آہنگ اور بیان‘‘، ’’اردو غزل کے اہم موڑ‘‘* (مجموعہ ہائے مضامین)۔

*بحوالۂ:پیمانۂ غزل(جلد دوم)،محمد شمس الحق،صفحہ:310*
. . . . . . . . . . . . . . . . . . . . . . . . . . . 
🌈  *معروف شاعر شمس الرحمن فاروقی کے منتخب اشعار 🌈

عمرِ رواں کی منزلیں طول طویل مختصر
آپ بھی ہم سفر رہے غیر بھی ہم عناں گیا
---
مسل کر پھینک دوں آنکھیں تو کچھ تنویر ہو پیدا
جو دل کا خون کر ڈالوں تو پھر تاثیر ہو پیدا
---
موسمِ سنگ و رنگ سے ربط شرار کس کو تھا
لحظہ بہ لحظہ جل گئی دردِ بہار کس کو تھا
---
*اک آتِش سیال بھر دے مجھ کو*
*اک جشنِ خیالی کی خبر دے مجھ کو*
---
ان کا خیال ہر طرف ان کا جمال ہر طرف
حیرت جلوہ رو بہ رو دستِ سوال ہر طرف
---
*ریشہ ریشہ بکھر گیا میں نہ کہ تو*
*اپنی تہہ میں اتر گیا میں نہ کہ تو*
---
جی چاہتا ہے سینۂ افلاک چیر کر
طوفانِ ابر و باد کو مٹھی میں بھر لیں ہم
---
دل کے محبس میں کریں ذات کا ماتم کب تک
آؤ باہر تو چلیں وقت کا اندازہ کریں
---
ادھر سے دیکھیں تو اپنا مکان لگتا ہے
اک اور زاویے سے آسمان لگتا ہے
---
*دیکھیے بے بدنی کون کہے گا قاتل ہے*
*سایہ آسا جو پھرے اس کو پکڑنا مشکل ہے*
---
محفل کا نور مرجعِ اغیار کون ہے
ہم میں ہلاک طالعِ بیدار کون ہے
---
*نازک ہے مثلِ ماہ مگر سرمئی بدن*
*اے جاں تجھے یہ کس نے دیئے غسل آگ کے*
---
*اے موجِ فلک میں سر اٹھانے والے*
*کٹ جائے تو روشن ہو وہ سر دے مجھ کو*

❂◆━━━━━▣🦋▣━━━━━━◆❂

Post Top Ad

Your Ad Spot