Sada E Waqt

چیف ایڈیٹر۔۔۔۔ڈاکٹر شرف الدین اعظمی۔۔ ایڈیٹر۔۔۔۔۔۔ مولانا سراج ہاشمی۔

Breaking

متفرق

Friday, January 18, 2019

دلی کی سردی کے نام ایک مزاحیہ نظم۔


شاعر/ساغر خیامی/ صدائے وقت / ماخوذ۔
. . . . . . . . . . . . . . . . . . . . . . . . . . .

ایسی سردی نہ پڑی ایسے نہ دیکھے جاڑے
دو بجے دن کو اذاں دیتے تھے مرغے سارے

وہ گھٹا ٹوپ  نظر آتے  تھے  دن   کو  تارے
سرد لہروں سے جمے جاتے تھے مے کے پیالے

ایک  شاعر  نے کہا  چیخ  کے  ساغر بھائی
عمر میں پہلے پہل چمچے سے چائے کھائی

آگ چھونے سے بھی ہاتھوں میں نمی لگتی تھی
سات کپڑوں میں بھی کپڑوں کی کمی لگتی تھی

وقت کے پاؤں کی رفتار تھمی لگتی تھی
راستے میں کوئی بارات، جمی لگتی تھی

جم گیا پشت پہ گھوڑے کی بیچارا دولہا
کھود کے  كھرپی سے سالے نے اتارا دولہا

كڑكڑاتے  ہوئے جاڑوں  کی قیامت  توبہ
آٹھ دن  کر نہ سکے لوگ  حجامت  توبہ

سرد  تھا  ان  دنوں   بازار  محبت   توبہ
کر کے بیٹھے تھے شريفاً سے شرافت توبہ

وہ تو زحمت بھی قدمچوں کی نہ سرلیتے تھے
جو  بھی کرنا  تھا بچھونے پہ ہی  کر لیتے تھے

سرد گرمی  کا بھی مضمون  ہوا جاتا تھا
جم کے ٹانک بھی تو معجون ہوا جاتا تھا

جسم  لرزے کے  سبب  نون ہوا جاتا  تھا
خاصہ شاعر بھی تو مجنون ہوا جاتا تھا

كپكپاتے ہوئے ہونٹوں سے غزل گاتا تھا
پکے راگوں  کا  وہ  استاد نظر  آتا  تھا

اور بھی سرد ہیں، معبود یہ احساس نہ تھا
کب سے آئے نہیں محمود یہ احساس نہ تھا

قلفا کھاتے ہیں کہ امرود یہ احساس نہ تھا
ناک چہرے پہ ہے موجود یہ احساس نہ تھا

منہ پہ رومال رکھے بزم  سے کیا آئے تھے
ایسا  لگتا   تھا  وہاں  ناک  کٹا   آئے تھے

سخت سردی کے سبب رنگ تھا محفل کا عجیب
ایک کمبل میں گھسے بیٹھے تھے دس بیس غریب

سرد موسم نے کیا پنڈت و ملا  کو قریب
كڑكڑاتے ہوئے جاڑے وہ سخن کی تقريب

درمياں شاعر و سامع کے  تھمے جاتے تھے
اتنی سردی تھی کہ اشعار جمے جاتے تھے

Post Top Ad

Your Ad Spot