Sada E Waqt

چیف ایڈیٹر۔۔۔۔ڈاکٹر شرف الدین اعظمی۔۔ ایڈیٹر۔۔۔۔۔۔ مولانا سراج ہاشمی۔

Breaking

متفرق

Saturday, May 4, 2019

ممتاز ومعروف شاعر " محشر بدایونی" کے یوم ولادت کے موقع پر۔

تاریخ ولادت - ٤ ؍مئی ؍ ١٩٢٢*
صدائے وقت۔
. . . . . . . . . . . . . . . . . . . . . . . . . . .
نام *فاروق احمد* اور تخلص *محشرؔ* تھا۔ *۴؍مئی۱۹۲۲ء* کو *بدایوں* میں پیدا ہوئے۔ اردو اور فارسی کی تعلیم گھر پر حاصل کی۔ اگست ۱۹۵۰ء میں  *’’آہنگ‘‘* کے مدیر معاون کے عہدے پر فائز ہوئے۔ پھر ایک عرصے تک *’’آہنگ“* کے مدیر رہے۔ان کے والد تاریخ گو شاعر تھے۔اس طرح شاعری محشر بدایونی کو ورثے میں ملی۔ غزل ان کی محبوب صنف سخن تھی۔ *۹؍نومبر ۱۹۹۴ء*  میں انتقال کرگئے۔ ان کی تصانیف کے نام یہ ہیں:
*’غزل دریا‘* *’چراغ میرے ہم نوا‘، ’فصلِ فردا‘، ’شہرِ وفا‘، ’گردشِ کوزہ‘، ’حرفِ ثنا‘، ’بین باجے‘، ’شاعر نامہ‘،’ سائنس نامہ‘، ’جگ مگ تارے‘* (بچوں کی شاعری)۔
 . . . . . . . . . . . . . . . . . . . .
*معروف شاعر محشرؔ بدایونی کے یومِ ولادت پر منتخب اشعار بطورِ خراجِ تحسین...*
محشر بدایونی
. . . . . . . 
ابھی سر کا لہو تھمنے نہ پایا
ادھر سے ایک پتھر اور آیا
---
*اب ہوائیں ہی کریں گی روشنی کا فیصلہ*
*جس دئیے میں جان ہوگی وہ دیا رہ جائے گا*
---
میں اتنی روشنی پھیلا چکا ہوں
کہ بجھ بھی جاؤں تو اب غم نہیں ہے
---
کرے دریا نہ پل مسمار میرے
ابھی کچھ لوگ ہیں اس پار میرے
---
ہم کو بھی خوش نما نظر آئی ہے زندگی
جیسے سراب دور سے دریا دکھائی دے
---
*ﺟﺲ ﺩﺷﺖ ﺳﮯ ﻻﺋﮯ ﺗﮭﮯ ﻭﮨﯿﮟ ﻟﮯ ﭼﻠﻮ ﯾﺎﺭﻭ*
*ﮐﯿﻮﮞ ﺍﯾﺴﮯ ﺧﺮﺍﺑﮯ ﻣﯿﮟ ﮨﻤﯿﮟ ﺧﺎﺭ ﮐﯿﺎ ﮨﮯ*
---
ﻣﯿﺮﯼ ﺍﯾﮏ ﺍﮎ ﺷﺎﺥ ﮨﮯ ﻓﻀﻞ ﻭ ﻋﺪﻝ ﮐﯽ ﻣﯿﺰﺍﮞ
ﭼﮭﺎﺅﮞ ﺍﺩﮬﺮ ﺩﻭﮞ ﺩﮬﻮﭖ ﺍﺩﮬﺮ ﺩﻭﮞ ﯾﮧ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﮔﺎ
---
*ﺭﻭﺷﻨﯽ ﻣﺤﺸﺮؔ ﺭﮨﮯ ﮔﯽ ﺭﻭﺷﻨﯽ ﺍﭘﻨﯽ ﺟﮕﮧ*
*ﻣﯿﮟ ﮔﺰﺭ ﺟﺎﺅﮞ ﮔﺎ ﻣﯿﺮﺍ ﻧﻘﺶ ﭘﺎ ﺭﮦ ﺟﺎﺋﮯ ﮔﺎ*
---
ﮨﻮﺍﺋﮯ ﺷﺐ ﻣﺮﮮ ﺷﻌﻠﮯ ﺳﮯ ﺍﻧﺘﻘﺎﻡ ﻧﮧ ﻟﮯ
ﮐﮧ ﻣﯿﮟ ﺑﺠﮭﺎ ﺗﻮ ﺍﻓﻖ ﺗﮏ ﺩﮬﻮﯾﮟ ﺍﮌﺍ ﺩﻭﮞ ﮔﺎ
---
ﮐﺲ ﻏﻢ ﮐﻮ ﺍﺏ ﺗﻌﻠﻖ ﺧﺎﻃﺮ ﮐﺎ ﻧﺎﻡ ﺩﯾﮟ
ﺍﺏ ﮐﻮﺋﯽ ﻏﻢ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﮯ ﮐﺴﯽ ﺳﮯ ﭼﮭﭙﺎ ﮨﻮﺍ
---
*ﻭﮦ ﺍﮎ ﻣﺴﺎﻓﺮ ﺣﻖ ﮐﻮﺵ ﺗﮭﺎ ﺳﻮ ﺍﺱ ﮐﺎ ﯾﮧ ﺍﺟﺮ*
*ﺻﺪﺍﻗﺘﻮﮞ ﮐﮯ ﺳﻔﺮ ﮨﯽ ﻣﯿﮟ ﺍﻧﺘﻘﺎﻝ ﮨﻮﺍ*
---
ﺳﻔﯿﺮ ﻓﻦ ﺗﮭﮯ ﺳﻮ ﺗﺼﻮﯾﺮ ﮐﺮ ﺩﺋﯿﮯ ﮔﺌﮯ ﮨﻢ
ﭘﮭﺮ ﺍﯾﮏ ﺧﻮﺍﺏ ﺳﮯ ﺗﻌﺒﯿﺮ ﮐﺮ ﺩﺋﯿﮯ ﮔﺌﮯ ﮨﻢ
---
ﺧﺎﻟﯽ ﺷﺎﺧﻮﮞ ﮐﺎ ﺑﮭﯽ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ﺑﮭﻼ ﮐﻮﺋﯽ ﻣﻘﺎﻡ
ﺟﻮ ﺷﺠﺮ ﭼﮭﺎﺅﮞ ﺑﭽﮭﺎ ﺩﯾﮟ ﻭﮦ ﺷﺠﺮ ﮨﻮﺗﮯ ﮨﯿﮟ
---
ﺗﮭﺎ ﻣﯿﮟ ﺁﺧﺮ ﺍﺳﯽ ﻣﻮﺳﻢ ﮐﯽ ﻓﻀﺎ ﻣﯿﮟ ﭘﮩﻠﮯ
ﺍﺱ ﻗﺪﺭ ﺳﻮﺯ ﻧﮧ ﺗﮭﺎ ﻣﯿﺮﯼ ﻧﻮﺍ ﻣﯿﮟ ﭘﮩﻠﮯ
---
ﻭﮦ ﺣﺎﻝ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺗﻼﺵ ﻧﺠﺎﺕ ﮐﯽ ﺟﺎﺋﮯ
ﮐﺴﯽ ﻓﻘﯿﺮ ﺩﻋﺎ ﮔﻮ ﺳﮯ ﺑﺎﺕ ﮐﯽ ﺟﺎﺋﮯ
---
ﻭﮦ ﺟﻮ ﻓﺮﺩ ﻭﻓﺎ ﻣﯿﮟ ﻗﻠﻢ ﺯﺩ ﮨﻮﺋﮯ
ﻧﺎﻡ ﺍﻥ ﻣﯿﮟ ﻧﻤﺎﯾﺎﮞ ﮨﻤﺎﺭﺍ ﺑﮭﯽ ﮨﮯ
---
*ﮐﯿﺎ ﺑﺮﺍ ﻭﻗﺖ ﭘﮍﺍ ﺷﮩﺮ ﻭﻓﺎ ﭘﺮ ﻣﺤﺸﺮؔ*
*ﻣﺠﮫ ﮐﻮ ﮨﯽ ﮈﮬﻮﻧﮉﺗﯽ ﮨﮯ ﻣﯿﺮﯼ ﻭﻓﺎ ﻣﯿﺮﮮ ﺑﻌﺪ*

Post Top Ad

Your Ad Spot