Sada E Waqt

چیف ایڈیٹر۔۔۔۔ڈاکٹر شرف الدین اعظمی۔۔ ایڈیٹر۔۔۔۔۔۔ مولانا سراج ہاشمی۔

Breaking

متفرق

Saturday, November 9, 2019

فیصلے کا احترام مگر مطمٸن نہیں۔۔۔۔۔۔۔زیڈ کے فیضان۔

ہاٸی کورٹ نے جو زمین ہم کو دی تھی سپریم کورٹ نے وہ بھی چھین لی۔
فیصلہ ہاٸی کورٹ سے خراب اور ایک طرفہ ہے۔
زیڈ کے فیضان۔۔
رینیو کا کوٸی مطلب نہیں۔٥ ایکڑ زمین نہیں لینا چاہیے۔

شاہگنج جونپور۔۔اتر پردیش ۔/صداٸے وقت/نماٸندہ۔
==============================
بابری مسجد مسجد مقدمہ کے متعلق سپریم کورٹ کے فیصلے پر اپنا رد عمل ظاہر کرتے ہوٸے معروف ایڈوکیٹ سپریم کورٹ زیڈ کے فیضان نے کہا کہ وہ سپریم کورٹ کا احترام کرتے ہیں۔مگر فیصلے سے مطمٸن نہیں ہیں۔انھوں نے کہا کہ فیصلہ ایک طرفہ ہے ۔ہاٸی کورٹ نے جو زمین کا ٹکڑا مسلمانوں کو دیا تھا سپریم کورٹ نے اس کو بھی ان  سے چھین لیا۔ سیدھے طور پر یہ رام مندر بنانے کے لٸیے دیا گیا فیصلہ ہے ۔مسلمانوں کو ٥ ایکڑ زمین مسجد تعمیر کے لٸیے دینے کی بات پر انھوں نے کہا کہ پانچ کیا پانچ سو ایکڑ زمین بھی اس کا بدل نہیں ہوسکتی۔مسلمانوں کو زمین نہیں لینی چاہٸے۔
 نماٸندہ صداٸے وقت سے بات کرتے ہوٸے انھوں نے کہا کہ شہادتوں اور ثبوتوں کو بالاٸے طاق رکھ کر آرٹیکل 142 کا استعمال کیا گیا ہے ۔حالانکہ یہ پاور سپریم کورٹ کو حاصل ہے مگر جب دستاویزات و شواہد سے رہنماٸی نہیں ملتی تب اس کا استعمال کیا جانا چاہٸے تھا۔
اے ایس آٸی کی رپورٹ کے متعلق انھوں نے کہا کہ اس کو تسلیم کرنے سے ایک غلط نذیر قاٸم ہوٸی ہے اور مستقبل میں اس کے غلط نتاٸج نکلیں گے۔
 انھوں نے کہا کہ اب اس فیصلے کو تسلیم کرلینا چاہٸے او تمام مسلم قاٸدین سے اپیل کی کہ کسی بھی تحریک اور مایوسی کی ضرورت نہیں ہے اس قضیٸے کو اب یہں ختم کر دینا چاہٸے۔۔اور رینیو کی اپیل نہیں  کرنا چاہٸے کیونکہ اس سے صرف روپیہ اور وقت کی بربادی ہے نتیجہ کچھ بھی نہیں نکلے گا۔بلکہ فرقہ وارانہ عصبیت میں اور اضافہ ہوگا۔وقت کا یہی تقاضہ ہے۔
اس موقع پر انھوں نے سبھی لوگوں سے اپیل کی کہ ہر قیمت پر امن وامان بناٸے رکھیں۔ افواہوں سے بچیں۔آپسی بھاٸی چارہ بناٸے رکھیں۔ اس لٸیے کی پہلے ہمارا ملک ہے۔

Post Top Ad

Your Ad Spot