Sada E Waqt

چیف ایڈیٹر۔۔۔۔ڈاکٹر شرف الدین اعظمی۔۔ ایڈیٹر۔۔۔۔۔۔ مولانا سراج ہاشمی۔

Breaking

متفرق

Friday, August 31, 2018

ہندوستان بے روزگاروں کا ملک بن گیا ہے۔

چراسی کی نوکری کے لئے پی ایچ ڈی سند یافتہ درخواست گزار۔
. . . . . . . . . . . . . . . . . . . . . . . . . . . 
چپراسی کے 62 خالی آسامیوں کے لئے 93000 امیدوار جس میں3740 امیدوار ہیں پی ایچ ڈی سند یافتہ۔
اس نوکری کے لئے ابتدائی تنخواہ صرف 20 ہزار فی ماہ۔
. . . . . . . . . . . . . . . . . . . . . . . . . . 
ڈاکٹر شرف الدین اعظمی۔۔ایڈیٹر صدائے وقت۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
لکھنو (اتر پردیش)۔۔ہندوستان بے روز گاروں کا ملک بنتا جا رہا ہے۔بی جے پی حکومت میں بے روز گاری کی شرح میں اضافہ ہواہے۔حالانکہ بی جے پی نے اپنی الیکشن مہم میں ملک کے نوجوانوں سے وعدہ کیا تھا کہ ملک میں ہر سال دو کروڑ نوجوانوں کو نوکریاں دی جائیں گی۔مگر حالات یہ ہیں کہ اگر چپراسی کی بھرتی کے لئے بھی درخواست مانگی جاتی ہے تو بی اے۔ایم اے۔انجینیر اور یہاں تک کی پی ایح ڈی کی سند رکھنے والے نوجوان بھی اس نوکری کو حاصل کرنے کے لئیے درخواست گزار ہوتے ہیں۔
اتر پردیش پولیس میں چیراسی اور سندیش واہک(پیغام رسانی)  کے لئے 62 خالی جگہوں کے لئیے موصول درخواستوں نے بے روزگاری کے حالات کو عیاں کر دیا ہے۔اس نوکری کے لئے بنیادی تعلیم صرف درجہ پانچ یعنی پرائمری تک کی تعلیم کی ضرورت ہے۔
لکھنو میں شائع کئی اخباروں میں اس کے متعلق تفصیلی خبر شائع ہوئی ہے جس کے مطابق ان 62 آسامیوں کے لئیے 93 ہزار لوگوں نے درخواست دی ہے جس میں تقریباً 50 ہزار گریجویٹ،28 ہزار پوسٹ گریجویٹ اور3740 پی ایچ ڈی کی سند رکھنے والے افراد شامل ہیں۔اس کے علاوہ بی ٹیک۔ایم بی اے کرنے والے بھی شامل ہیں۔ان 93 ہزار امیدواروں میں صرف 7400 ایسے امیدوار ہیں جنک کی تعلیمی لیاقت پرائمری سے لیکر انٹر میڈیٹ تک ہے۔ذرائع کے مطابق یہ آسامیاں تقریباً 12 سال سے خالی پڑی ہیں۔

Post Top Ad

Your Ad Spot