Sada E Waqt

چیف ایڈیٹر۔۔۔۔ڈاکٹر شرف الدین اعظمی۔۔ ایڈیٹر۔۔۔۔۔۔ مولانا سراج ہاشمی۔

Breaking

متفرق

Saturday, March 30, 2019

صہبا لکھنوی کے یوم وفات 30 مارچ کے موقع پر خراج عقیدت۔

تاریخ وفات۔۔- ٣٠ / مارچ / ٢٠٠٢/ ۔۔۔۔۔۔۔۔صدائے وقت۔
*ماہنامہ "افکار" کے مدیر، فن اور شخصیت کے بیشتر کتابوں کے خالق اور معروف شاعر” صہباؔ لکھنؤی “ ...*
. . . . . . . . . . . . . . . . . . . . . . . . . . . 
*صہباؔ لکھنؤی* کا اصل نام *سیّد شرافت علی* اور ان کا آبائی وطن *لکھنؤ* تھا۔ تاہم وہ *٢٥ دسمبر ١٩١٩ء* کو ریاست *بھوپال* میں پیدا ہوئے تھے۔
انہوں نے بھوپال، لکھنو اور بمبئی سے تعلیمی مدارج طے کئے اور 1945ءمیں بھوپال سے ماہنامہ *افکار* کا اجرا کیا ۔
تقسیم ملک کے بعد وہ کراچی میں سکونت پذیر ہوئے اور یہاں 1951ءمیں افکار کا دوبارہ اجرا کیا۔ افکار کے ساتھ ان کی یہ وابستگی ان کی وفات تک جاری رہی اور یہ رسالہ مسلسل 57 برس تک بغیر کسی تعطل کے شائع ہوتا رہا۔
صہبا لکھنؤی کے شعری مجموعے *ماہ پارے اور زیر آسماں* کے نام اشاعت پذیر ہوئے جبکہ ان کی نثری کتب میں *میرے خوابوں کی سرزمین* (سفرنامہ )، *اقبال اور بھوپال، مجاز ایک آہنگ، ارمغان مجنوں، رئیس امروہوی فن و شخصیت اور منٹو* ایک کتاب شامل ہیں۔جناب *صہبا لکھنوی* *٣٠ مارچ ٢٠٠٢ء* کو وفات پاگئے۔
. . . . . . . . . . . . . . . . . . . . . . . . . . . 
*معروف شاعر صہباؔ لکھنؤی کےمنتخب کلام ...*
کتنے دیپ بجھتے ہیں کتنے دیپ جلتے ہیں
عزم زندگی لے کر پھر بھی لوگ چلتے ہیں
کارواں کے چلنے سے کارواں کے رکنے تک
منزلیں نہیں یارو راستے بدلتے ہیں
*موج موج طوفاں ہے موج موج ساحل ہے*
*کتنے ڈوب جاتے ہیں کتنے بچ نکلتے ہیں*
مہر‌‌ و ماہ و انجم بھی اب اسیر گیتی ہیں
فکر نو کی عظمت سے روز و شب بدلتے ہیں
بحر و بر کے سینے بھی زیست کے سفینے بھی
تیرگی نگلتے ہیں روشنی اگلتے ہیں
اک بہار آتی ہے اک بہار جاتی ہے
غنچے مسکراتے ہیں پھول ہاتھ ملتے ہیں

Post Top Ad

Your Ad Spot