Sada E Waqt

چیف ایڈیٹر۔۔۔۔ڈاکٹر شرف الدین اعظمی۔۔ ایڈیٹر۔۔۔۔۔۔ مولانا سراج ہاشمی۔

Breaking

متفرق

Monday, April 15, 2019

کلاسیکل لہجے کے معروف شاعر" عرفان صدیقی کے یوم وفات کے ضمن میں بطور خراج عقیدت۔

تاریخ وفات۔- ١٥ / اپریل / ٢٠٠٤*/ صدائے وقت۔
. . . . . . . . . . . . . .  . . . . . . . . . . . 
*اہم ترین جدید شاعروں میں شامل، اپنے نوکلاسیکی لہجے کے لیے معروف شاعر” عرفانؔ صدیقی صاحب “ ...*
. . . . . . . . . . . . . . . . . . . . . . . . . . . 
نام *عرفا ن صدیقی*، تخلص *عرفانؔ* تھا۔ *٨ جنوری ۱۹۳۹ء* میں *بدایوں* میں پیدا ہوئے۔ بریلی کالج، آگرہ یونیورسٹی سے تعلیم مکمل کی۔۱۹۶۲ء میں وزارت اطلاعات ونشریات کی مرکزی اطلاعاتی سروس سے وابستہ ہوگئے۔ ملازمت کے سلسلے میں دلی، لکھنؤ وغیر ہ قیام رہا۔یہ *نیازؔ بدایونی* کے چھوٹے بھائی تھے۔
*عرفانؔ صدیقی*، *١٥ اپریل ٢٠٠٤ء* کو انتقال کر گئے ۔
ا ن کی تصانیف کے نام یہ ہیں:
*’کینوس‘، ’عشقِ نامہ‘، ’شبِ درمیاں‘، ’سات سماوات‘* (مجموعہ شاعری)۔ اس کے علاوہ دو تین کتابیں ابلاغ وترسیل وغیرہ سے متعلق موضوعات پر شائع ہوئیں۔
*معروف شاعر عرفانؔ صدیقی کے منتخب اشعار...*
. . . . . . . . . . . . . . . . . . . . . 

عرفان صدیقی۔
. . . . . . 
اداس خشک لبوں پر لرز رہا ہوگا
وہ ایک بوسہ جو اب تک مری جبیں پہ نہیں
---
اس کو رہتا ہے ہمیشہ مری وحشت کا خیال
میرے گم گشتہ غزالوں کا پتا چاہتی ہے
---
اس کو منظور نہیں ہے مری گمراہی بھی
اور مجھے راہ پہ لانا بھی نہیں چاہتا ہے
---
*اٹھو یہ منظر شبِ تاب دیکھنے کے لیے*
*کہ نیند شرط نہیں خواب دیکھنے کے لیے*
---
اڑے تو پھر نہ ملیں گے رفاقتوں کے پرند
شکایتوں سے بھری ٹہنیاں نہ چھو لینا
---
*ایک میں ہوں کہ اس آشوبِ نوا میں چپ ہوں*
*ورنہ دنیا مرے زخموں کی زباں بولتی ہے*
---
اے لہو میں تجھے مقتل سے کہاں لے جاؤں
اپنے منظر ہی میں ہر رنگ بھلا لگتا ہے
---
*بدن میں جیسے لہو تازیانہ ہو گیا ہے*
*اسے گلے سے لگائے زمانہ ہو گیا ہے*
---
بدن کے دونوں کناروں سے جل رہا ہوں میں
کہ چھو رہا ہوں تجھے اور پگھل رہا ہوں میں
---
ترے سوا کوئی کیسے دکھائی دے مجھ کو
کہ میری آنکھوں پہ ہے دست غائبانہ ترا
---
جان ہم کار محبت کا صلہ چاہتے تھے
دل سادہ کوئی مزدور ہے اجرت کیسی
---
حریف تیغِ ستم گر تو کر دیا ہے تجھے
اب اور مجھ سے تو کیا چاہتا ہے سر میرے
---
رات کو جیت تو پاتا نہیں لیکن یہ چراغ
کم سے کم رات کا نقصان بہت کرتا ہے
---
*روح کو روح سے ملنے نہیں دیتا ہے بدن*
*خیر یہ بیچ کی دیوار گرا چاہتی ہے*
---
شعلۂ عشق بجھانا بھی نہیں چاہتا ہے
وہ مگر خود کو جلانا بھی نہیں چاہتا ہے
---
عشق کیا کارِ ہوس بھی کوئی آسان نہیں
خیر سے پہلے اسی کام کے قابل ہو جاؤ
---
*اس تکلف سے نہ پوشاک بدن گیر میں آ*
*خواب کی طرح کبھی خواب کی تعبیر میں آ*
---
وہ بھی طرفہ سخن آرا ہیں، چلو یوں ہی سہی
اتنی سی بات پہ یاروں کی دل آزاری کیا
---
*مروتوں پہ وفا کا گماں بھی رکھتا تھا*
*وہ آدمی تھا غلط فہمیاں بھی رکھتا تھا*
---
سرِ تسلیم ہے خم اذنِ عقوبت کے بغیر
ہم تو سرکار کے مداح ہیں خلعت کے بغیر
---
*حق فتح یاب میرے خدا کیوں نہیں ہوا*
*تو نے کہا تھا تیرا کہا کیوں نہیں ہوا*

Post Top Ad

Your Ad Spot