Sada E Waqt

چیف ایڈیٹر۔۔۔۔ڈاکٹر شرف الدین اعظمی۔۔ ایڈیٹر۔۔۔۔۔۔ مولانا سراج ہاشمی۔

Breaking

متفرق

Friday, April 19, 2019

شب براُت عبادت و مغفرت کی رات یے۔

/ از/  محمد عظیم فیض آبادی دارالعلوم النصرہ دیوبند/ عاصم طاہر اعظمی
       .  .  .  .  .  .  .  .  .  .  .  .  .  .  .  .  .  .  .  

بعض اوقات ولمحات ایسے ہوتے ہیں کہ جس میں الطاف وعنایاتِ ربانی ہوتے ہیں اور رب ذوالجلال کے بے پایہ اکرام وانعام ہوتے ہیں اور مغفرت کے سندات وتمغات دیئے جاتے ہیں شبِ برات انہیں مبارک ومسعود اوقات میں سے ایک ہے جس میں ربِ کائنات کی رحمتوں وبرکتوں کانزول وظہور ہوتاہےاور رحمتِ خداوندی اس رات میں سایہ فگن رہتی ہے اس لئے اس رات میں رضاء الہی اور پروانہ خشنودی کے حصول کے لئے زیادہ سے زیادہ عبادت وریاضیت کرنی چاہئے اور اپنے نامہ اعمال کو گناہوں سے دھونے کے لئے کثرت سے توبہ واستغفار کرنا چاہئےاس رات میں بے حد وحساب انعامات خداوندی اور اس کے اکرام وانعام مسلادھار بارس کی طرح برستی ہےلہذا رحمتوں اور برکتوں کو اپنے دامن میں سمیٹنے کے لئے پوری جانثاری کے ساتھ ذکر الٰہی اور یاد خدا میں گذارنا چاہئے اس رات میں نیکیوں کا بھاؤ بڑھ جاتاہے اس کی قیمتوں میں اضافہ ہوجاتاہے اور عبادتِ قلیلہ سے بھی بے انتہااجر وثواب کا مستحق ہوتاہے بیہقی کے اندر حضرت ابوبکر رضی اللہ عنہ کی روایت ہے کہ سرکار دوعالم صلیٰ علیہ وسلم نے فرمایا : ینزل اللہ تعالیٰ الی السماء الدنیا لیلةالنصف من شعبان فیغفر لکل مسیء الا رجل مشرک اوفی قلبہ سحناء
 شعبان کی پندرہویں شب میں اللہ تبارک وتعالی آسمان دنیا پر جلوہ افروز ہوتےہیں مشرک اور کینہ ور کے علاوہ تمام گہنگار کو بخش دیتے ہیں
 اور "فقوموالیلہاوصوموانہارہا " والی روایت کے اندر بھی ہے کہ اس رات میں باری تعالیٰ فرماتے ہیں کوئی مجھ سے مغفرت چاہنے والا ہے کہ میں اس کو بخش دوں؟  کوئی رزق مانگنے والاہے جو مجھ سے رزق طلب کرے اور میں اسے عنایت کروں کوئی مرض سے شفا کا طالب ہے کہ میں اس کو شفادوں یہ پکار صبح صادق تک جاری رہتی ہے ( ماثبت بالسنہ 327)
   حکیم بن کیسان فرماتےہیں کہ شعبان کی پندرہویں رات میں اللہ تعالیٰ اپنی مخلوق کی طرف جھانکتے ہیں پس جس کو رات میں اللہ تعالیٰ گناہوں سے پاک فرمادیتاہے وہ آئندہ سال بھر تک صاف رہتاہے
 ( غنیہ371)
 بیہقی کے حوالے سے ایک روایت  ہے کہ طویل سجدے کی وجہ سے حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا کو آپ کی وفات کا اندیشہ ہونے لگاتھا تو سرکار دوجہاں صلیٰ علیہ وسلم کے قدمِ مبارک کاہاتھ لگاکر اندازہ کیا قدم کی حرکت کی وجہ سے مجھے اطمینان ہوا میں نے سنا کہ آپ سجدے میں یہ دعاکررہے ہیں:
  اعوذ بعفوک من عقابک واعوذ برضاک من سخطک واعوذ بک منک جلّ وجھک لاأحصی ثناءً علیک أنت کماأثنیت علی نفسک
اے اللہ میں تیرے عذاب سے تیرے عفو کی پناہ چاہتاہوں اور تیرے غضب سے تیری رضامندی کی پناہ چاہتاہوں اور میں پناہ چاہتاہوں تیری ذات بزرگ ہے میں تیری تعریف بیان نہیں کرسکتاتو تو ایسا ہی ہے جیسا کی تو نے اپنی تعریف کی

اس رات کی فضیلت بے بنیاد نہیں
 ان احادیث وروایات کی وجہ سے اس رات کی بہت خصوصیتیں ہیں اگرچہ اس سلسلے کی احادیث بہت اعلیٰ درجے کی نہیں ہیں لیکن یہ کہنا کہ اس رات کی کوئی فضیلت حدیث سے ثابت نہیں یہ بالکل غلط ہے
  حضرت مولانا مفتی تقی عثمانی صاحب دامت برکاتہم نے فرمایا ہے کہ
"حقیقت یہ کہ دس صحابہ کرام  سے احادیث مروی ہیں جس میں نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے اس رات کی فضیلت بیان فرمائی ہے ان میں سے بعض احادیث سند کے اعتبار سے بلاشبہ کچھ کمزور ہیں اور ان احادیث کے کمزورہونے کی وجہ سےبعض علماء نے کہہ دیا کہ اس رات کی فضیلت بے اصل ہے، لیکن حضرات محدثین وفقہاء کا یہ فیصلہ ہے کہ اگر روایت سند کے اعتبار سے کمزور ہو لیکن اس کی تایید بہت سی احادیث سے ہوجائے تو اس کی کمزوری دور ہوجاتی ہے اور دس صحابہ کرام سے اس کی فضیلت میں روایات موجود ہیں، لہذا جس رات کی فضیلت میں دس صحابہ کرام سے روایات مروی ہوں اس کو بے بنیاد وبے اصل کہنا بالکل غلط ہے "
 شبِ برات اور خیر القرون
 امت مسلمہ کے خیر القرون یعنی صحابہ کرام رضوان اللہ تعالیٰ اجمعین ، تابعین عظام اور تبع تابعین کے دور میں بھی اس رات کی فضیلت سے فائدہ اٹھانے کا اہتمام کیا جاتا رہا ،لوگ اس رات کے اندر عبادت کاخصوصی اہتمام کرتے رہے لہذا اس کو بدعت کہنا، بے بنیاد وبے اصل قرار دینا درست نہیں یہ راہ اعتدال نہیں درست اور صحیح بات یہ ہے کہ یہ فضیلت کی رات ہے اور اس میں جاگنا عبادت کرنا اور ذکر واشغال میں مصروف ہونا
 باعثِ اجر وثواب ہے اور اس کی خاص اہمیت ہے
    اس رات میں کوئی خاص عبادت مقرر نہیں :
   البتہ یہ بات درست ہے کہ اس رات میں کوئی خاص عبادت یاکوئی مخصوص طریقہ مقرر نہیں کہ فلاں طریقے سے عبادت کی جائے جیسا کہ بعض لوگوں نے اپنی طرف سے یہ طریقہ گھڑ لیا کہ شبِ برأت میں اس خاص طریقے سے نماز پڑھی جاتی ہے مثلاً پہلی رکعت میں فلاں سورت، دوسری رکعت میں فلاں سورت اتنی مرتبہ پڑھی جائے اس طرح کا کو