Sada E Waqt

چیف ایڈیٹر۔۔۔۔ڈاکٹر شرف الدین اعظمی۔۔ ایڈیٹر۔۔۔۔۔۔ مولانا سراج ہاشمی۔

Breaking

متفرق

Tuesday, May 14, 2019

پھر جبیں خاک حرم سے آشنا ہوجائے گی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔سرفراز بزمی کی نظم۔

راجستہان کے الور  میوات علاقے میں حالیہ دنوں میں ہوئے ہجومی تشدد کا بھی اس نظم  میں ذکر ہے
مجھے امید ہے کلام پر توجہ دیجائے گی
سرفراز بزمی
-----؛-------------------------

-------؛--
پھر جبیں خاک حرم سے آشنا ہوجائے گی
-------؛----------------------------؛----
از سرفراز بزمی / صدائے وقت۔
عالم   مشرق   میں   پھر    ہنگامہ    جمہور   ہے
گوش   بر  آواز   اک  اک   قیصر  و   فغفور   ہے
ظلمتیں   ہیں  روشنی  معدوم   ہے   مستور  ہے
اے   مسافر  !  منزل  مقصود   لیکن    دور   ہے
پھر   وہی   قیصر   ہے  باقی  پھر  وہی پرویز ہے
خاک  عالم   پھر   حرم   کے  خون   سے لبریز ہے
خون  میں  لتھڑی  ہوئ  ہے  سرزمیں"زیتون" کی
لال  ہیں  اپنے  لہو  سے  سرحدیں  "رنگون  "کی
کیوں  ہوئ  ہے  اتنی  ارزانی   ہمارے  خون  کی
اپنی  عظمت  کس  نے  اپنے ہاتھ سے مدفون کی
جبر   کی   تصویر  کوئ   نیل  کا  " فرعون"   ہے
بے  عصا " مرسی"  کے  لب پر "انتم الاعلون" ہے
ادھ  جلی  لاشیں ، لہو کی بو ، کٹے معصوم ہاتھ
وہ  دھواں  بارود  کا  اڑتی   ہوئ   موت  و حیات
ماں ، بہن ،بیٹی ، بہو بچوں کی لاشیں ساتھ ساتھ
رحم  کر  ،  ہاں  رحم  !   اے  فرمانروائے  کائنات
آنکھ  میں  جراءت  نہیں  ان  منظروں کے  دید کی
شام   غم  اب   تو  خبر  دے  ہم کو صبح عید  کی
آسمان  پیر  کی   یہ   فتنہ   سامانی  بھی دیکھ
موج دجلہ ! چل ذرا  گنگا کی طغیانی بھی  دیکھ
خون مسلم  کی  سر بازار   ارزانی    بھی دیکھ
پنجئہ باطل میں پھر بے بس مسلمانی  بھی دیکھ
کانپتی  تھی  سلطنت  جن   کے  خرام   ناز سے
آہ  ! وہ  ڈرتے  ہیں  اب  ناقوس  کی  آواز سے
دعوت   و   تبلیغ   کی   وہ   سر   زمین  باوقار
کیوں   بنا   میوات   تہزیب   حجازی   کا    مزار
رورہے   ہیں  دیکھ  وہ " اکبر" کے بچے زار زار
دیکھ   !  لے  آیا   کہاں  ہم  کو    ہمارا   انتشار
وہ صنم   زادے   کہاں ، یثرب کے دیوانے  کہاں
"بھنگ کے کلھڑ کہاں ، صہبا  کے  پیمانے کہاں"
اے "جنید " و "اکبر" و "اخلاق" و" پہلو "کے لہو
یاد   رکھ   اللہ   کا   فرمان   ہے     "لا تقنطوا "
آہ  !  رکھتی ہے تجھے بےچین کس کی جستجو
چاک  داماں  ! تیرے  دامن  میں  ہے سامان رفو
خرمن  باطل  کو  تو  بجلی  تھا  تجھ کو یاد ہے ؟
تیری   عظمت  کی نشانی   یہ  "جہان آباد"  ہے     (دلی)
--؛-----------------------------؛--
رات  رخصت   ہو  چلی  رخصت ہوا  وقت سکوت
ہیں   شکستہ   کفر  کے  سب   تارہائے عنکبوت
مہرباں   ہونے   کو   ہے   دربار  " حي لايموت "
جلوہء    حق  کے   نظر  آنے  لگے   بین    ثبوت
پھر اٹھی   ہے  ایشیا  کے  دل سے  آہ  بے صدا
ہو   رہی   ہے آج   پھر   شاخ   کہن   برگ   آشنا
پھر   ہری  ہے   آج   اپنے   خون  سے شاخ خلیل
پھر   سفر   پر   ہم   کو اکسانے لگی بانگ رحیل
مرحبوں پر   پھر   کسی   کا  رعب چھا جانے لگا
باب   خیبر   پھر   کسی   حیدر  کو  اکسانے لگا
پھر   تتاری   خانقاہوں  " میں   بپا ہے     انقلاب
پھر   ہوا   ہے   بامِ  مغرب  سے طلوع   ماہتاب
پھر   شکوہ    ترکمانی   کو   حیا   آنے    لگی
پھر   کلاہ   سرخ   اپنا   رنگ    دکھلانے    لگی
اے سرودِ   بربط عالم  !  ذرا   لب   کھول  دے
گرمئ  ذوق  جنوں  سے نعرۂ  "لا حول"   دے
پھر خزاں   دیدہ گلوں   پر آئےگا   جوشِ   بہار
شام غم   اپنی   سحر سے   آشنا  ہوجائے گی
وادئ ہستی  میں  گونجے گی  صدائے" لا الٰہ "
نغمئہ   توحید   غنچوں   کی  نوا  ہوجائے گی
پھر صنم خانوں سے نکلینگے حرم کے پاسباں
"پھر  جبیں خاک حرم سے   آشنا ہوجائے  گی "
ہے ابھی وہ   صبح  بزمی  چشم عالم سے نہاں
منتظر ہیں جس کے شدت سے  زمین و آسماں
اے  امیر   کارواں !   بیدار  کن  بیدار   باش
از فریب  ِ بت  فروشان  حرم   ہوشیار    باش
سرفراز بزمی
سوائ مادھوپور
راجستھان( بھارت )
9772296970

Post Top Ad

Your Ad Spot