Sada E Waqt

چیف ایڈیٹر۔۔۔۔ڈاکٹر شرف الدین اعظمی۔۔ ایڈیٹر۔۔۔۔۔۔ مولانا سراج ہاشمی۔

Breaking

متفرق

Tuesday, July 9, 2019

خوش ہوں وہی پیغام قضا میرے لٸیے ہے۔۔

مولانا محمد علی جوہر کی ایک نظم
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔صداٸے وقت۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔تم یوں ہی سمجھنا کہ فنا میرے لیے ہے
پر غیب سے سامانِ بقا میرے لیے ہے

پیغام ملا تھا جو حُسین ابن علی کو
خوش ہوں وہی پیغامِ قضا میرے لیے ہے

یہ حُورِ بہشتی کی طرف سے ہے بلاوا
لبّیک کہ مقتل کا صلہ میرے لیے ہے

کیوں جان نہ دوں غم میں ترے جب کہ ابھی سے
ماتم یہ زمانے میں بپا میرے لیے ہے

میں کھو کے تری راہ میں سب دولتِ دنیا
سمجھا کہ کچھ اس سے سِوا میرے لیے ہے

توحید تو یہ ہے کہ خدا حشر میں کہہ دے
یہ بندہ زمانے سے خفا میرے لیے ہے

سُرخی میں نہیں دستِ حنا بستہ بھی کچھ کم
پر شوخئ خونِ شُہدا میرے لیے ہے

راحل ہوں مسلمان بصد نعرۂ تکبیر
یہ قافلہ، یہ بانگِ درا میرے لیے ہے

انعام کا عقبیٰ کے تو کیا پوچھنا لیکن
دُنیا میں بھی ایماں کا صِلہ میرے لیے ہے

کیوں ایسے نبی پر نہ فدا ہوں کہ جو فرمائے
اچھے تو سبھی کے ہیں، برا میرے لیے ہے

اے شافعِ محشر جو کرے تو نہ شفاعت
پھر کون وہاں تیرے سوا میرے لیے ہے

اللہ کے رستے ہی میں موت آئے مسیحا
اکسیر یہی ایک دوا میرے لیے ہے

اے چارہ گرو! چارہ گری کی نہیں حاجت
یہ درد ہی داروئے شِفا میرے لیے ہے

کیا ڈر ہے جو ہو ساری خدائی بھی مخالف
کافی ہے اگر ایک خدا میرے لیے ہے

جو صُحبتِ اغیار میں اس درجہ ہو بے باک
اس شوخ کی سب شرم و حیا میرے لیے ہے

ہے ظلم ترا عام بہت پھر بھی ستم گر
مخصوص یہ اندازِ جفا میرے لیے ہے

ہیں یوں تو فدا ابرِ سیہ پر سبھی مے کش
پر آج کی گھنگھور گھٹا میرے لیے ہے​


ــــــــــــــــــ مولانا محمد علی جوہر ـــــــــــــــــ

Post Top Ad

Your Ad Spot