Sada E Waqt

چیف ایڈیٹر۔۔۔۔ڈاکٹر شرف الدین اعظمی۔۔ ایڈیٹر۔۔۔۔۔۔ مولانا سراج ہاشمی۔

Breaking

متفرق

Monday, September 9, 2019

یوم عاشورہ کے ضمن میں ایک تازہ ”منقبت“

تازہ منقبت شریف/سید محمد نور الحسن نور۔
=========================
رشتہ گلوں کا ہوتا ہے جیسے چمن کے ساتھ
رشتہ ہے وہ ہمارا حسین و حسن کے ساتھ

دل میں ہے جس کے الفت شبیر کا قیام
روز جزا رہے گا وہی پنجتن کے ساتھ

شبیر! ہوگا حال عجب اہل حشر کا
آئیں گی جب بتول ترے پیرہن کے ساتھ

لگتا ہے جا رہے علی لے کے ذوالفقار
اکبر گیے  ہیں رن میں بڑے بانکپن کے ساتھ

جس میں یزیدیت کے بھی حامی شریک ہوں
کیوں رکھوں ربط ایسی کسی انجمن کے ساتھ

میرا حسین تیرگی و روشنی کے بیچ
دیوار بن گیا ہے بہتر بدن کے ساتھ

اصغر کو لے کے خیمے سے نکلے تھے جب حسین
لگتا تھا چاند نکلا ہے ننھی کرن کے ساتھ

شبیر کیسے بھولیں مدینے کے روز و شب
آئے لب فرات ہیں یاد وطن کے ساتھ

اے شمر! روک خنجر ظلم و ستم یہ سوچ
ایسا بھی کوئی کرتا ہے تشنہ دہن کے ساتھ

تھرا گیا ستم کا بدن سانس تھم گئی
عابد جو قصر شام میں آئے بہن کے ساتھ

میرے نبی کے پھول کہاں اور یہ کہاں
کیسے کروں مقابلہ سرو و سمن کے ساتھ

دیتی ہے حوصلوں کی بھی سوغات ہاں مگر
یاد حسین آتی ہے غم کی چبھن کے ساتھ

اے نور اس لیے ہے مری شاعری کی دھوم
شبیر کا کرم بھی ہے میرے سخن کے ساتھ
             ......     ..........       ........
سید محمد نورالحسن نور نوابی عزیزی

Post Top Ad

Your Ad Spot