Sada E Waqt

چیف ایڈیٹر۔۔۔۔ڈاکٹر شرف الدین اعظمی۔۔ ایڈیٹر۔۔۔۔۔۔ مولانا سراج ہاشمی۔

Breaking

متفرق

Sunday, September 22, 2019

ایک ”غزل“۔

غزل/از سرفراز بزمی/صداٸے وقت۔
=============================
نثارتم پہ مری زیست کیا زمانہ کیا
بتاؤ   اور  بناؤ  گے  اب  بہانہ   کیا
سکون,چین ,حیا ،جسم،جان،روح، ضمیر
اب اور ہم سے بھلا چھینتا زمانہ کیا
یہاں تو دل ہیں اندھیرے گھٹن ضمیر میں ہے
"دریچے کھولنا کیسا دیۓ جلانا کیا"
غموں کا بار مرے سر پہ حادثوں کا ہجوم
فقیر چھوڑ گیا کوئ آستانہ کیا
دیۓ لہو سے جلایئنگے روشنی کے نقیب
حیات!رات کی چوکھٹ پہ گڑگڑانا کیا
دعا حصار بناۓ ہوۓ رہی ماں کی
وگرنہ برق سے بچتا غریب خانہ کیا
لہو سے ہم نے چمن کو حیات بخشی ہے
ہمارے بعد بھی موسم رہا سہانا کیا
سناہے بزمئ نادان سچ کا حامی ہے
قفس میں اس کا بھی لکھاہے آب و دانہ کیا.

سرفراز بزمی
سوای مادھو پور
راجستھان

Post Top Ad

Your Ad Spot