Sada E Waqt

چیف ایڈیٹر۔۔۔۔ڈاکٹر شرف الدین اعظمی۔۔ ایڈیٹر۔۔۔۔۔۔ مولانا سراج ہاشمی۔

Breaking

متفرق

Monday, April 6, 2020

ملک بھرمیں کوروناکاقہر جاری :24گھنٹے، 693 نئے معاملے،ہلاکتیں بھی 100 کے پار،حکومتیں فکرمند

وزارت صحت کے ترجمان  نے بتایا کہ جتنی اموات ہوئی ہیں ان میں 86 فیصد مریض 'كوموربی ڈیٹی "کی حالت میں تھے یعنی ان مریضوں میں ذیابیطس، طویل عرصہ سے گردوں کی بیماریاں، دل کی بیماریاں شامل تھیں۔ ان میں 63 فیصد اموات بزرگوں کی ہوئی ہیں اور 37 فیصد اموات 60 سے کم عمر کی ہیں۔
نٸی دہلی /صداٸے وقت /ذراٸع / 6 اپریل 2020.
==============================
ملک کے مختلف ریاستوں میں اتوار سے پیر تک کورونا وائرس (كووڈ -19) انفیکشن کے 693 نئے معاملے سامنے آئے ہیں جس سے کل متاثرین کی تعداد بڑھ کر 4067 ہو گئی اور اس خطرناک بیماری سے مرنے والوں کی تعداد 100 سے زیادہ ہوگئی ہے۔کل سے آج تک متاثرین کے جو 693 نئے کیسز سامنے آئے ہیں ان میں 445 تبلیغی جماعت سے جڑے اور ان کے رابطے میں آئے لوگوں سے وابستہ ہیں۔اتوار سے پیر تک کورونا وائرس کے پھیلنے سے مرنے والوں کی تعداد بڑھ کر 109 ہو گئی ہے جن میں کل 30 اموات بھی شامل ہیں۔
اس کے علاوہ 291 لوگ کورونا وائرس سے ٹھیک ہو گئے ہیں اور انہیں اسپتال سے چھٹی دے دی گئی ہے۔وزارت صحت کے ترجمان لو اگروال نے آج یہاں پریس کانفرنس میں بتایا کہ اگر صنفی بنیاد پرانفیکشن کی فیصد کی بات کریں تو 76 فیصد معاملے مردوں میں اور 24 فیصد معاملے خواتین میں پائے گئے ہیں۔ عمر کے مطابق 47 فیصد انفیکشن کے معاملے 45 سال سے کم عمر، 34 فیصد 40 سے 60 سال اور 19 فیصد معاملے 60 سال سے زیادہ عمر کے لوگوں میں پائے گئے ہیں۔ ڈیٹا کے مطابق اس مہلک کورونا وائرس نے 109 لوگوں کی اموت میں 73 فیصد مردوں اور 27 فیصد خواتین کو اپنا شکار بنایا ہے۔
لو اگروال نے بتایا کہ جتنی اموات ہوئی ہیں ان میں 86 فیصد مریض 'كوموربی ڈیٹی "کی حالت میں تھے یعنی ان مریضوں میں ذیابیطس، طویل عرصہ سے گردوں کی بیماریاں، دل کی بیماریاں شامل تھیں۔ ان میں 63 فیصد اموات بزرگوں کی ہوئی ہیں اور 37 فیصد اموات 60 سے کم عمر کی ہیں۔ انہوں نے بتایا کہ جن نوجوانوں میں اس طرح کی بیماریاں تھیں وہ بھی اس کی زد میں آئے ہیں اور اسے دیکھتے ہوئے نوجوانوں کو سماجی فاصلے اور لاک ڈاؤن کے ضابطوں کا مکمل طور پر عمل کرنا چاہئے۔ ایمس کے ڈائریکٹر رنديپ گلیريا کے کورونا انفیکشن کے کمیونٹی سطح پر پہنچنے سے متعلق جواب دیتے ہوئے مسٹر اگروال نے کہا، "انہوں نے جو بات کہی ہے وہ ہمارے ان بیانات سے مختلف نہیں ہے اور ہم بھی یہی کہتے آ رہے ہیں کہ اگر لمیٹڈ معاملے آتے ہیں تو ہم "کلسٹر كٹینمینٹ" یعنی گروپ علاج کی حکمت عملی اپناتے ہیں اور اگر مزید کیس سامنے آتے ہیں تو ہم اس بارے میں 'ایڈوانسڈ' پالیسی کو اپناتے ہیں۔
انہوں نے کہا کہ گلیريا نے جو کہا ہے وہ اسی بات سے منسلک ہے اور ان کا بیان 'لوكیلجڈ ٹرانسمیشن' کے سلسلے میں ہے کہ کسی خاص علاقے میں معاملے مزید پائے جا رہے ہیں اور آج ہم اسٹیج دو سے تین کے درمیان ہیں اور اس کا مطلب ہے کہ ہمیں اسٹیج تین میں پہنچنے سے پہلے احتیاط برتنی ہے۔ اتنے بڑے ملک میں اگر کسی بھی علاقے میں مزید کیس پائے جاتے ہیں تو اس سے نمٹنے کی ہماری واضح حکمت عملی ہے۔

Post Top Ad

Your Ad Spot