Sada E Waqt

چیف ایڈیٹر۔۔۔۔ڈاکٹر شرف الدین اعظمی۔۔ ایڈیٹر۔۔۔۔۔۔ مولانا سراج ہاشمی۔

Breaking

متفرق

Wednesday, April 22, 2020

کرونا کے علاج میں ملیریا کی دوائیں بے اثر اور اموات میں اضافے کا باعث ہیں:واٸس ‏آف ‏امریکہ ‏کی ‏ایک ‏رپورٹ۔

صداٸے وقت /ذراٸع /٢٢ اپریل ٢٠٢٠۔
==============================
امریکی حکومت کی معاونت سے ہونے والے ایک مطالعے میں انکشاف ہوا ہے کہ کرونا وائرس کے علاج کے لیے انسدادِ ملیریا کی ادویات کا استعمال بے اثر بلکہ اموات میں اضافے کا بھی باعث بن رہا ہے۔

گو کہ اس معالعے کا دائرہ کار محدود ہے لیکن اس میں کہا گیا ہے کہ جن مریضوں کو ملیریا کی ادویات دی گئیں اُن کی شرح اموات علاج کے دیگر طریقوں کے مقابلے میں زیادہ تھی۔

خیال رہے کہ امریکہ کے صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے بھی ملیریا کی ادویات سے علاج کو سود مند قرار دیا تھا۔ جس کے بعد دنیا بھر میں 'ہائیڈروکسی کلوروکوئن' نامی دوا کے استعمال میں تیزی سے اضافہ ہوا۔


مذکورہ جائزے میں امریکہ میں کرونا وائرس کا شکار ہونے والے 368 سابق فوجی اہلکاروں کے میڈیکل ریکارڈ کو بنیاد بنایا گیا ہے جو 11 اپریل تک اسپتالوں میں زیرِ علاج رہ کر صحت یاب ہوئے یا ہلاک ہوئے۔

مطالعے میں انکشاف ہوا کہ جن مریضوں کو صرف 'ہائیڈروکسی کلوروکوئن' دی گئی اُن کی اموات کی شرح 28 فی صد تھی۔ جن مریضوں کو یہ دوا 'ایزتھرومائسیین' کے ساتھ دی گئی اُن کی اموات کی شرح 22 فی صد تھی۔
رٹ میں کہا گیا ہے کہ جن مریضوں کو ان ادویات کے بجائے معمول کی طبی امداد دی گئی اُن کی اموات کی شرح صرف 11 فی صد تھی۔

تحقیق کاروں کا کہنا ہے کہ عام طور پر یہ ادویات زیادہ بیمار مریضوں کو دی گئیں۔ لیکن دیگر مریضوں کو بھی یہ دوا دینے کا کوئی فائدہ نہیں ہوا بلکہ اس سے اموات میں اضافہ ہوا ہے۔

البتہ اس مطالعے پر سوالات بھی اُٹھائے جا رہے ہیں کہ اس میں سروے کے مروجہ اُصولوں کو ملحوظِ خاطر نہیں رکھا گیا۔ مریضوں کی درجہ بندی نہیں کی گئی۔

تاحال اس رپورٹ کا عام نہیں کیا گیا کیوں کہ تحقیق کے لیے 65 سال سے زائد عمر کے زیادہ تر سیاہ فام افراد کا انتخاب کیا گیا تھا۔ جن میں سے بیشتر دل اور ذیابیطس کے مریض بھی تھے۔


لہذٰا ماہرین کا کہنا ہے کہ ان افراد کی اموات کی وجہ نظام تنفس میں خرابی کے علاوہ بھی ہو سکتی ہے۔

'ہائیڈروکسی کلوروکوئن' کئی دہائیوں سے ملیریا کے لیے استعمال کی جا رہی ہے۔ البتہ کرونا وائرس کے بعد دنیا کے مختلف ملکوں میں اس دوا کا استعمال تاحال جاری ہے۔

اس سے پہلے ہونے والی تحقیق میں طبی ماہرین کا کہنا تھا کہ یہ دوا وائرس کو انسانی خلیوں میں پھیلنے سے روکنے میں مددگار ثابت ہوتی ہے۔ البتہ اسے کرونا وائرس کا علاج قرار نہیں دیا گیا تھا۔

طبی ماہرین کا کہنا ہے کہ اس دوا کی افادیت سے متعلق حتمی رائے اسی وقت قائم کی جا سکتی ہے، جب بڑے پیمانے پر کوئی تحقیق ہو اور زیادہ لوگوں کو اس میں شامل کیا جائے۔

البتہ، امریکہ، برطانیہ اور کینیڈا میں اس حوالے سے تحقیق کی جا رہی ہے۔

Post Top Ad

Your Ad Spot