Sada E Waqt

چیف ایڈیٹر۔۔۔۔ڈاکٹر شرف الدین اعظمی۔۔ ایڈیٹر۔۔۔۔۔۔ مولانا سراج ہاشمی۔

Breaking

متفرق

Thursday, April 2, 2020

ممبٸی ۔۔قبرستان میں نہ دفنا دینے پر ٹرسٹیوں کے خلاف ہوگی کارواٸی۔۔۔۔۔۔۔مہاراشٹر وقف بورڈ۔

مہارشٹر وقف بورڈ نے جاری کیا سرکولر۔۔حکومت کے نماٸندہ خطوط کے تحت میت کو جلد دفنانے کی ہدایت۔۔متولیوں کی مخالفت پر ہوگی کارواٸی۔

 ممبٸی ۔۔مہاراشٹر۔۔/صداٸے وقت /نماٸندہ /٢ اپریل ٢٠٢٠۔
==============================
مہاراشٹر سرکار وقف بورڈ 2 اپریل 2020 کو ایک سرکولر  نمبر 1484/2020 جاری کرکے ممبٸی کے تمام قبرستان کے متولیوں کو ہدایت دی  ہے کہ مسلمانوں کی میت کو فوری طور پر دفنانا ضروری ہے۔۔بھلے ہی موت کرونا واٸرس بیماری سے کیوں نہ ہوٸی ہو۔

مہاراشٹر وقف بورڈ کے اعلیٰ کارگزار افسر انیس شیخ کے ذریعہ جاری حکمنامے میں کہا گیا ہے کہ پوری دنیا میں کرونا واٸرس کی بیماری نے ایک وباٸی شکل اختیار کر لی ہے اس بیماری کی لپیٹ میں مہاراشٹر ریاست کے بھی سینکڑوں لوگ متاثر ہوٸے ہی اور بہت سارے انتقال بھی کر رہے ہیں ۔ہمارے علم میں آیا ہے کہ بہت سے قبرستان کے متولیان و ٹرسٹی اپنے قبرستان میں کرونا بیماری سے انتقال ہوٸی میت کو دفنانے کی مخالفت کرہے ہیں۔
انھوں نے کہا کہ کرونا واٸرس کی بیماری کیوجہ سے انتقال کرنے والے افراد کو دفنانے میں  کوٸی پریشانی نہیں ہے ایسا مہارشٹر حکومت نے واضح کردیا ہے ۔اس لٸے سبھی قبرستان کےٹرسٹیان و متولیان کو ہدایت دی جاتی ہے کہ اگر کسی بھی شخص کی کرونا واٸرس سے موت واقع ہوجاتی ہے تو فوری طور پر اسی اسپتال ، جس میں موت ہوٸی ہے ، کے قریب ترین قبرستان میں دفنانے کی اجازت دی جاٸے ۔حکومتی گاٸیڈ لاٸن کے مطابق فوری طور پر میت کو دفن کرنے کا بندوبست ہو اور جنازہ و تدفین میں زیادہ بھیڑ نہ ہو اس بات کا ملحوظ رکھنا لازمی ہے ۔۔اگر قبرستان میں دفنانے کے تعلق سے قبرستان کے ٹرسٹی یا متولی مخالفت کرتے ہیں تو ان کے خلاف سخت کارواٸی ہوگی۔
انھوں نے ہدایت جاری کرتے ہوٸے کہا کہ اس سرکولر کی کاپیاں تمام متولیان و ٹرسٹیان کو بھیج دی جاٸیں اور عوام کے لٸیے بھی جاری کردی جاٸے۔
واضح ہو کہ اس سے قبل مہاراشٹر حکومت نے ایک حکنامہ جاری کرکے کہا تھا کہ کسی بھی مذہب کی میت جس کی موت کرونا سے ہوٸی ہو اس کو جلا دینا ہوگا۔اس کو زمین میں دفن کرنے کی اجازت نہیں ہوگی۔۔اس حکمنامے کی ہر سطح پر مخالفت ہوٸی جس سے مہاراشٹر سرکار کو اپنا یہ حکنامہ واپس لینا پڑا تاہم اس کے لٸیے حکومت نے کچھ واضح خطوط بھی طے کر دٸیے ہیں۔
واضح ہو کہ  گزشتہ دنوں ملاڈ کی مالونی قبرستان میں ایک میت کو دفنانے کی اجازت نہ ملنے سے سرکاری اہل کار نے اس مسلم میت کو جلا دیا تھا۔جس سے مہاراشٹر کے مسلمانوں میں بے چینی تھی۔
اس سلسلے میں کانگریسی لیڈر و سماجی کارکن نظام الدین راعین نے نماٸندے کو بذریعہ ٹیلیفون بتایا کہ چونکہ قبرستان وقف کی جاٸیداد ہوتی ہے متولی اس کا نگراں ہوتا ہے اس لٸیے تمام متولیان کو اس حکمنامے کی تعمیل کرنی ہوگی۔انھوں نے کہا کہ مسلم میت کو جلا دینے کے واقعہ سے مہاراشٹر کے مسلمانوں میں بہت بے چینی تھی۔۔پہلے حکومت پر زور ڈالکر جلانے کے تعلق سے حکنمامہ واپس کرایا گیا اور اب وقف بورڈ کے مذکورہ سرکولر نے مسلم عوام کو مطمٸن کیا۔اس کام کے لٸیے ہر سیاسی پارٹیوں کے رہنماٶں نے متحد ہوکر اپنی بساط کے مطابق کوشش کیا۔ نظام الدین راعین نے مہاراشٹر حکومت ، مہاراشٹر وقف بورڈ اور سیاسی رہنماٶں کا شکریہ ادا کیا۔

Post Top Ad

Your Ad Spot