Sada E Waqt

چیف ایڈیٹر۔۔۔۔ڈاکٹر شرف الدین اعظمی۔۔ ایڈیٹر۔۔۔۔۔۔ مولانا سراج ہاشمی۔

Breaking

متفرق

Friday, April 24, 2020

ٹیم MEEM ( مومنٹ فار ایجوکیشن اینڈ امپاور منٹ فار ماسس) لاک ڈاٶن میں غریبوں کے لٸیے مسیحا۔


راشن دینے گئے تھے، دیکھا گھر میں بہت گرمی ہے، راشن کے ساتھ ساتھ پنکھا بھی خرید کر لگا دیئے، شمشاد

علی عامل خان
غازی آباد/اتر ہردیش /صداٸے وقت /عاصم طاہر اعظمی۔
 24/اپریل 2020
=====================================
 سماجی خدمت سے بڑھ کر کوئی نیک عمل نہیں ہے۔  اگر معاشرتی خدمت بلا غرض انجام دی جائے تو انسانیت کا فرض صحیح معنوں میں پورا ہوسکتا ہے۔  بطور انسان ہمارا پہلا مذہب انسانیت کا تعارف کروانا ہے۔  موومنٹ فار ایجوکیشن اینڈ ایمپاورمنٹ فار ماسس (MEEM) ایک سماجی تنظیم ہے جو ملک کے کونے کونے میں سماجی کام کررہی ہے۔  میم کا بنیادی مقصد غریب بچوں کو بلا معاوضہ تعلیم کی فراہمی اور بے روزگار نوجوانوں اور خواتین کو مختلف کاموں میں مفت تربیت دینا ہے بہار سے کیرالہ تک، میم کی ٹیم نے قدرتی آفت میں بہت اچھا کام کیا اور وہاں پر امدادی سامان کے ساتھ ساتھ ضروری وسائل بھی مہیا کیے۔  فروری میں ہونے والے مشرقی دہلی کے سانحے کے بعد امدادی کوششوں میں میم کے تعاون کو فراموش نہیں کیا جاسکتا۔  میم نے تشدد شدہ متاثرہ علاقوں میں ہر گھر پر نظر رکھی تھی اور ضرورت مندوں کو راشن اور روزگار کے لئے فنڈز مہیا کیے تھے۔

 کرونا کی وبا میں جاری لاک ڈاؤن کے وقت ، میم کی ٹیم ملک کی بہت سی ریاستوں میں سوشل میڈیا کے ذریعہ غریب عوام میں راشن تقسیم کررہی ہے۔  یہ کام ابھی بھی جاری ہے۔  لاک ڈاؤن میں پسماندہ اور مزدور طبقہ بری طرح متاثر ہوا ہے۔  روزانہ کمانا  اور کنبہ کی پرورش کرنا اس لاک ڈاؤن میں سب سے بڑا مسئلہ بن گیا ہے۔  کام اور بازار بند ہونے کی وجہ سے متعدد خاندانوں کے چولہے بجھ گئے ہیں۔  ایسی صورتحال میں ، میم کی ٹیم اپنی سماجی ذمہ داریوں کو بخوبی نبھا رہی ہے۔
 میم کی میڈیکل ٹیم کے کوآرڈینیٹر ڈاکٹر سید ارمان کا کہنا ہے کہ ہماری ٹیم مقامی سطح پر نوجوانوں کی ایک کمیٹی بناکر رقم اور راشن اکٹھا کر رہی ہے اور بغیر کسی بڑے فنڈ کے اور اس کو ضرورت مندوں تک پہنچانے کے لئے کام کر رہی ہے۔ڈاکٹر ارمان نے بتایا کہ  سب سے بڑی طاقت ہماری ٹیم کے ممبران ہیں جو زمینی سطح پر گھر گھر جاکر کام کررہے ہیں۔
 ان کے بقول حکومت اور انتظامیہ اس کام میں ہمارا مکمل تعاون کر رہی ہے۔  انتظامیہ کے ذریعہ ہمارے رضاکاروں کو پاس بھی جاری کیا گیا ، تاکہ ہم کسی بھی رکاوٹ کے بغیر ضرورت مند لوگوں تک پہنچ سکیں۔  اب تک ، ہماری ٹیم نے ملک بھر میں لاکھوں افراد میں راشن تقسیم کیا ہے اور ٹیم اب بھی دن رات کام کررہی ہے ۔میم کی ٹیم نے اب تک 5000 سے زائد خاندانوں میں راشن کٹ تقسیم کی ہیں جن میں ایک خاندان کے 10 سے 15 دن کا راشن شامل ہوتا ہے  میم ٹیم 20 سے زائد شہروں میں پکا ہوا کھانا بھی تقسیم کررہی ہے۔ روزانہ تمام شہروں میں تقریبا دو ہزار لوگوں کو پکا ہوا کھانا تقسیم کررہی ہے ۔میم ٹیم بنیادی طور پر اترپردیش ، دہلی ، راجستھان ، بہار، کیرل اور مہاراشٹر میں کام کر رہی ہے.  انہوں نے بتایا کہ ہمیں کھانے کے لئے بھی درخواست ملتی ہے ، وہ فون یا سوشل میڈیا کے ذریعہ آتی ہیں ، اس کے بعد ، ہم وہاں پہنچ کر متعلقہ علاقے کی ٹیم کی مدد کرتے ہیں اور ان تمام ریکارڈوں کو برقرار رکھتے ہیں ،  اگر ہمارے پاس اس علاقے میں ٹیم نہیں ہوتی ہت تو پھر ہم سامان  دکاندار کے ذریعہ ضرورت مندوں تک پہنچاتے ہیں۔ہم دکان دار کو فون پے یا پے ٹی ایم کے ذریعے ادائیگی کرتے ہیں۔
 ڈاکٹر ارمان نے کہا کہ ہماری ٹیم کا کام نہ صرف راشن تقسیم کرنا ہے بلکہ لوگوں کو کورونا وائرس سے آگاہ کرنا بھی ہے۔  میم کے رضاکاروں کو کوویڈ 19 کے بارے میں مکمل تربیت دی گئی ہے تاکہ وہ لوگوں کو بتاسکیں کہ اس سے کیسے بچنا ہے۔
 میم ٹیم کا زیادہ تر کام سوشل میڈیا کے ذریعے کیا جاتا ہے ، جس میں تمام ممبروں کا ماننا ہے کہ ملک کی خدمت کا اس سے بہتر موقع اور کوئی نہیں ہوسکتا ہے۔  آج ملک کو ایسے جوانوں کی ضرورت ہے جو ہر جگہ جاکر لوگوں کی مدد کریں اور انہیں کھانا مہیا کریں۔ٹیم کے تمام ممبران نے بھی یہ حلف لیا ہے کہ جب بھی ملک کو ہماری ضرورت ہوگی ہم ہر طرح سے ملک کی خدمت کریں گے۔  ہمیشہ کے لئے تیار رہیں گے  ہمارا مقصد ملک کی خدمت کرنا ہے ، جو بھی شکل ہو۔  بحران کی اس گھڑی میں ، میم ٹیم اپنی تمام تر صلاحیتوں کے ساتھ انسانیت کی خدمت میں مصروف ہے۔  آپ بھی اکٹھے ہوکر اس وبا کا مقابلہ کریں۔

Post Top Ad

Your Ad Spot