Sada E Waqt

چیف ایڈیٹر۔۔۔۔ڈاکٹر شرف الدین اعظمی۔۔ ایڈیٹر۔۔۔۔۔۔ مولانا سراج ہاشمی۔

Breaking

متفرق

Wednesday, May 13, 2020

ڈی ایم سی کے چیئرمین ڈاکٹر ظفر الاسلام خان کو زبردستی کے کارروائی سے عبوری تحفظ فراہم۔

نئی دہلی، /صداٸے وقت / مئی 12: /ذراٸع ۔
==============================
دہلی ہائی کورٹ نے دہلی اقلیتی کمیشن کے چیئرمین ڈاکٹر ظفر الاسلام خان کو منگل کو کسی بھی زبردستی کارروائی سے عبوری تحفظ فراہم کیا۔جسٹس منوج کمار اوہڑی نے کہا ہے کہ اگلی تاریخ سماعت تک ڈی ایم سی چیئرمین کے خلاف کوئی زبردستی کارروائی نہیں کی جاسکتی ہے۔ایڈووکیٹ ورندا گروور کے ذریعے پیش کی جانے والی ضمانت کی درخواست میں ’’غیر سنجیدہ، حوصلہ افزا اور ناقابل سماعت‘‘ معاملے میں گرفتاری اور جابرانہ کاروائی سے فوری تحفظ فراہم کرنے کا مطالبہ کیا گیا۔
یہ بتاتے ہوئے کہ دہلی پولیس نے ڈاکٹر خان کے خلاف آئی پی سی کی دفعہ 124 اے اور 153 اے کے تحت ایف آئی آر درج کی ہے، درخواست میں دعوی کیا گیا ہے کہ درخواست گزار کے خلاف ایف آئی آر میں جو الزامات عائد کیے گئے ہیں وہ ’’قانونی قابلیت سے مبرا، حقائق کو مسخ کرنے اور قانون کے عمل کی سنگین زیادتی ہے۔‘
درخواست گزار کا دعوی ہے کہ مارچ 2020 کے بعد سے ہندوستان میں بڑے پیمانے پر نفرت انگیز تقاریر اور تبصرے دیکھنے میں آرہے ہیں اور کچھ معاملات میں مسلم برادری کے ممبروں کے خلاف جسمانی حملوں کا نشانہ بناتے ہوئے، مسلم برادری کو COID-19 پھیلانے کا ذمہ دار ٹھہرایا گیا ہے۔انھوں نے مزید بتایا کہ مسلم برادری پر نفرت انگیز تقاریر اور حملوں کا ایک خاص حصہ جعلی اور من گھڑت خبروں کو پھیلانے کی شکل میں تھا، جو مسلمانوں کو بدنام کرتا ہے اور انھیں کورونا وائرس پھیلانے والے کی حیثیت سے پیش کرتا ہے۔
انھوں نے کہا کہ درخواست گزار کے سوشل میڈیا پوسٹوں کی غلط، اشتعال انگیز ، بدنیتی اور مسخ شدہ میڈیا کوریج کا اثر پہلے ہی درخواست دہندہ کے خلاف نفرت بھڑکانے اور عوام کی نظر میں اسے حقیر کرنے کا باعث بنا ہے۔ درخواست میں کہا گیا ہے کہ اس طرح کی میڈیا کی کوریج کے بیناد پر درخواست گزار کے خلاف ناقص اور بے بیناد شکایت دائر کی گئی ہے۔ درخواست گزار نے زبردستی کارروائی سے پیشگی ضمانت اور تحفظ کا مطالبہ کیا ہے کیوں کہ اس کے خلاف مسلمانوں کے حقوق کے تحفظ کے لیے اپنی قانونی ڈیوٹی سرانجام دینے پر اسے ہراساں کرنے اور دھمکانے کے ناپاک عزائم کے ساتھ ایف آئی آر درج کی گئی ہے۔

بشکریہ۔۔دعوت 

Post Top Ad

Your Ad Spot