Sada E Waqt

چیف ایڈیٹر۔۔۔۔ڈاکٹر شرف الدین اعظمی۔۔ ایڈیٹر۔۔۔۔۔۔ مولانا سراج ہاشمی۔

Breaking

متفرق

Sunday, July 12, 2020

اسکول ‏مینیجمنٹ ‏، ‏اسکول ‏ایجوکیشن ‏اور ‏والدین ‏کی ‏ذمہ ‏داریوں ‏پر ‏بھارت ‏بک ‏سینٹر ‏کے ‏زیر ‏اہتمام ‏منعقدہ ‏ویبنار ‏ پر ایک ‏رپورٹ ‏۔

صداٸے وقت /نماٸندہ /١٢ جولاٸی ٢٠٢٠۔
==============================
دنیا کے معاشرتی ، معاشی اور تعلیمی حالات میں ، صحت کے خدشات پر کورونا وبا کے مضر اثرات کی بجائے تعلیم کے بارے میں زیادہ تشویش پائی جاتی ہے۔ دنیا کے بیشتر ممالک نے معلومات اور تعلیم کے لیے information انفارمیشن ٹکنالوجی کے استعمال اور توسیع کی طرف کوششیں شروع کیں ہیں۔ ہندوستان جیسے آبادی والے ملک میں جہاں گاؤں میں زیادہ تر لوگ رہتے ہیں ، انٹر نیٹ ، اسمارٹ فون ، لیپ ٹاپ وغیرہ جیسے گزٹ کتنے قابل رسائ ہیں ، یہ کسی سے پوشیدہ نہیں ہے ، ان حالات میں یا ان ذرائع سے دیہی پرائمری اور ثانوی تعلیم کو کیسے قابل رسائی بنایا جائے۔ بھارت بُک سینٹر نزد اعظم گڑھ پبلک اسکو ل کوٹلہ اعظم گڑہ کے ذریعہ ایک قومی سطح کا ویبینر منعقد کیا گیا تھا تاکہ یہ جاننے کے لئے کہ آسانی اور مثبتیت کے ساتھ کتنی تعلیم حاصل کی جارہی ہے اور ساتھ ہی والدین اور انتظامیہ کو آئی سی ٹی کے استعمال کو اپ گریڈ اور قبول کرنا پڑے گا۔ ویبنار کے مہمان خصوصی سعودی کلچرل اٹیچی مسٹر عبد اللہ صالح الشتوی تھے مہمان اعزازی مسٹر شاہ عالم جمالی تھے جو معروف پورونچل تعمیرات کے جنرل منیجر کے علاوہ یوپی قانون ساز اسمبلی کے ایم ایل اے بھی ہیں۔

20 جون کو ایشیاء نیوز انٹرنیشنل میں شائع ہونے والی ایک خبر کے مطابق ، ہندوستان میں ابتدائی ، ثانوی اور اعلی ثانوی تعلیم میں شامل 247 ملین بچے بری طرح متاثر ہوئے ہیں ، اسی طرح 28 ملین آنگن واڑی پروگرام تعلیم کے حصول سے بری طرح متاثر ہیں۔ اور مڈ ڈے میل کی رسائ سے بھی محروم ہیں۔ ایسی حالت میں ، آئی سی ٹی اسکول کا انتظام کس طرح کرتا ہے ، یا انسانی وسائل کو کس طرح استعمال کرے گا یا اسکول کے بنیادی ڈھانچے کو ہم کس طرح استعمال کرتے ہیں اور محدود گزٹ کا استعمال کرتے ہوئے زیادہ دیہی ماحول میں رہنے والے طلبہ کا تعاون کیاجاسکے تاکہ ہمارے ملک کے آئندہ بچے نہ صرف اس انفیکشن کی ہولناکیوں سے محفوظ رہ سکیں اور انھیں علم بھی حاصل ہوسکے۔ اس ویبینار میں ، مختلف موضوعات پر ماہرین اور اساتذہ نے تفصیل سے بات کی۔ انڈیا بک سینٹر کے زیر اہتمام اس ویبنار کے مقرر خاص جناب مبارک کاپڑی تھے ، جو عالمی شہرت یافتہ ماہر تعلیم اور محرک سپیکر تھے جنہوں نے ہندوستان اور بیرون ملک 3200 سے زیادہ لیکچر دیئے ہیں اور رسائل اور اخبارات میں 1500 سے زیادہ مضامین لکھ چکے ہیں۔ اقلیتوں کے ذریعہ اپنے اداروں کے موقع اور بامقصد استعمال کے نقطہ نظر پر تبادلہ خیال کیا۔ انجینئر طارق اعظم ، ملائیشیا کے پیٹرناس ٹاور ، ٹوئن ٹاور کی تعمیر کے چیف انجینئر ، جو تعلیم اور تعلیم کے میدان میں ان کی شراکت کے لئے مشہور ہیں ، نے اس کی وضاحت کی کہ اخلاقی تعلیم کے ساتھ کس طرح پرائمری اور سیکنڈری تعلیم دی جانی چاہئے۔ ڈاکٹر محمد خالد شعبہ اکنامکس اینڈ مینجمنٹ  شبلی نیشنل ڈگری کالج کے ایسوسی ایٹ پروفیسر نے اس وبا کے دوران مینجمنٹ اور اسکولنگ میں تسلسل اور رسائ بڑھانے کے طریقہ پر تفصیل سے گفتگو کرتے ہیں۔ معلم ، مصنف ماہرتعلیم کلیم الحفیظ نے بے روزگاری کا سامنا کرتی معاشی بحران ، معاشرتی بحران اور تعلیم میں عدم مساوات کی طرف توجہ مبذول کرائی اور اسکول انتظامیہ کو تجویز پیش کی کہ اس تباہی میں انسانی وسائل کا انتظام کیسے کریں۔ ان کا بہتر استعمال کرنا اور ان کے روزگار کو بھی یقینی بنانا۔بہت مشکل صورتحال کی وجہ سے بہت سارے اسکولوں میں اساتذہ کی ملازمت یا غیر تدریسی عملے کی ملازمت میں کمی نے معاشی بحران پیدا کردیا ہے ، حالانکہ اسکی تشخیص ابھی باقی ہے لیکن صورتحال تشویشناک ہے۔ ہمیں سب کو مل کر کھڑے ہونے اور ایک دوسرے کے ساتھ کھڑے ہونے کی ضرورت پر بھی غور کرنا ضروری ہے۔ کلیم الحفیظ  الحفیظ ٹرسٹ اور شاہین اکیڈمی جیسی تنظیموں کے بانی ہیں ، جو JEE اور NEET جیسے امتحانات کی تیاری میں اقلیتی معاشروں کے معاشی طور پر کمزور طلبا کو سبسڈی یا مفت کوچنگ فراہم کرتے ہیں۔ کلیم الحفیظ ایک معروف مخیر ماہر کی حیثیت سے مشہور ہیں ۔اس  کے علاوہ مولاناازادنیشنل  اردو یونیورسٹی کے پروفیسر ڈاکٹر آفتاب عالم نے اسکول انتظامیہ ، اساتذہ اور طلباء کو تنقیدی نظریات سے آگاہ کیا اور آخرمیں جون پور کے معاشیات کے استاد سرتاج خان نے ای لرننگ کی اہمیت پر تفصیل سے تبادلہ خیال کیا۔ بھارت بک سنٹر کے زیر اہتمام اس ویبنار میں استقبالیہ تقریر ڈاکٹر شاہنواز خان نے پیش کی ۔ ڈاکٹر نازش احتشام اعظمی ، میڈیکل آفیسر ، دہلی حکومت نےشکریے کی رسم ادا کی۔ اس ویبنار کے کنوینر حکیم نازش احتشام نے بہت خوبی سے اس پروگرام کو ترتیب دیا تھا، جو اپنے مقصد میں کامیاب ترین پروگرام تھا۔ اس پروگرام میں مکل وبیرون ملک کی معزز شخصیات نے شرکت کی جس میں پروفیسر مزن فرزانہ سری لنکابحرین سے ابوزید دبئی سے مبشر جمالی دہلی سے  پروفیسر یاسمین شمسی پروفیسر عائشہ رضا وغیرہ نے شرکت کی

Post Top Ad

Your Ad Spot