Sada E Waqt

چیف ایڈیٹر۔۔۔۔ڈاکٹر شرف الدین اعظمی۔۔ ایڈیٹر۔۔۔۔۔۔ مولانا سراج ہاشمی۔

Breaking

متفرق

Saturday, July 4, 2020

‎وکاس دوبے کی تلاش میں لکھنؤ میں چھاپہ ، بھائی مفرور ، بھابھی ‏کے ‏پاس ‏ریوالور ‏برآمد



 لکھنؤ۔اتر پردیش /صداٸے وقت /نماٸندہ /4 جولاٸی 2020.
==============================
  کانپور انکاؤنٹر کیس میں ، ہسٹری شیٹر وکاس دوبے کی تلاش میں 100 سے زیادہ ٹیمیں چھاپے مار رہی ہیں۔  اسی تسلسل میں ، ایک ٹیم نے لکھنؤ میں وکاس دوبے کے گھر پر چھاپہ مارا۔  کرشن نگر علاقہ میں اندرلوک کالونی میں وکاس دوبے کا گھر ہے۔  لیکن پولیس کو یہاں نوکر کے علاوہ کوئی نہیں ملا۔  بڑے پیمانے پر تلاشی لینے  اور کچھ پین   ڈرائیوز وغیرہ ضبط کرنے کے بعد ، پولیس نے قریب ہی واقع وکاس کے بھائی دیپک کے گھر پر چھاپہ مارا۔  یہاں دیپکو  کی اہلیہ کے پاس سے ریوالور برآمد ہوا۔  یہ دعوی کیا گیا ہے کہ یہ لائسنسیا ہے۔  پولیس اب ریوالور کے لائسنس کی تحقیقات کر رہی ہے۔
 اسی دوران ، وکاس کا بھائی دیپک  گھر پر نہیں ملا ، پتہ چلا کہ وہ واقعے کے بعد گھر سے چلا گیا تھا اور واپس نہیں آیا ہے۔  اس کا موبائل فون بھی سوئچ آف بتا رہا ہے۔  پولیس کے مطابق وکاس کے گھر پر چھاپے کے دوران ایک نوکر کے ذریعہ معلوم ہوا کہ وکاس ڈوبے اپنی بیوی ، دو بیٹوں کے ساتھ رہتے ہیں۔  اس کے علاوہ پولیس ٹیم نے لکھنؤ میں اس کے ممکنہ اہداف پر کٸی  اور ثھکانوں پر   چھاپہ مارا لیکن پولیس کو کوٸی کامیابی نہیں ملی۔
واضح ہو کہ  2017 میں ، وکاس دوبے کو کرشن نگر پولیس نے اس کے گھر سے گرفتار کیا تھا۔  وکاس کے خلاف لکھنؤ کے دیگر تھانوں میں درج مقدمات کی تفصیلات کی بھی تفتیش کی جارہی ہے۔
 دوسری طرف ، متعدد سمتوں میں بیک وقت پولیس اہلکاروں کے قتل کی تحقیقات جاری ہے۔  جس طرح ہسٹری شیٹر وکاس دوبے اور اس کے شوٹر گینگ نے منصوبہ بندی کے مطابق اس گھناؤنے قتل عام کا ارتکاب کیا ، اس سے محکمہ پولیس کی رازداری پر سوالات پیدا ہوگئے ہیں۔  اعلیٰ افسران  کو شبہ ہے کہ محکمہ پولیس کے ہی مخبر  نے وکاس دوبے کو چوبے پور تھانے سے فورس کی آمد اور گاؤں تک پہنچنے تک فورس کی نقل و حرکت سے آگاہ کیا تھا۔
 اس کی تفتیش میں ، شک کی بنیاد پر ، تھانہ چوبے پور کے پولیس افسر ، سپاہی اور ہوم گارڈ کے موبائل نمبر کی کال تفصیلات کی چھان بین کی جارہی ہے۔  ذرائع کے مطابق موبائل کال کی تفصیلات کا انتظار کیا جارہا ہے۔  اس کے بعد مزید کارروائی کی جائے گی۔

Post Top Ad

Your Ad Spot