Sada E Waqt

چیف ایڈیٹر۔۔۔۔ڈاکٹر شرف الدین اعظمی۔۔ ایڈیٹر۔۔۔۔۔۔ مولانا سراج ہاشمی۔

Breaking

متفرق

Saturday, September 5, 2020

کنہیا ‏کمار ‏کی ‏شہریت ‏کو ‏ختم ‏کرنے ‏کے ‏لٸے ‏الہٰ ‏آباد ‏ہاٸی ‏کورٹ ‏میں ‏عرضی۔۔عدالت ‏نے ‏عرضی ‏خارج ‏کرتے ‏ہوٸے ‏درخواست ‏گزار ‏پر ‏لگایا ‏جرمانہ۔

الہٰ آباد۔۔اتر پردیش /صداٸے وقت /ذراٸع /٥ ستمبر ٢٠٢٠۔
=============================
 الہ آباد ہائی کورٹ نے جے این یو کے سابق طلباء یونین  کے صدر کنہیا کمار کی شہریت ختم کرنے سے متعلق درخواست خارج کردی ہے۔  عدالت نے درخواست دائر کرکے عدالت کا وقت ضائع کرنے پر درخواست گزار پر 25 ہزار روپے جرمانہ بھی عائد کیا ہے۔  عدالت نے کہا کہ ایسا لگتا ہے کہ درخواست گزار نے قانونی دفعات کا مطالعہ کیے بغیر صرف سستی مقبولیت حاصل کرنے کے لئے درخواست دائر کی ہے۔
   عدالت نے عرضی داخل کرکے عدالت کا وقت ضائع کرنے پر درخواست گزار ناگیشور مشرا پر 25000 روپے جرمانہ بھی عائد کیا ہے۔  جرمانے کی رقم ایک ماہ میں رجسٹرار کے پاس جمع کروانے کی ہدایت کی گئی ہے۔
 وارانسی کے ناگیشور مشرا کی درخواست کی سماعت کے دوران جسٹس ششی کانت گپتا اور جسٹس شمیم ​​احمد کی بنچ نے فیصلہ سنایا۔  درخواست میں کہا گیا ہے کہ جے این یو کے سابق طلباء یونین  کے صدر کنہیا کمار نے 9 فروری 2016 کو جے این یو کیمپس میں ملک دشمن نعرے لگائے تھے۔  جس پر اس کے خلاف بغاوت کی دفعات کے تحت مقدمہ درج ہے۔  دہلی میں اس کیس کی سماعت جاری ہے۔
 کنہیا ، جو ہندوستان کی یکجہتی اور سالمیت پر حملہ کر رہے ہیں ،  درخواست گزار کا مزید کہنا تھا کہ کنہیا کمار اور ان کے ساتھی دہشت گردوں کو آزادی پسند جنگجو کہتے ہیں جو ہندوستان کی یکجہتی اور سالمیت پر حملہ کر رہے ہیں اور اسے خطرناک طریقے سے تباہ کرتے ہیں۔  اس کے باوجود ، ہندوستانی حکومت نے کنہیا کمار کی شہریت ختم نہیں کی ہے۔  درخواست میں کنہیا کمار کی ہندوستان کی شہریت ختم کرنے کا مطالبہ کیا گیا ہے۔
 عدالت نے آئین کے آرٹیکل 5 (سی) اور ہندوستانی شہریت ایکٹ 1955 کی دفعہ 10 کی دفعات کا حوالہ دیتے ہوئے کہا ہے کہ کسی ہندوستانی شہری کو تب ہی اس کی شہریت سے انکار کیا جاسکتا ہے جب اسے شہریت نیچوریلاٸزیشن کی حیثیت دی جاتی ہے (غیر ملکی ہندوستان کا شہری ہے  بنانے کا عمل) یا آئین میں دیئے گئے طریقہ کار کے ذریعہ۔  کنہیا کمار ہندوستان میں پیدا ہوئے ہیں ۔  وہ  پیداٸشی طور پر ہندوستان کے  شہری ہیں ۔  لہذا ، کسی کے خلاف مقدمے کی سماعت کی بنیاد پر  اس کی شہریت ختم نہیں کی جاسکتی ہے۔
 عدالت نے کہا کہ ایسا لگتا ہے کہ درخواست گزار نے قانونی دفعات کا مطالعہ کیے بغیر صرف سستی مقبولیت حاصل کرنے کے لئے درخواست دائر کی ہے۔  ایسے وقت میں جب عدالتیں کورونا کی وجہ سے محدود انداز میں کام کررہی ہیں اور قانونی چارہ جوئی کا بوجھ زیادہ ہے۔  اس نوعیت کی درخواست دائر کرنا عدالتی عمل کا غلط استعمال اور عدالت کے قیمتی وقت کا ضیاع ہے۔  عدالت نے اس کے لئے درخواست گزار پر پچیس ہزار روپے جرمانہ بھی عائد کیا ہے۔  رقم جمع نہ کروانے پر عدالت نے کلکٹر وارانسی کو ہدایت کی کہ وہ درخواست گزار سے بطور محصول وصول کرے۔

Post Top Ad

Your Ad Spot