Sada E Waqt

چیف ایڈیٹر۔۔۔۔ڈاکٹر شرف الدین اعظمی۔۔ ایڈیٹر۔۔۔۔۔۔ مولانا سراج ہاشمی۔

Breaking

متفرق

Sunday, September 20, 2020

بھرولی ‏قتل ‏معاملہ۔۔پانچ ‏نامزد ‏ملزمان ‏میں ‏سے ‏ایک ‏گرفتار۔مقتول ‏اسامہ ‏کی ‏ہوٸی ‏تدفین۔

مقتول اسامہ کی تدفین میں امڈی بھیڑ۔بھاری پولس کی موجودگی میں صبح تدفین عمل میں آٸی۔۔شاہگنج کے ایم ایل اے شیلیندر عرف للٸ یادو بھی متوفی کے اہلسنت خانہ سے ملے۔

جونپور۔۔اتر پردیش/صداٸے وقت /نماٸندہ / ٢٠ ستمبر ٢٠٢٠۔
==============================پولیس نے پانچ نامزد ملزمان میں سے ایک ، 70 سالہ اخلاق ( مولوی اخلاق )ولد  حسن، کو اتوار کی شام کو گرفتار کرلیا ہے۔  ، خطے میں بھرولی  قتل میں سیاسی رہنماؤں کی مداخلت اور چاروں طرف سے ہوری پولیس کی تنقید کے بعد گرفتار مولوی اخلاق کو گرفتار  کیا۔  تاہم  خاص ملزم ابھی تک  پولیس سے دور ہے۔حالانکہ پولیس نے واردات کے دن ہی مولوی اخلاق کو حراست میں لے لی تھی۔
 دوسری طرف ، اتوار کے روز ، شاہ گنج کے ایم ایل اے اور سابق ایس پی وزیر شیلندر یادو لالئی نے متوفی اسامہ کے لواحقین سے ملاقات کی اور کنبہ کو تعزیت  کی اور انہیں یقین دہانی کرائی کہ وہ اس ظلم کے خلاف کھڑے ہیں ۔انھوں نے کہا کہ اگر پولس راستے کے تنازعہ کو لیکر بروقت کارواٸی کرتی تو اسامہ آج زندہ ہوتا۔
 ہم آپ کو بتادیں کہ ہفتے کے روز کوتوالی کے علاقہ گاؤں بھڑولی میں پرانی دشمنی کے تنازعہ میں ، دھونس دار ہمسایہ طارق نے 28 سالہ اسامہ کے بیٹے استیق اور استیق کو نجی انداز میں گولیوں سے نشانہ بنایا تھا ، جس میں اسامہ موقع پر ہی دم توڑ گیا تھا۔  اور اس کے والد اشتیاق وارانسی میں زیر علاج ہیں ، جو زندگی اور موت کے مابین جدوجہد کررہے ہیں۔
 کیس کی اطلاع ملتے ہی ایس پی راجکرن نیئر خود موقع پر پہنچے اور واقعے کے بارے میں دریافت کیا اور کیس کی چھان بین کی۔
 مقتول کے بھائی کی تحریر پر ، کوتوالی پولیس  5 نامزد ملزمان کے خلاف مقدمہ درج کیا اور  ایک ملزم پولس  کی گرفت میں آگیا 
 اس  واقعہ قتل  کے بعد  ریاست کے سابق وزیر اعلی اور سماج وادی پارٹی کے قومی صدر اکھلیش یادو نے ٹویٹ کیا تھا کہ جونپور میں بھرولی کے قتل کیس  سے ریاست خوفزدہ ہے ، 
 اکھلیش یادو کے ٹویٹ نے سیاسی حلقوں  میں ہلچل تیز کردیا ہے۔
 اس وقت کوتوالی پولیس کے لئے ایک اہم چیلنج ہے کہ وہ کلیدی  ملزم سمیت تمام ملزمان کی گرفتاری کرے۔

Post Top Ad

Your Ad Spot