Sada E Waqt

چیف ایڈیٹر۔۔۔۔ڈاکٹر شرف الدین اعظمی۔۔ ایڈیٹر۔۔۔۔۔۔ مولانا سراج ہاشمی۔

Breaking

متفرق

Friday, October 30, 2020

جونپور۔۔ملہنیا ‏ضمنی ‏الیکشن۔۔۔سپاہی ‏اور ‏بسپا ‏کے ‏اعلیٰ ‏کمان ‏کے ‏جھگڑے ‏سے ‏فضا ‏بدلی۔


 ہمارے ووٹرز اس امیدوار کو جتایٸں گے جو ایس پی کے امیدوار  کو شکست دے رہا ہو۔۔۔۔
بسپا سپریمو مایاوتی۔

 جونپور۔۔اتر پردیش /صداٸے وقت / 30 اکتوبر 2020.
==============================
      راجیہ سبھا نامزدگی کے عمل کے دوران بی ایس پی اور ایس پی ہائی کمان کے درمیان تنازعہ بڑھنے کے بعد بی ایس پی سپریمو سابق وزیر اعلی مایاوتی کے بیان نے ضمنی انتخاب میں ہلچل بڑھا دی ہے ،   نتیجہ یہ ہے کہ ضمنی انتخاب میں تیزی سے تبدیلی آرہی ہے۔  اس اثر کی وجہ سے ملہنی ضمنی انتخاب بھی اچھوتا  نہیں ہے۔  بی ایس پی کے   سابق ممبر پارلیمنٹ دھننجئے سنگھ کو اس بیان سے براہ راست فائدہ ہوتا نظر آرہا ہے کیونکہ بی ایس پی کے بنیادی ووٹرز میں ابھی بھی دھنجے سنگھ کا دخل برقرار ہے۔
 واضح رہے کہ راجیہ سبھا کی نامزدگی کے عمل کے دوران ، بہوجن سماج  پارٹی کے نصف درجن سے زیادہ ایم ایل اے نے اپنی حمایت واپس لے لی تھی۔ اور یہاں سے بی ایس پی اور ایس پی کے مابین تناؤ بڑھا۔  بی ایس پی کے سپریمو کا ماننا ہے کہ ایس پی کے سبھی ایم ایل اے ایس پی کیوجہ سے ٹوٹے، انہوں نے ضمنی انتخاب میں اپنے ووٹرز کو واضح طور پر کہا کہ ہمارے ووٹر اس امیدوار کی حمایت کریں گے جو ایس پی امیدواروں کو   شکست دے دے۔  ایک لفظ نے ملہنی  میں اسمبلی کے ضمنی انتخاب کو الٹ دیا۔  بی جے پی امیدوار اور پارٹی قائدین اب بی ایس پی کے ووٹ کو مینیج کرنے  میں مصروف ہیں۔  اس وقت ،آزاد امیدوار دھننجئے سنگھ بی ایس پی میں رہنے کی وجہ سے اپنا اثر ڈال رہے ہیں ۔  اب جب راستہ کھلا تو انھوں نے اپنی مہم کی رفتار بڑھا دی ہے۔  ایک طرف ، بی جے پی ان ووٹرز پر اپنا داٶ  لگانا شروع کر رہی ہے ، جبکہ ایس پی کے لکی یادو اپنے ووٹ بینک کو بچانے کے لئے کوشاں ہیں۔  ایک طرف کانگریس اپنے بیس ووٹ بینک کو بچانے کی کوشش کررہی ہے تو بی ایس پی امیدوار کنفیوژن میں آگئے ہیں۔
 

Post Top Ad

Your Ad Spot