Sada E Waqt

چیف ایڈیٹر۔۔۔۔ڈاکٹر شرف الدین اعظمی۔۔ ایڈیٹر۔۔۔۔۔۔ مولانا سراج ہاشمی۔

Breaking

متفرق

Tuesday, November 3, 2020

فرقہ ‏وارانہ ‏ہم ‏آہنگی ‏کے ‏لٸے ‏کام ‏کرنے ‏والے ‏سوشل ‏ایکٹیوسٹ ‏فیصل ‏خان ‏متھرا ‏کی ‏ایک ‏مندر ‏میں ‏نماز ‏پڑھنے ‏کے ‏الزام ‏میں ‏گرفتار۔

معروف مجاہد آزادی خان عبد الغفار خان عرف سرحدی گاندھی کی قاٸم کردہ تنظیم ” خداٸی خدمت گار“کے قومی کنوینر فیصل خان کو دہلی کے جامعہ علاقے سے گرفتار کیا گیا.  29 اکتوبر کو خان فرقہ وارانہ ہم آہنگی کے طور پر مندر  گئے تھے اور مقامی لوگوں کے اصرار پر دوپہر کی نماز ادا کی تھی۔
نٸی دہلی /صداٸے وقت /ذراٸع۔
==============================
 ذراٸع  ابلاغ  کے مطابق  اترپردیش پولیس نے پیر  کو متھرا کے ایک مندر میں نماز پڑھنے کے الزام میں  فرقہ وارانہ ہم آہنگی کے لئے کام کرنے والی تنظیم کے ممبر فیصل خان کو پیر کے روز گرفتار کرلیا۔جنھیں   منگل کے روز 14 دن کی عدالتی تحویل میں بھیج دیا گیا۔
 خان  جنہیں  دہلی کے جامعہ نگر علاقے سے گرفتار کیا گیا تھا ، وہ خدائی خداٸی خدمت گار کے  قومی کنوینر ہیں ، جس کی بنیاد مجاہد  آزادی  خان عبدالغفار خان نے رکھی تھی ، جو فرنٹیئر گاندھی/ سرحدی گاندھی کے نام سے مشہور ہیں 
 اترپردیش پولیس نے دفعہ 153 اے (مختلف گروہوں کے مابین دشمنی کو فروغ دینے) ، 295 (مذہب کی توہین کرنے کی نیت سے عبادت گاہ کو  ناپاک کرنے) ، اور 505 (عوامی فساد) کے الزامات کے تحت خان کو گرفتار کیا ہے۔  تاہم ، اس گروپ نے ایک بیان میں کہا کہ گاندھیائی کارکن کا ارادہ 24 اکتوبر اور 29 اکتوبر کے درمیان پانچ روزہ یاترا کے دوران فرقہ وارانہ ہم آہنگی کی حمایت کرنا تھا۔
 تنظیم نے بتایا کہ 29 اکتوبر کو ، خان متھرا میں نند بابا کے مندر میں کمونل ہارمونی کا پیغام دینے کے لئے گئے تھے جب ان کی سہ پہر کی نماز کا وقت ہوا تو مقامی لوگوں کے اصرار پر انھوں نے مندر کے باہر احاطے میں نماز پڑھی۔ ان کے ہمراہ ان کے ساتھی چاند محمد ، نلیش گپتا اور ساگر رتنا بھی تھے۔
 بیان میں کہا گیا ہے کہ "مندر میں موجود لوگوں نے ان سے  یہ کہہ کر ہی مندر کے احاطے میں ہی نماز پڑھنے کی اجازت دی تھی کہ آپ پہلے ہی خدا کے گھر میں موجود ہیں لہذا آپ کو کہیں اور جانے کی ضرورت کیوں ہے۔"  “یہ سن کر فیصل خان نے اپنی نماز  ادا کی   اس کے بعد وہ اور دوسرے ممبر کچھ اور وقت تک مندر  میں رہے اور انہوں نے اسی مندر  میں لنچ کیا۔ "
 اس سفر کے بعد جب فیصل دہلی واپس آئے تو انہیں نماز پڑھنے کی شکایت کے بارے میں آگاہ کیا گیا۔  تنظیم نے کہا کہ میڈیا کے کچھ لوگ کارکن کے خلاف جھوٹی کہانیاں چلا رہے ہیں۔


Post Top Ad

Your Ad Spot