Sada E Waqt

چیف ایڈیٹر۔۔۔۔ڈاکٹر شرف الدین اعظمی۔۔ ایڈیٹر۔۔۔۔۔۔ مولانا سراج ہاشمی۔

Breaking

متفرق

Friday, November 27, 2020

سابق ‏وزیر ‏و ‏لوک ‏دل ‏کے ‏ریاستی ‏صدر ‏ڈاکٹر ‏مسعود کا ‏اویسی ‏کے ‏متعلق ‏ایک ‏بیباک ‏انٹر ‏ویو۔

سابق وزیر ڈاکٹر مسعود احمد ، جنہوں نے مسلم قیادت  کی کوشش کی   ان کا اویسی کے بارے میں بے باک انٹرویو۔
صداٸے وقت / ذراٸع۔( ہندی سے ترجمعہ).
==============================
  ہندوستان کے سیاسی گلیاروں  میں  آج کل صرف اسدالدین اویسی ہی کی بات کی جاتی ہے۔  بہار میں ان کی پارٹی آل انڈیا مجلس اتحاد المسلمین کی کامیابی کے بعد  مسلم قیادت  کے بارے میں ایک بحث چھڑ گئی ہے۔  ایسے وقت میں  ڈاکٹر مسعود کو مسلم قیادت  کے تعلق سے   بات کرنے پر  یاد کیا جاتا ہے۔ کہا جاتا ہے کہ ڈاکٹر مسعود اتر پردیش میں مسلم قیادت کے اسکول کے ماسٹر تھے۔  آپ نیشنل لوک تانترک  پارٹی (نیلوپا) کے بانی تھے۔ ڈاکٹر مسعود  وہ رہنما تھے   جو ہندوستان میں مسلم انصاف کے لئے سب سے زیادہ جدوجہد کٸے  ہیں۔  انھوں  نے ہزاروں جلسے کیے۔  6 ریاستوں میں انتخاب لڑا ہے۔  10 سالوں تک  وہ مسلسل سڑک پر رہے  اور انہوں نے اتر پردیش میں ہر چوراہے پر میٹنگیں کیں۔  یہ بھی کہا جاسکتا ہے کہ ڈاکٹر مسعود نے مسلم قائد کے نظریہ کی بنیاد رکھنے کا کام کیا۔  اترپردیش کے 80 اضلاع میں ان کی ایک مضبوط تنظیم تھی۔  1995 اور 2005 کے درمیان ، نیلوپا زیادہ سر گرم   تھی۔  اس کے بعد وہ ڈھیلی پڑ گٸی۔
 اس خصوصی انٹرویو میں ، سابق وزیر اور نیلوپا کے بانی ڈاکٹر مسعود سینئر صحافی عاص محمد کیف کے ساتھ اپنی جدوجہد  سازشوں اور مسلم قیادت کے اپنے تجربات شیئر کررہے ہیں۔
سوال۔۔۔ بہار میں اویسی کی فتح کے بارے میں بات کی جارہی ہے ، ان کی تعریف و تنقید  دونوں ہی ہو رہی ہیں!  آپ کو بھی اس پر کچھ کہنا چاہئے!

 ڈاکٹر مسعود: اویسی کی جیت سے خوش ہوں۔  میرے خیال میں یہ اس نظریہ کی فتح ہے جس کی ہم نے بنیاد رکھی ہے۔  ہمارا نعرہ تھا "جتنی جسکی بھاگی داری۔۔اتنی اسکی حصے داری"۔  اویسی کی کامیابی اپنی ہی نظر آتی ہے۔  ہم نے اتر پردیش کی ہر گلی اور چوراہے پر  میٹنگ کی تھی تاکہ لوگوں کو یہ باور کرایا  جا سکے کہ اصل اعزاز 'اپنا قاٸد اور اپنا پرچم' میں ملے گا۔  اب مختلف سیاسی جماعتوں میں موجود مسلم رہنماؤں ، مذہبی سیاسی رہنماؤں اور پیسہ سے مالا مال مسلمانوں کا 'گٹھ جوڑ' ان کو گھیرنے کی کوشش کرے گا۔  انہیں اس سے محتاط رہنا ہوگا۔  اس فتح سے سیکولر جماعتوں پر دباؤ پڑے  گا  وہ مسلمانوں کو عزت دینے پر مجبور ہوں گے ۔  یہ اس سوال کا جواب ہے جو سیکولرازم کی عالمگیر جماعتیں اکثر بند کمروں میں پوچھتی ہیں کہ مسلمان کہاں جائے گا!  وہ بی جے پی میں نہیں جاسکتا  یہ وہ جواب ہے جہاں یہ جاسکتا ہے!  اب سیکولر پارٹیاں مسلمانوں کو سنجیدگی سے لینے کی کوشش کریں گی۔  وہ انہیں بیکار نہیں سمجھیں گے۔

سوال۔۔۔ ان سب کے درمیان ، اگر بی جے پی جیت جاتی ہے  تو  ؟ جیسا کہ بہار میں ہوا ہے

 ڈاکٹر مسعود: اب انہیں زیادہ فکر کرنی چاہئے کہ کس نے حکمرانی کی ہے ، کیوں کہ کرسی ان کے پاس سے  جارہی ہے ، اب مسلمانوں کے پاس کرسی تو نہیں ہے نا !  خود کو سیکولر جماعت کہنے والے مسلمانوں کے ساتھ یکساں سلوک کیوں نہیں کرتے ہیں؟  انہیں ان کے ساتھ انصاف کرنا چاہئے۔  وہ بی جے پی کا خوف دکھا کر کھیر ہمیشہ نہیں کھا سکتے ہیں۔  سیکولر جماعتیں مسلسل مسلمانوں کو دھوکہ دے رہی ہیں۔  مسلم رہنماؤں کے ساتھ غلاموں کی طرح سلوک کیا جاتا ہے اور وہ فالور ہیں نیتا  نہیں  ہیں۔  ایمانداری کے ساتھ مسلمانوں کو برابر کا احترام نہیں کیا گیا ہے۔

سوال۔۔۔۔ آپ وزیر تعلیم تھے اور آپ کو راتوں رات ہٹا دیا گیا ، کیا اس کا درد ہے؟

 ڈاکٹر مسعود۔ جی ہاں ، اس کی بھی ٹیس ہے۔  عقل تو   وہیں سے آئی تھی۔  میں 1995 کی بی ایس پی حکومت میں وزیر تعلیم تھا۔  میں کانشی رام کے نظریہ سے متاثر تھا۔  تب میں امبیڈکر نگر سے الیکشن جیت کر ایم ایل اے  بن گیا۔  میں نے عالم ، فاضل ، معلم جیسی ڈگریوں کو قانونی حیثیت دی۔  میں نے مایاوتی سے پوچھے بغیر بھرتی نکال دی  میں کابینہ کا وزیر تھا اور فیصلہ لینا  میرا حق تھا۔  انہوں نے مجھے برطرف کردیا۔  اب اگر یہ میرا گھر ہوتا تو  مجھے کیسے برطرف کیا گیا ہوتا ۔  یہ ان کا گھر تھا ، لہذا انہوں نے مجھے بے دخل کردیا ، تب میں سمجھ گیا کہ ہمارا  اپنا گھر ہونا چاہئے ، تب میں نے نیلوپا بنانے کو سوچا!  ہم جہاں بھی جاتے  کانشی رام طرح لوگوں کو سمجھایا کرتے تھے۔   ایسی تمام جماعتوں میں مسلمانوں کی  یہی حیثیت ہے ، وہ جب چاہیں دور کردیں گے ، آج میں آر ایل ڈی کا ریاستی صدر ہوں۔  جب تک وہ چاہتے ہیں  میں ہوں ، جب چاہیں یہ عہدہ  ختم کردیا جائے گا۔

سوال۔۔۔ آپ نیلوپا کے ساتھ بہت تجربہ رکھتے ہیں ، آپ مقبولیت کے عروج پر تھے ، آپ کی ہزاروں مجالس تھیں!  لوگ آپ کو سننے آتے تھے!  پھر بھی آپ کیوں ناکام ہوگٸے۔؟
ڈاکٹر مسعود۔۔۔۔ اتر پردیش میں مسلم محلوں کا ایسا کوئی چوراہا نہیں ہے ، جہاں میری ملاقات نہیں ہوئی ، اگر میں صرف ٹرین کا ٹکٹ رکھتا تو میں آٹھ سے دس بوریاں بھر دیتا۔  میں 15، 15  دن سفر پر رہتا تھا ، کپڑے گندے ہوجاتے تھے اور میری اہلیہ بریف کیس لے کر ریلوے اسٹیشن آتی تھیں۔  میں انھیں گندے کپڑے دیتا اور وہ صاف ستھرا کپڑا  لے لیتا، وہ گھر سے کھانا لے کر آتی ہم  دونوں اسٹیشنوں پر کھانا کھاتے اور پھر  وہ گھر واپس چلی جاتی اور میں مغرب سے مشرق کے سفر پر نکل جاتا۔  اتنی محنت کرنے کے بعد بھی میں ناکام رہا۔  نیلوپا اقتدار میں شامل نہیں ہوسکی۔ پارٹی پس منظر میں چلی گئی۔  ہماری زندگی کا خواب ٹوٹ گیا۔  میں آپ کو بتاتا ہوں کہ میری ملاقاتوں کے دوران جب میں پولیس اہلکاروں کی طرف اشارہ کرتا تھا اور کہا کرتا تھا کہ اس لاٹھی میں بھی ہماری  طاقت ہوگی ، لوگ جھوم اٹھتے تھے۔  میں بڑے دکھ کے ساتھ کہہ رہا ہوں کہ حیثیت رکھنے والے مسلمانوں نے میرا ساتھ نہیں دیا۔  ہم دو روپے کا چندہ مانگتے تھے۔  میں منچ سے کہا کرتا تھا کہ آپ جو گوشت کھاتے ہو اس کی ہڈی جمع کرتے رہو اور اسے بیچ کر  ہمیں چندہ  کردو ۔ اگر ہمیں اسے بیچ کر  بھی رقم مل جائے تو  ہم  اس پارٹی کو چلائیں!  سیکولر پارٹیوں کے مسلمانوں کے گٹھ جوڑ نے ہمیں برباد کردیا۔  یہ مسلم رہنماؤں ، پیسوں اور سیاسی مفادات کے حامل مسلم مسلمانوں کے مابین گٹھ جوڑ تھا۔  انہوں نے ہمارے خلاف سازش کی۔
 ان کے پاس وسائل تھے اور میں بھی روٹی کے لٸے  جدوجہد کر رہا تھا۔  ہمارے کارکن بھی غریب تھے ، بہت سے لوگ رکشہ چلاتے تھے۔  وہ کب تک جدوجہد کرتے !   حوصلہ ٹوٹ گیا  پیسوں والے مسلمانوں نے کوئی مدد نہیں کی۔  اب اویسی کی جیت سے  خوشی اس وجہ سے ہے کہ جیت اویسی کی ہوٸی اور  ہمارا کام ہوا۔

سوال۔۔۔ آپ کو لگتا ہے کہ اویسی کو بھی اس طرح کے مسائل کا سامنا کرنا پڑے گا!

 ڈاکٹر مسعود: اگر کچھ پریشانی ہوتی ہے تو ، وہ بھی ان  کی جیسی  ہی ہو گی  اور کچھ نئے مساٸل  ہوں گے ، کیونکہ سیاسی مسلم علما ، سیکولر جماعتوں کے قائدین اور بااثر مسلمانوں کا گٹھ جوڑ کہیں نہ کہیں جڑا ہوا ہے۔  وہ ان کے پاؤں جمنے نہیں دے گا!  یوپی بہار سے مختلف ہے ، خاص طور پر یہ سیمانچل سے بالکل مختلف ہے۔  اویسی صاحب کے پاس پیسے کی کمی نہیں ہے اور تشہیر بہت ہے ، یہ ان کا مثبت رخ ہے۔  ان کا منفی پہلو یہ ہے کہ تنظیم صفر ہے۔  ہر بوتھ میں کم از کم پانچ کارکن ہونے چاہئیں۔  یہاں تک کہ ان کے تمام اضلاع میں ضلعی سربراہ بھی نہیں ہیں۔  زمینی سطح پر اتر پردیش میں کچھ بھی نہیں ہے ، جو کچھ بھی  ہے ہوا میں ہے۔  اگر کوئی تنظیم نہیں ہے تو   آپ کو اچھے امیدوار نہیں ملیں گے  ۔  اب انہیں تنظیم پر پوری توجہ دینی ہوگی۔  ایک اچھی بات یہ ہے کہ اب شمالی ہندوستان کا آدمی بھی جنوبی ہند کے قائدین کو قبول کررہا ہے۔  یہ ان کا مثبت  پہلو بھی ہے۔  وہ  تنظیم پر فی الحال کام کریں۔  باقی بعد میں ہے

Post Top Ad

Your Ad Spot