Sada E Waqt

چیف ایڈیٹر۔۔۔۔ڈاکٹر شرف الدین اعظمی۔۔ ایڈیٹر۔۔۔۔۔۔ مولانا سراج ہاشمی۔

Breaking

متفرق

Thursday, December 17, 2020

ڈاکٹر ‏کفیل ‏کے ‏معاملہ ‏میں ‏یوگی ‏حکومت ‏کو ‏سپریم ‏کورٹ ‏سے ‏جھٹکا۔۔ہاٸی ‏کورٹ ‏کے ‏فیصلہ ‏میں ‏مداخلت ‏سے ‏انکار۔



نٸی دہلی /اتر پردیش/ ذراٸع  17 دسمبر 2029.
==============================
 اترپردیش حکومت ڈاکٹر  کفیل خان کے معاملہ میں ہاٸی کورٹ کے فیصلہ کے  خلاف سپریم کورٹ پہنچی تھی  سپریم کورٹ نے ہائی کورٹ کے فیصلے میں مداخلت سے انکار کردیا ہے۔  یوگی حکومت ڈاکٹر کفیل خاں  کو   سی اے اے کے کی مخالفت کرنے کے پاداش میں   قومی سلامتی ایکٹ کے تحت مقدمہ درج کیا گیا تھا   الہ آباد ہائی کورٹ نے ڈاکٹر خان پر  این ایس اے کو ہٹانے اور رہا کرنے کا حکم دیا۔
 چیف جسٹس آف انڈیا ایس ایس بوبڈے نے ڈاکٹر کفیل کو رہا کرنے کے الہ آباد ہائی کورٹ کے حکم کو برقرار رکھتے ہوئے کہا ، "فوجداری مقدمہ ان کی نوعیت کے مطابق بنایا جائے گا۔"  آپ کسی اور کیس کے نام پر کسی کو گرفتار نہیں کرسکتے ہیں۔  سپریم کورٹ نے کہا کہ ہائی کورٹ نے اچھا حکم دیا ہے۔ اس حکم میں مداخلت کرنے کی کوئی وجہ نہیں ہے۔
 یکم ستمبر کو  الہ آباد ہائی کورٹ نے این ایس اے کے تحت کفیل خان کی تحویل ختم کردی۔  یوپی حکومت نے اس کے خلاف سپریم کورٹ میں رٹ داٸر کی   لیکن مایوسی ہاتھ  لگی۔   ڈاکٹر  کفیل کو گزشتہ جنوری میں  علی گڑھ مسلم یونیورسٹی میں سی اے اے کے خلاف تقریر کرنے اور لوگوں کو اکسانے کے الزام میں گرفتار کیا گیا تھا۔ اور  مقدمہ قومی سلامتی ایکٹ کے تحت درج کیا گیا تھا ، جو شہر میں خوف و ہراس اور امن و امان کی خلاف ورزی کی فضا پیدا کرنے کے لئے استعمال کیا گیا تھا۔
 اس کے بعد ہائیکورٹ نے این ایس اے کی کارواٸی  کو کالعدم قرار دیتے ہوئے کہا کہ ڈاکٹر کی تقریر میں ایسا کچھ بھی نہیں جس نے تشدد کو فروغ دیا۔  انیشی ایٹو ، ڈاکٹر کفیل پر کئی مذہبی تنظیموں کو بھڑکانے کا الزام عائد کیا گیا تھا ، اس معاملے میں انہیں فروری میں ضمانت مل گئی تھی۔
 اترپردیش حکومت کا کہنا ہے کہ ماضی میں ڈاکٹر جرائم کا ارتکاب کرتے رہے ہیں۔  اسی وجہ سے  انضباطی کارروائی کرکے انہیں ملازمت سے ہٹا دیا گیا۔
  واضح ہو  کہ قومی سلامتی ایکٹ کے تحت حکومت کسی کو بھی بغیر کسی الزام کے تحویل میں لے سکتی ہے۔  اس کے تحت ملکی سلامتی کا حوالہ دیا جاتا ہے۔

Post Top Ad

Your Ad Spot