Sada E Waqt

چیف ایڈیٹر۔۔۔۔ڈاکٹر شرف الدین اعظمی۔۔ ایڈیٹر۔۔۔۔۔۔ مولانا سراج ہاشمی۔

Breaking

متفرق

Thursday, July 1, 2021

راشٹریہ علماء کونسل کے صوبہ اترپردیش کے عہدہ داران کی ایک جائزہ میٹنگ کا لکھنؤ میں ‏انعقاد

لکھنۏ۔۔اتر پردیش /صدائے وقت/عبد الرحیم صدیقی کی رپورٽ۔۔1 جولائئ 2021۔
++++++++++++++++++++++++++++++++++
راشٹریہ علماء کونسل کے صوبہ اترپردیش کے عہدہ داران کی ایک جائزہ میٹنگ لکھنؤ میں منعقد ہوئی۔ اس اجلاس کی صدارت پارٹی کے ریاستی صدر ج  انل سنگھ نے کی اور قومی صدر مولانا عامر رشادی مہمان خصوصی کے طور پر موجود رہے۔ اجلاس میں تنظیمی ڈھانچہ کا تجزیہ، ضلع پنچایت انتخابات میں پارٹی کی کارگردگی اور 2022 کے آئندہ اسمبلی انتخابات پر عہدیداران کے ساتھ چرچہ کی گئی۔
پارٹی کے قومی صدر مولانا عامر رشادی نے اپنے صدارتی خطاب میں موجود عہدیداروں کی حوصلہ افزائی کرتے ہوئے ان سے آئندہ اسمبلی انتخابات کی تیاریوں میں مکمّل طور مشغول ہونے کا مطالبہ کیا۔ انہوں نے کہا کہ، " حالیہ ضلع پنچایت انتخابات میں پارٹی کی کارکردگی بہترین رہی اور اعظم گڑھ ، جون پور ، بہرائچ ، مراد آباد و دیگر  اضلاع میں ضلع پنچایت ممبر کے انتخاب جیت حاصل کی ہے اور پارٹی کی کارکردگی اس بار 2015 کے پنچایت انتخابات سے کہیں زیادہ بہتر رہی ہے اور ہمارے ووٹوں کی شرح میں بھی نمایاں اضافہ ہوا ہے، جس کی وجہ سے کارکنان کے حوصلے بڑھ گئے ہیں اور اب ہم سب کو مل کر آئندہ 2022 کے اسمبلی انتخابات کی تیاریوں میں اپنی توجہ مرکوز کرنا چاہئے۔ انہوں نے کہا کہ، "ہمیں اس جوش کو برقرار رکھتے ہوئے صوبہ میں اقتدار کی تبدیلی تک رکنا نہیں ہے کیونکہ آج یوپی کے عوام بی جے پی کے اقتدار، مہنگے بجلی، پیٹرول، محکمہ صحت سے متعلق خدمات ، بے روزگاری  اور بدعنوانی کا شکار ہیں۔ عام لوگوں کی کمر ٹوٹ گئی ہے اور اپوزیشن کے نام پر تمام جماعتیں خاموش بیٹھی ہیں، حزب اختلاف کی مرکزی جماعت سماج وادی پارٹی بھی صرف سوشل میڈیا تک محدود ہوگئی ہے ، لہذا اب چھوٹی جماعتوں کو ہی متبادل بننا پڑے گا. کارکنوں کی حوصلہ افزائی کرتے ہوئے انھیں یہ پیغام دیا گیا کہ اب سب کو نئے جوش و جذبے کے ساتھ منظم کیا جائے اور 2022 کے اسمبلی انتخابات کی تیاری شروع کردیں۔ لوگ تبدیلی چاہتے ہیں اور ہمیں اس تبدیلی کو زمینی سطح پر عوام سے رابطہ قائم کر عملی جامہ پہنانا ہوگا۔

دوسری جماعتوں سے اتحاد کے سلسلے میں ، انہوں نے کہا کہ ، "راشٹریہ علماء کونسل ہمیشہ سے ہی عمومی نظریہ کی جماعتوں کے ساتھ اتحاد کے حق میں رہی ہے اور ہماری کوششیں آج بھی جاری ہیں، ہم آج بھی تمام ملی سیاسی جماعتوں کو اتحاد کی دعوت دیتے ہیں اور پہلے بھی دیتے رہے ہیں اور دیگر سیاسی جماعتوں سے بھی ہم اتحاد کے لیے تیار ہیں لیکن اپنے وصول اور اپنے وقار سے سمجھوتا کرکے کسی بھی اتحاد کاحصّہ بننا ہمیں منظور نہیں ہے کیونکہ ہماری جدوجہد ہی قوم کو باوقار بنانا کی ہے۔ 
اس اجلاس کو پارٹی کے قومی سکریٹری  مولانا غفران قاسمی، قومی نائب صدر مولانا مقتدا حسین مصباحی ، جنرل سکریٹری ڈاکٹر ظفر عالم علیگ نے بھی خطاب کیا اور اس موقع پر درجنوں افراد نے علما کونسل کی رکنیت بھی حاصل کی اور بہت سے نئے عہدیداروں کو بھی مقرر کیا گیا تھا۔ اس موقع پر مولانا اعجاز ندوی کو قومی نائب صدر، سابق ضلع پنچایت ممبر نعمان احمد کو اعظم گڑھ کا ضلع صدر، محمد ندیم کو فیروزاباد کا ضلع صدر، جمال احمد کو سیتاپور کا ضلع صدر منتخب کیا گیا اور اجلاس میں آئے نومنتخب ضلع پنچایت ممبران کا استقبال بھی کیا گیا۔ پارٹی کے ترجمان ایڈووکیٹ طلحہ رشادی نے اجلاس کی نظامت کی۔

Post Top Ad

Your Ad Spot