Sada E Waqt

چیف ایڈیٹر۔۔۔۔ڈاکٹر شرف الدین اعظمی۔۔ ایڈیٹر۔۔۔۔۔۔ مولانا سراج ہاشمی۔

Breaking

متفرق

Monday, November 29, 2021

علی سردار جعفری کے یوم پیدائش پر خصوصی تحریر،



تحریر - خرّم ملک كيتھوی
پٹنہ، بہار،
                         صدائے وقت 
==================================
آج ہی کے دن29 نومبر 1913 کو علی سردار جعفری اترپردیش کے گونڈہ ضلع کے بلرامپور میں پیدا ہوئے تھے۔ انہوں نے لکھنؤ میں ایک مذہبی ماحول میں پرورش پائی تھی۔ تعلیمی اعتبار سے انہوں نے لکھنؤ یونیورسٹی سے ماسٹرز کیا 
علی سردار جعفری کا شمار ترقی پسند ادبی تحریک سے وابستہ اردو کے عظیم شاعروں میں ہوتا ہے، وہ بہ یک وقت ایک اچھے شاعر اور نقاد کی حیثیت سے ادب میں پہچانے گئے، وہ بے مثال مقرر ہیں، سیاسی رہنما بھی اور ادبی نظریہ ساز بھی،
وہ بنیادی طور پر نظم کے شاعر تھے لیکن انہوں نے غزلیں بھی کہیں، وہ سادہ گو اور سلیس شاعری کے دلدادہ رہے، رفعت سروش انکی تعریف کرتے ہوئے کہتے ہیں 
"سردار جعفری عنفوان شباب میں اپنے اس شعر کے ساتھ مطلع شاعری پر طلوع ہوئے،
"دامن جھٹک کے منزل غم سے گزر گیا
اٹھ اٹھ کے دیکھتی رہی گرد سفر مجھے"
کہا جاتا ہے کہ وہ آٹھ سال کی عمر میں انیس کے مرثیے کے 1000 اشعار پڑھ سکتے تھے، 
انہوں نے مختصر کہانیاں بھی لکھیں، 
انہوں نے شکسپیئر کے کچھ ڈراموں کا بھی ترجمہ کیا، 

 ترقی پسند تحریک میں سب سے پہلا نام سجاد ظہیر کا آتا ہے لیکن علی سردار جعفری ترقی پسند تحریک کے روحِ رواں کی حیثیت کے طور پر جانے جاتے ہیں، 

وہ خود کہتے ہیں کہ:
"تحریک، تنظیم اور تخلیق کا باہمی رشتہ ہے، 

وہ ملک میں امن و شانتی کی فضا بھی قائم کرنا چاہتے تھے
نغمہ نگار کے طور پر انکے مختصر کاموں میں دھرتی کے لال 1946 اور پردیسی 1957 شامل ہیں،
1948 سے 1978 کے بیچ انکے شعری مجموعے شائع ہوئے ہیں
1- نئی دنیا کو سلام (1948)
2-خون کی لکیر، امن کا ستارہ, ایشیا جاگ اٹھا (1951)
3-پتھر کی دیوار (1953)
4- ایک خواب اور, پیراہن شرر (1965)
5- لہو پکارتا ہے (1965)
انہیں اسکے علاوہ اودھ کی خاک حسین، صبح فردا، میرا سفر اور انکے آخری شعری مجموعے"سرحد" جسے اس وقت کے وزیراعظم جناب اٹل بہاری واجپائی نے اپنے لاہور سفر کے دوران رکھا تھا، وزیراعظم نے سردار جعفری صاحب کو بھی اپنے ساتھ چلنے کو کہا لیکن علالت کی وجہ سے وہ لاہور سفر میں شرکت نہیں کر سکے،

ایوارڈز اور احترام

فراق گورکھپوری (1969) اور قرت العین حیدر(1989) کے بعد گیان پیٹھ ایوارڈ (1997) کو  حاصل کرنے والے وہ صرف تیسرے اردو شاعر تھے. انہوں نے پدم شری  (1967)، جواہر لال نہرو فیلوشپ (1971)، سمیت کئی دیگر اہم اعزازات اور اعزاز بھی وصول کیے تھے،  پاکستان حکومت اقبال مطالعہ (1978) کے لئے گولڈ تمغے (1978)، اترپردیش اردو اکیڈمی ایوارڈ کے لئے شاعری، مخدوم ایوارڈ، فیض احمد فیض ایوارڈ، مدھیہ پردیش حکومت سے اقبال سمان ایوارڈ اور مہاراشٹر حکومت سے سینٹ دیوانشور ایوارڈ بھی حاصل کیا،

انکی شاعری وہ شاعری ہے جو رہتی دنیا تک قائم و دائم رہے گی جب تک اردو ادب سے محبت کرنے والے زندہ رہیں گے تب تک انکو سردار جعفری یاد آتے رہیں گے، انکی شاعری کا کینوس بہت وسیع ہے جو انکو ادب کی دنیا میں تا حیات زندہ جاوید رکھے گی
آپ 1948 میں سلطانہ منہاج سے رشتہِ ازدواج میں منسلک ہوئے،

آپ 1 اگست 2000 کو حرکت قلب بند ہونے کی وجہ سے اس دار فانی سے کوچ کر گئے،

Post Top Ad

Your Ad Spot