Sada E Waqt

چیف ایڈیٹر۔۔۔۔ڈاکٹر شرف الدین اعظمی۔۔ ایڈیٹر۔۔۔۔۔۔ مولانا سراج ہاشمی۔

Breaking

متفرق

Sunday, September 2, 2018

فتاویٰ پر پابندی عائد۔

اترا کھنڈ ہائی کورٹ نے فتاویٰ جاری کرنے پر عائد کی پابندی۔ جمعیتہ علما ٕ اس کےخلاف دائر کرےگی اپیل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔. 
صدائے وقت۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔
عدلیہ کا کہناہے کہ تمام مذہبی اداروں سے جاری ہونے والے فتاوی اور پنچایتی فیصلے بنیادی حقوق کے خلاف ہیں،اس سے انتہاءپسندی کو فروغ ملتاہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اتر اکھنڈ ہائی کورٹ نے مفاد عامہ کی دائر کی گئی ایک عرضی پر سماعت کرتے ہوئے دینی اداروں سے جاری ہونے والے فتاوی کو غیر قانونی اور بنیادی حقوق کے خلاف بتاتے ہوئے اس پر پابندی عائد کردی ہے ۔عدلیہ کا کہناہے کہ تمام مذہبی اداروں سے جاری ہونے والے فتاوی اور پنچایتی فیصلے بنیادی حقوق کے خلاف ہیں،اس سے انتہاءپسندی کو فروغ ملتاہے ۔یہ تمام غیر قانونی ہے جس پر پابندی لگائی جارہی ہے ۔
ہائی کورٹ کے اس فیصلہ کے خلاف مسلمانوں میں شدید ناراضگی پائی جارہی ہے ۔جمعیتہ علماءہند کے جنرل سکریٹری مولانا محمود مدنی نے اتراکھنڈ ہائی کورٹ کے ذریعہ مذہبی اداروں کے فتوی پر عائد کردہ پابندی کو دستور کے بنیادی حقوق اور سپریم کورٹ کے فیصلے کے خلاف قراردیا ہے ۔ مولانا مدنی نے ملت ٹائمز کو ایک پریس ریلیز بھیج کرکہا کہ جمعیت علماءہند اس پر خاموش نہیں رہے گی اور اس کے خلاف سپریم کورٹ میں اپیل دائر کرے گی۔ انھوں نے کہا کہ مذہبی اداروں سے جاری کیے جانے والا فتوی ہر گز کسی کو مجبور نہیں کرتا بلکہ خود سائل کے جواب مےںشرعی حکم کی وضاحت ہوتی ہے، ایسے میں اسے کسی طرح انسانی وقار اور دستور کے خلاف نہیں کہا جاسکتا۔ مولانا مدنی نے اس بات پر حیرت کا اظہار کیا کہ فاضل جج نے صرف ایک دن کے اندر ایک وکیل کے ذریعہ پیش کردہ اخبار کے تراشے کی بنیاد پر فیصلہ کردیا اور صورت واقعہ کی خاطر خواہ تفتیش کی ضرورت تک محسوس نہیں کی ۔سچ تو یہ ہے کہ جس واقعہ کے مدنظر فیصلہ دیا گیا ہے اس واقعہ کا فتوی سے کوئی تعلق نہیں ہے۔ متعلقہ اخبار سے بھی ظاہر ہوتا ہے کہ وہ پنچایت کے لوگوں کا فیصلہ تھا جس میں کسی عالم یا مفتی کا نام تک بھی ذکر نہیں ہے ۔واضح ہو کہ ۰۳اگست کے امراجالا میں یہ خبر شائع ہوئی تھی کہ لشکر میں عصمت دری سے متاثرہ خاتون اور اس کے اہل خانہ کو مقامی پنچایت نے انصاف دلانے کے بجائے گاﺅں سے باہر نکلنے کا حکم دے دیا ۔
مولانا مدنی نے اس عزم کا اظہار کیا کہ جمعیتہ علماءہند مسلم اقلیت کے مذہبی حقوق و شناخت کے لیے ہر ممکن جد وجہد جاری رکھے گی اور اس مقدمہ کے سلسلے میں وکلاءسے مشورہ کرنے بعد عدالت عظمی میں پوری قوت سے اپنا موقف پیش کرے گی ۔۔

Post Top Ad

Your Ad Spot