Sada E Waqt

چیف ایڈیٹر۔۔۔۔ڈاکٹر شرف الدین اعظمی۔۔ ایڈیٹر۔۔۔۔۔۔ مولانا سراج ہاشمی۔

Breaking

متفرق

Saturday, May 11, 2019

معروف شاعر"مجید امجد "کے یوم وفات کے موقع پر۔

یوم وفات *- ١١؍مئی؍ ١٩٧٦*
*بنیادی طور پر نظم کے شاعر، جدید اردو ﺷﺎﻋﺮﯼ ﮐﮯ ﺑﻨﯿﺎﺩ ﺳﺎﺯﻭﮞ ﻣﯿﮟ ﻧﻤﺎﯾﺎﮞ اور معروف شاعر” مجید امجدؔ۔
. . . . . . . . . . . . . . . . . . . . . . . . . . . 
*ﻋﺒﺪﺍﻟﻤﺠﯿﺪ* ﺍﻭﺭ *ﺍﻣﺠﺪؔ* ﺗﺨﻠﺺ ﺗﮭﺎ۔ *۲۹؍ﺟﻮﻥ ۱۹۱۴ﺀ* ﮐﻮ  ﭘﯿﺪﺍ ﮨﻮﺋﮯ۔ ۱۹۳۴ﺀ ﻣﯿﮟ  ﺑﯽ ﺍﮮ ﮐﯿﺎ۔ ﮐﺴﺐ ﻣﻌﺎﺵ ﮐﺎ ﻣﺴﺌﻠﮧ ﭘﯿﺶ ﺁﯾﺎ ﺗﻮ ﺭﺍﺋﮯ ﺩﮨﻨﺪﮔﺎﻥ ﮐﯽ ﻓﮩﺮﺳﺘﯿﮟ ﺑﻨﺎﻧﮯ ﮐﺎ ﮐﺎﻡ ﻣﻼ۔ ﯾﮧ ﮐﺎﻡ ﻋﺎﺭﺿﯽ ﺗﮭﺎ ﺟﻮ ﭼﻨﺪ ﻣﮩﯿﻨﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﻣﮑﻤﻞ ﮨﻮﮔﯿﺎ۔ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﻭﮦ ﺍﯾﮏ ﺍﻧﺸﻮﺭﻧﺲ ﮐﻤﭙﻨﯽ ﮐﮯ ﺍﯾﺠﻨﭧ ﺑﻦ ﮔﺌﮯ، ﻟﯿﮑﻦ ﺍﺱ ﮐﺎ ﻡ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺟﺲ ﻣﺤﻨﺖ ﺍﻭﺭ ﻟﮕﻦ ﮐﯽ ﺿﺮﻭﺭﺕ ﺗﮭﯽ ﻭﮦ ﺍﻥ ﮐﮯ ﺑﺲ ﮐﯽ ﺑﺎﺕ ﻧﮧ ﺗﮭﯽ۔ ۱۹۳۵ﺀ ﻣﯿﮟ ﺭﺳﺎﻟﮧ *’’ ﻋﺮﻭﺝ ‘‘* ﺟﺎﺭﯼ ﮨﻮﺍ۔ ﯾﮧ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺍﯾﮉﯾﭩﺮ ﻣﻘﺮﺭ ﮨﻮﺋﮯ۔ اﻥ ﮐﯽ ﺍﺯﺩﻭﺍﺟﯽ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﺧﻮﺵ ﮔﻮﺍﺭ ﻧﮧ ﺗﮭﯽ۔ ﺍﻥ ﮐﯽ ﺑﯿﻮﯼ ﺍﻥ ﺳﮯ ﻃﻼﻕ ﻟﯿﮯ ﺑﻐﯿﺮ ﺍﻥ ﺳﮯ ﺍﻟﮓ ﺭﮨﻨﮯ ﻟﮕﯿﮟ۔ ﻣﺠﯿﺪ ﺍﻣﺠﺪ ﺍﮐﯿﻠﮯ ﺭﮨﺘﮯ ﺗﮭﮯ۔ ﺑﮍﯼ ﺗﻨﮓ ﺩﺳﺘﯽ ﺳﮯ ﮔﺰﺭ ﺍﻭﻗﺎﺕ ﮨﻮﺗﯽ ﺗﮭﯽ۔  ﻣﺠﯿﺪ ﺍﻣﺠﺪ ﮐﻮ ﺷﻌﺮﻭﺳﺨﻦ ﺳﮯ ﻓﻄﺮﯼ ﻟﮕﺎ ﺅ ﺗﮭﺎ۔ ﻏﺰﻝ ﮐﯽ ﻧﺴﺒﺖ ﻧﻈﻢ ﺳﮯ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﺷﻐﻒ ﺗﮭﺎ۔ ﻭﮦ ﺑﻨﯿﺎﺩﯼ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﻧﻈﻢ ﮐﮯ ﺷﺎﻋﺮ ﺗﮭﮯ۔ *ﻣﺠﯿﺪ ﺍﻣﺠﺪ، ۱۱؍ ﻣﺌﯽ ۱۹۷۴ﺀ* ﮐﻮ  ﺍﻧﺘﻘﺎﻝ ﮐﺮﮔﺌﮯ۔  ﺍﻥ ﮐﮯ ﺷﻌﺮﯼ ﻣﺠﻤﻮﻋﻮﮞ ﮐﮯ ﻧﺎﻡ ﯾﮧ ﮨﯿﮟ :
*’’ﺷﺐِ ﺭﻓﺘﮧ ‘‘ ، ’’ ﻣﯿﺮﮮ ﺧﺪﺍ ﻣﯿﺮﮮ ﺩﻝ ‘‘ ، ’’ ﺷﺐ ﺭﻓﺘﮧ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ‘‘* ۔ *’ ﮐﻠﯿﺎﺕِ ﻣﺠﯿﺪ ﺍﻣﺠﺪ ‘* ﺑﮭﯽ ﺷﺎﺋﻊ ﮨﻮﮔﺌﯽ ﮨﮯ۔ ﺍﻥ ﮐﯽ ﮐﻠﯿﺎﺕ *’’ ﻟﻮﺡِ ﺩﻝ ‘‘* ﮐﮯ ﻧﺎﻡ ﺳﮯ ﺑﮭﯽ ﭼﮭﭙﯽ ﮨﮯ۔
 
پیش کش:صداۓوقت/آن لاٸن 
نیوزسروس۔

. . . . . . . . . . . . . . . . . . . . . .
منتخب اشعار
۔__________
بڑے سلیقے سے دنیا نے میرے دل کو دیے
وہ گھاؤ جن میں تھا سچائیوں کا چرکا بھی
---
*ﻣﯿﮟ ﺭﻭﺯ ﺍﺩﮬﺮ ﺳﮯ ﮔﺰﺭﺗﺎ ﮨﻮﮞ ﮐﻮﻥ ﺩﯾﮑﮭﺘﺎ ﮨﮯ*
*ﻣﯿﮟ ﺟﺐ ﺍﺩﮬﺮ ﺳﮯ ﻧﮧ ﮔﺰﺭﻭﮞ ﮔﺎ ﮐﻮﻥ ﺩﯾﮑﮭﮯ ﮔﺎ*
---
ترے خیال کے پہلو سے اٹھ کے جب دیکھا
مہک رہا تھا زمانے میں چار سو ترا غم
---
*تری یاد میں جلسئہ تعزیت*
*تجھے بھول جانے کا آغاز تھا*
---
جب انجمنِ توجہ صد گفتگو میں ہو
میری طرف بھی اک نگہ کم سخن پڑے
---
*ﺑﮍﮬﯽ ﺟﻮ ﺣﺪ ﺳﮯ ﺗﻮ ﺳﺎﺭﮮ ﻃﻠﺴﻢ ﺗﻮﮌ ﮔﺌﯽ*
*ﻭﮦ ﺧﻮﺵ ﺩﻟﯽ ﺟﻮ ﺩﻟﻮﮞ ﮐﻮ ﺩﻟﻮﮞ ﺳﮯ ﺟﻮﮌ ﮔﺌﯽ*
---
چاندنی میں سایہ ہائے کاخ و کو میں گھومیے
پھر کسی کو چاہنے کی آرزو میں گھومیے
---
*سفر ﮐﯽ ﻣﻮﺝ ﻣﯿﮟ ﺗﮭﮯ ﻭﻗﺖ ﮐﮯ ﻏﺒﺎﺭ ﻣﯿﮟ ﺗﮭﮯ*
*ﻭﮦ ﻟﻮﮒ ﺟﻮ ﺍﺑﮭﯽ ﺍﺱ ﻗﺮﯾۂ ﺑﮩﺎﺭ ﻣﯿﮟ ﺗﮭﮯ*
---
سپردگی میں بھی اک رمز خود نگہ داری
وہ میرے دل سے مرے واسطے نہیں گزرے
---
*میں ایک پل کے رنج فراواں میں کھو گیا*
*مرجھا گئے زمانے مرے انتظار میں*
---
نگہ اٹھی تو زمانے کے سامنے ترا روپ
پلک جھکی تو مرے دل کے روبرو ترا غم
---
*کیا روپ دوستی کا کیا رنگ دشمنی کا*
*کوئی نہیں جہاں میں کوئی نہیں کسی کا*
---
یہ کیا طلسم ہے یہ کس کی یاسمیں بانہیں
چھڑک گئی ہیں جہاں در جہاں گلاب کے پھول
---
*ﺿﻤﯿﺮ ﺧﺎﮎ ﻣﯿﮟ ﺧﻔﺘﮧ ﮨﮯ ﻣﯿﺮﺍ ﺩﻝ ﺍﻣﺠﺪؔ*
*ﮐﮧ ﻧﯿﻨﺪ ﻣﺠﮫ ﮐﻮ ﻣﻠﯽ ﺧﻮﺍﺏ ﺭﻓﺘﮕﺎﮞ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ*
---
ﮨﻮﺍ ﮐﮯ ﺳﺎﯾﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﮨﺠﺮ ﺍﻭﺭ ﮨﺠﺮﺗﻮﮞ ﮐﮯ ﻭﮦ ﺧﻮﺍﺏ
ﻣﯿﮟ ﺍﭘﻨﮯ ﺩﻝ ﻣﯿﮟ ﻭﮦ ﺳﺐ ﻣﻨﺰﻟﯿﮟ ﺳﺠﺎ ﺭﮐﮭﺘﺎ
---
*ﺍﻣﺠﺪؔ ﺍﻥ ﺍﺷﮏ ﺑﺎﺭ ﺯﻣﺎﻧﻮﮞ ﮐﮯ ﻭﺍﺳﻄﮯ*
*ﺍﮎ ﺳﺎﻋﺖِ ﺑﮩﺎﺭ ﮐﺎ ﻧﺬﺭﺍﻧﮧ ﭼﺎﮨﺌﮯ*
---
ﺑﻨﮯ ﯾﮧ ﺯﮨﺮ ﮨﯽ ﻭﺟﮧ ﺷﻔﺎ ﺟﻮ ﺗﻮ ﭼﺎﮨﮯ
ﺧﺮﯾﺪ ﻟﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﯾﮧ ﻧﻘﻠﯽ ﺩﻭﺍ ﺟﻮ ﺗﻮ ﭼﺎﮨﮯ
---
*ﭼﮩﺮﮦ ﺍﺩﺍﺱ ﺍﺩﺍﺱ ﺗﮭﺎ ﻣﯿﻼ ﻟﺒﺎﺱ ﺗﮭﺎ*
*ﮐﯿﺎ ﺩﻥ ﺗﮭﮯ ﺟﺐ ﺧﯿﺎﻝ ﺗﻤﻨﺎ ﻟﺒﺎﺱ ﺗﮭﺎ*
---
*روش ﺭﻭﺵ ﭘﮧ ﮨﯿﮟ ﻧﮑﮩﺖ ﻓﺸﺎﮞ ﮔﻼﺏ ﮐﮯ ﭘﮭﻮﻝ*
*ﺣﺴﯿﮟ ﮔﻼﺏ ﮐﮯ ﭘﮭﻮﻝ ﺍﺭﻏﻮﺍﮞ ﮔﻼﺏ ﮐﮯ ﭘﮭﻮﻝ*
---
*ہر وقت فکر مرگِ غریبانہ چاہئے*
*صحت کا ایک پہلو مریضانہ چاہئے*
---
*ﮐﭩﯽ ﮨﮯ ﻋﻤﺮ ﺑﮩﺎﺭﻭﮞ ﮐﮯ ﺳﻮﮒ ﻣﯿﮟ ﺍﻣﺠﺪؔ*
*ﻣﺮﯼ ﻟﺤﺪ ﭘﮧ ﮐﮭﻠﯿﮟ ﺟﺎﻭﺩﺍﮞ ﮔﻼﺏ ﮐﮯ ﭘﮭﻮﻝ*
. . . .  

Post Top Ad

Your Ad Spot