Sada E Waqt

چیف ایڈیٹر۔۔۔۔ڈاکٹر شرف الدین اعظمی۔۔ ایڈیٹر۔۔۔۔۔۔ مولانا سراج ہاشمی۔

Breaking

متفرق

Tuesday, July 16, 2019

چاند گرہن۔۔اسلامی نقطہ نظر۔

صداٸے وقت مورخہ ١٧ جولاٸی ٢٠١٩۔۔وقت ایک بجکر بیس منٹ۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اس وقت چاند گرہن لگا ہوا ہے یہ گرہن 149 سال بعد ہوا ے اسکی خاص بات یہ ہے کہ یہ گرو پورنیما کے دن لگا ہے۔یہ چاند گرہن ہندوستان سمیت دنیا کے بیشتر ملکوں میں دیکھاٸی دے رہا ہے۔اس کی مدت ٣گھنٹہ ٥٧ منٹ ٥٦ سیکنڈ ہوگی۔جغرافیاٸی اعتبار سے چاند گرہن زمین چاند و سورج کی گردش کا ایک عمل ہے ۔اسلامی نقطہ نظر سے چاند و سورج گرہن پر مندرجہ ذیل تحریر پڑھیں۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بسم الله الرحمن الرحيم وبه نستعين
*چاندگہن یاسورج گہن لگےتوہم کیاکریں؟*
*ازقلم:عبیداللہ بن شفیق الرحمٰن اعظمی محمدی مہسلہ*
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
        چاندگہن یاسورج گہن یہ دونوں اللہ کی نشانیوں میں سے ایک عظیم نشانی ہیں، اس میں توحید باری تعالٰی کی اعلی دلیل ہے، سورج گرہن یا چاند گرہن یہ اللہ کی مشیئت اور اس کے ارادے سے رونما ہوتے ہیں، اس کا مقصد بندوں کو اپنی عظیم قدرت کا مشاہدہ کرانا ہے، تاکہ بندے اس کے عذاب اور وعید سے خوف کھائیں، معصیتوں اور برائیوں سے تائب ہو کر اللہ کی جناب میں رجوع ہوں، کیونکہ جب سورج گہن یا چاند گہن لگتا ہے اس وقت عجیب و غریب فضا قائم ہوجاتی ہے، دل میں گھبراہٹ اور خوف پیدا ہو جاتا ہے، حتی کہ سورج گہن کے وقت پرندے جلد گھونسلے کی طرف لوٹ آتے ہیں، ایسے وقت میں ہماری کیا ذمہ داری بنتی ہے، آئیے ہم شرعی نقطہ نظر سے سمجھانے کی کوشش کرتے ہیں-
سورج گہن یا چاند گہن کے وقت ہمیں جن اعمال کو انجام دینا چاہیے وہ اعمال درج ذیل ہیں-
اول)دورکعت نمازاداکرنا: چاند گہن یا سورج گہن لگتے ہہی ہمیں مسجد کی طرف جلد بھاگنا چاہیے، اور وہاں امام کی اقتداء میں چار رکوع اور چار سجدے کے ساتھ نیز طویل قرات اور طویل قیام کے ساتھ دو رکعت نماز ادا کرنا چاہیے(صحيح بخاري:1046)
      اس نماز کا حکم بعض کے نزدیک واجب اور بعض کے نزدیک سنت موکدہ ہے، المہم ہماری یہ کوشش ہونی چاہیے کہ ہم ایسے موقع پر باجماعت نماز خسوف یا کسوف کی ادائیگی کا اہتمام کریں، بڑے افسوس کی بات ہے کہ آج یہ سنت ہم سے مٹ رہی ہے، لہذا ضرورت ہے کہ اسے عملی طور پر زندہ کیا جائے-
دوم) غلام آزاد کرنا:حضرت اسماء بنت ابی بکر صدیق رضی اللہ عنہا کہتی ہیں کہ سورج گرہن لگنے پر نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے غلام آزاد کرنے کا حکم دیا ہے(صحيح بخاری:1054)
سوم) ذکرواذکار کرنا:
چہارم)دعا کرنا:
پنجم)توبہ واستغفار کرنا:حضرت ابو موسی اشعری رضی اللہ عنہ کہتے ہیں"خَسَفَتِ الشَّمْسُ فَقَامَ النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فَزِعًا يَخْشَى أَنْ تَكُونَ السَّاعَةُ ، فَأَتَى الْمَسْجِدَ فَصَلَّى بِأَطْوَلِ قِيَامٍ وَرُكُوعٍ وَسُجُودٍ رَأَيْتُهُ قَطُّ يَفْعَلُهُ وَقَالَ هَذِهِ الْآيَاتُ الَّتِي يُرْسِلُ اللَّهُ لَا تَكُونُ لِمَوْتِ أَحَدٍ وَلَا لِحَيَاتِهِ ، وَلَكِنْ يُخَوِّفُ اللَّهُ بِهِ عِبَادَهُ ، فَإِذَا رَأَيْتُمْ شَيْئًا مِنْ ذَلِكَ فَافْزَعُوا إِلَى ذِكْرِهِ وَدُعَائِهِ وَاسْتِغْفَارِهِ"(صحيح بخاری:1059)
سورج گرہن لگا، تو اللہ کے نبی صلی اللہ علیہ وسلم سخت گھبراتے ہوئے اٹھے، ڈر رہے تھے کہ کہیں قیامت قائم نہ ہو جائے، آپ مسجد تشریف لائے، لمبے قیام، لمبے رکوع اور لمبے سجود کے ساتھ (دو رکعت)نماز پڑھائی، راوی حدیث بیان کرتے ہیں کہ ایسی نماز میں نے کبھی نہیں دیکھی تھی، آپ نے نصیحت کرتے ہوئے فرمایا یہ (چاند اورسورج) نشانیاں ہیں جن کو اللہ تعالٰی بھیجتا ہے یہ کسی کے مرنے یا پیدا ہونے سے رونما نہیں ہوتے ہیں، اور لیکن اللہ تعالٰی اس کے ذریعے بندوں کو خوف دلانا چاہتا ہے، پس جب تم اس میں سے کچھ دیکھو تو اللہ کے ذکر، دعا اور استغفار کی طرف جلدی کرو-

       بخاری شریف کی اس روایت سے یہ بات سمجھ میں آئی کہ سورج یا چاند گرہن کے وقت دعا، ذکرواذکار اور توبہ و استغفار کی طرف جلد بھاگنا چاہیے-
       خلاصہ کلام یہ ہے کہ سورج گرہن اور چاند گرہن یہ اللہ کی عظیم نشانیاں ہیں، اس میں اللہ کی قدرت کاملہ اور توحید کی اعلی دلیل مضمر ہے، دیکھیے اللہ نے آج ابھی چاند کی روشنی کو سلب کر لیا، اگر اللہ اس روشنی کو واپس نہ لائے تو پوری دنیا کے لوگ چاند کی روشنی کو کبھی واپس نہیں کر سکتے ہیں، بس ضرورت اس بات کی ہے کہ ایسے موقع پر ہم نماز کا اہتمام کریں، صدقہ و خیرات کریں، رو رو کر دعا کریں، خوب توبہ و استغفار کریں، دعاہےرب العالمین سے کہ ہم سبھوں کو دینی تعلیمات پر کماحقہ عمل پیرا ہونے کی توفیق عطا فرمائے آمین-
        *ابوعبداللہ اعظمی محمدی مہسلہ*

Post Top Ad

Your Ad Spot