Sada E Waqt

چیف ایڈیٹر۔۔۔۔ڈاکٹر شرف الدین اعظمی۔۔ ایڈیٹر۔۔۔۔۔۔ مولانا سراج ہاشمی۔

Breaking

متفرق

Sunday, September 8, 2019

کشمیر کے حالات اعجاز کشمیری کی زبانی۔

از/اعجاز کشمیری/صداٸے وقت۔
=========================
السلام و علیکم ....
میں ایک ہفتہ کے مختصر سفر کے بعد کشمیر سے واپس آ گیا ہوں میں بہت پریشان تھا اپنے ماں باپ کو لیکر اپنے والدین سے ملاقات کرنے گیا تھا۔ کیونکہ ہمارے پاس گھر میں لینڈ لائن نہیں ہے۔ الحمد للہ میرے بیشتر قریبی رشتے داروں سے ملاقات ہوئی۔ ایک ہفتہ میں جن مقامات کا میں نے دورہ کیا ان میں بودھم ، راولپورہ ، چھنی پوڑا ، نٹی پورہ ، نوگام ، خانیار ، بابا ڈیمب ، خانیکاہی محلہ ، زیندار محلہ ، بتوملو ، ٹینگ پورہ ، پیریم پورہ ، قمرواری ، ڈاکٹر علیجان روڈ ، نارواڑہ ، سکیدالفر ، صف نگر ، کرن نگر ، شامل ہیں۔ باربرشاہ ، جہانگیر چوک ، ریذیڈنسی روڈ ، دلگیٹ ، سوناور ، پنت چوک ، نشاط اور شالیمار ایریا ، اسکاؤسٹ ، فورشور روڈ ، زکورا ، الٰہی باغ اونبیون وغیرہ۔

پبلک ٹرانسپورٹ سڑک سے دور ہے۔ صرف ذاتی گاڑیاں ہی چل رہی ہیں۔ لفٹ طلب کرنا ان لوگوں کے لئے سفر کا بنیادی ذریعہ ہے جن کے پاس اپنی ٹرانسپورٹ نہیں ہے۔ لوگ عام طور پر صبح یا دیر سے شام کا سفر کرتے ہیں اور دن کے وقت سے گریز کرتے ہیں۔ دن کے وقت ہلکی ٹریفک اور سڑکیں ویران نظر آتی ہیں۔

دوکانیں صرف صبح دس بجے تک کھلی رہتی ہیں اور بڈگام جیسے دیہات جو کہ سری نگر سے تقریبا 20تا 25 کلومیٹر دور ہیں ان میں بھی دن میں پوری طرح بند رہتی ہیں۔ یہ بھارتی حکومت کے خلاف احتجاج کا ایک طریقہ ہے اور مکمل رضاکارانہ طور پر ہے۔ بہت سے لوگوں نے شکایت کی کہ پولیس مقامی لوگوں کو دن بھر دکانیں کھولنے پر مجبور کررہی ہے۔ پولیس نے دکانداروں کو مجبور کیا کہ وہ یا تو دکان نہ کھولیں یا پھر سارا دن دوکانیں کھولی نہ جائیں۔ لیکن مقامی لوگوں نے انکار کیا ہے اور انہوں نے دکانیں نہیں کھولیں اور روزانہ 10 بجے تک بند رکھیں۔ صرف بنیادی ضرورت کے لئے دوکانیں کھلی ہیں اور باقی صبح کے اوقات میں بھی زیادہ تر بند رہتی ہیں۔ میڈیکل شاپس زیادہ تر کھلی رہتی ہیں ...

اسپتال ، بینکوں ، سرکاری دفاتر ، عدالتوں وغیرہ میں ہلکی سی حاضری ہے۔ لال چوک میں زیادہ تر دفاتر اور بینک کھلے ہیں جبکہ دکانیں مکمل طور پر بند ہیں۔

ہر جگہ سی آر پی ایف اور پولیس چوکیاں۔ صرف ایک سڑک اور دوسری سڑک پر راستے میں ٹریفک کی اجازت ہے۔ مجھے بتایا گیا تھا کہ یہ بیرونی دنیا کو ٹریفک کی بہتات دکھانے کے لئے کیا گیا ہے۔

کچھ اسکول جیسے ڈی پی ایس نے طلباء کو پینڈرائیو کے ساتھ آنے کو کہا اور انہیں ویڈیو اسباق اور سیلیبس دیئے گئے تاکہ بچے گھر پر پڑھ سکیں..دوسرے اسکول مکمل طور پر بند ہیں۔

جے وی سی کے باہر کار پارک کرنے کے دوران ، ایک سی آر پی ایف شخص میری طرف دوڑتا ہوا آیا اور مین روڈ پر قائم فون بوتھ کا استعمال کرنے کی درخواست کی تاکہ میں کشمیر کے باہر اپنے پیاروں کو فون کروں۔ ایک لمحے کے لئے ، میں نے اپنے پیاروں کو فون کرنے کا سوچا لیکن الحمد اللہ میں نے انکار کردیا اس کے بعد مجھے معلوم ہوا کہ ان کے پاس ایک وین ہے جس میں ان کے پاس کیمرہ ہے اور پھر وہ لوگوں کو فون بوتھ کا استعمال کرتے ہوئے فلم دیتے ہیں اور بیرونی دنیا کو دکھاتے ہیں کہ فورسز مقامی لوگوں کو کال کرنے میں مدد فراہم کررہی ہیں۔

ڈاون ٹاون میں بڑی پابندیاں ہیں۔ روزانہ پتھراؤ ہوتا ہے پوسٹ فورسز شام کو روانہ ہوجاتی ہیں اور روزانہ آنسو گیس کی شیلنگ ہوتی ہے۔

دودھ ، کھانا ، چکن ، مٹن اور دیگر ضروری اشیا کی کمی نہیں۔

لوگ تناؤ میں اور ناراض ہیں لیکن پختہ اور پراعتماد ہیں کہ جیت جلد ہی آئے گی۔

میں یہ بات اس لئے شیئر کررہا ہوں کہ جس نے بھی اپنے پیاروں سے بات نہیں کی ہے اور وہ سفر نہیں کر پا رہا ہے وہ جانتا ہے کہ لوگوں کو بنیادی ضروری سامان مل رہا ہے اور پریشانی کی کوئی بات نہیں ... کسی بھی سوال کے لیے برائے مہربانی رابطہ کریں ajaztam@hotmail.com

Post Top Ad

Your Ad Spot