Sada E Waqt

چیف ایڈیٹر۔۔۔۔ڈاکٹر شرف الدین اعظمی۔۔ ایڈیٹر۔۔۔۔۔۔ مولانا سراج ہاشمی۔

Breaking

متفرق

Friday, December 27, 2019

مرزا غالب کی 222 ویں سالگرہ مناٸی گٸی۔

جون پور ۔۔اتر پردیش۔(صداٸے وقت /نماٸندہ) 
=============================
ضلع کے سراواں واقع لال بہادر اسمارک پر ہندوستان سوشلسٹ ریپبلکن آرمی اور لکشمی بائی بریگیڈ کے کارکنوں نے مشہور شاعر مرزا اسداللہ خان 'غالب' کی 222 ویں سالگرہ منایا گیا۔
اس موقع پر کارکنوں نے موم بتیاں اور اگر بتی کی لاٹھیاں روشن کیں اور دو منٹ کی خاموشی اختیار کرتے ہوئے شیر اعظم مرزا غالب کو خراج تحسین پیش کیا۔ لکشمی بائی بریگیڈ کی صدر منجیت کور نے شہدا کی یادگار میں موجود لوگوں سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ملک کے مشہور شاعر مرزا اسداللہ خان "غالب27 دسمبر 1797 کو اتر پردیش کے شہر آگرہ میں پیدا ہوئے تھے۔ غالب نے اپنی زندگی کا ایک لمبا سفر آگرہ کے شہر سیتارام بازار کی گلی قاسم جان میں واقع حویلی میں گزارا۔انہوں نے بتایا کہ مرزا غالب نے گیارہ سال کی عمر میں اردو اور فارسی میں نثر اور شاعری لکھنا شروع کی تھی۔ اس حویلی کو ایک میوزیم کی شکل دی گئی ہے۔ جہاں غالب کا کلام بھی نظر آتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ لوگ اردو غالب کے اردو شاعر ادیب کے شاعر مرزا غالب کو شوق سے مرزا نوشہ کہتے تھے۔ دہلی میں رہتے ہوئے، مسٹر غالب نے 1857 کے انقلاب کودیکھا، مغل بادشاہ بہادر شاہ ظفر کا زوال، انگریزوں کا عروج اور ملک کے عوام پر ان کے ظلم و ستم کو دیکھا تھا۔ اس موقع پر ڈاکٹر دھرم سنگھ، منیجر پانڈے، انیرودھ سنگھ، منجیت کور سمیت تمام لوگ موجود رہے۔

Post Top Ad

Your Ad Spot