Sada E Waqt

چیف ایڈیٹر۔۔۔۔ڈاکٹر شرف الدین اعظمی۔۔ ایڈیٹر۔۔۔۔۔۔ مولانا سراج ہاشمی۔

Breaking

متفرق

Monday, January 20, 2020

ایک تخلیق آپ کی موقر بصارتوں کے حوالے۔۔۔۔۔”غزل“

ازبان/سرفراز بزمی / صداٸے وقت۔
==============================
                      غزل 

ہوا ہے  ،  دشت ہے  ،  شب ہے ، مہیب سائے ہیں 
یہ کون  لوگ ہیں   ؟  اب بھی  دئے  جلائے ہیں 

تنی    پڑی   ہیں   طنابیں   تمام   خیموں   کی
ہوا     نے   جبر     کے     انداز     آزمائے     ہیں 

حیات    ذوق    سفر   ،   موت    انتہائے   سفر 
سفر  سفر  ہے  ،  مسافر  ہیں  سب  پراۓ   ہیں

ابھی   تو   ابر   گریزاں   سے   آس    باقی   ہے 
ابھی  تو  دشت  پہ کچھ بدلیوں کے سائے ہیں 

زباں   پہ  نام   خدا  ،   دل  اسیر لات  و منات
خرد   نے   خوب   نئے   راستے   سجھائے  ہیں 

ہمارے  گھر  کے  چراغوں  کا حوصلہ تو دیکھ 
ہوا  کی    زد  پہ   رہے پھر  بھی مسکرائے ہیں 

زمانے  دیکھ  !  اکیلا  ہی   جا  رہا   ہوں  میں
وہاں   جہاں  سے  مسافر  کبھی  نہ  آئے  ہیں  

سمندروں   میں   سفینے   چلانے   والے   لوگ 
قدم  رکے  تو  زمیں  پر  بھی  لڑکھڑائے   ہیں 

افق   پہ   خون   کی سرخی   بکھیرتا سورج 
کلی   بھی  سرخ  تو  گل  بھی لہو نہائے ہیں 

بجھے بجھے ہیں  پرانی  حویلیوں کے چراغ
نئے     مکان     نئے   نور    میں   نہائے   ہیں 

حریف   سنگ    ہے    بزمی      ہمارا     آئینہ 
خوشا ! کہ چشم حریفاں  میں ہم سمائے ہیں 
سرفراز بزمی 
سوائ مادھوپور راجستھان 
9772296970

Post Top Ad

Your Ad Spot