Sada E Waqt

چیف ایڈیٹر۔۔۔۔ڈاکٹر شرف الدین اعظمی۔۔ ایڈیٹر۔۔۔۔۔۔ مولانا سراج ہاشمی۔

Breaking

متفرق

Friday, February 14, 2020

دیوبند احتجاج کی عظیم رات ۔۔۔!!!

تحریر / انسان بجنوری /صداٸے وقت 
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
        برسوں سے ہند میں مسلم کشی کے واقعات نفرت کی سیاست اور بابری مسجد و کشمیر پر یکطرفہ فیصلہ آنے کے بعد ہند کی مسلم امہ کا جو سکوت ٹوٹا ہے جس سے ایک نئی ہاہاکار اٹھی اور فلک شگاف ہنگامے پر ابھرتی ہوئی یہ صدائے احتجاج تیز سے تیز تر ہوتی گئی  ۔۔۔۔۔۔۔ ہند کی فرعونی حکومت کے جبر و طنطنے اور فاشزم کے خلاف ہونے والے ملک گیر احتجاجات میں روز افزوں نیا جوش و خروش اور نیا عزم دیکھنے کو مل رہا ہے۔۔۔۔نیا جذبہ،  نئی امنگ اور نئے ولولوں سے ہندوستان کا خطہ خطہ منور ہے ۔۔۔۔ملکی سطح پر سیاسی فضا رخ پلٹ چکی ہے ۔۔۔۔اب ہندوستان کی سرزمین ظلم و وحشت کا نہیں ؛ بل کہ جرآت و شجاعت کا استعارہ بن چکی ہے۔۔۔ ایسے میں ایک حریت آموز صدا مسلسل دیوبند کی مقدس سرزمین سے اٹھ رہی ہے ۔۔۔۔ دیوبند جو اصحاب عزیمت کا مسکن اور حق پرست مجاہدین کی چھاونی ہے ۔۔۔ملت اسلامیہ کے ماتھے کا مقدس تلک اور بطن گیتی پر اہل دل اور اہل عزم و وفا کی غیرت کا نشاں ، شاہین صفت عورتیں۔۔۔جو کئی ہفتوں سے عیدگاہ میں ڈیرا ڈال کر یہ پیغام دی رہی ہے۔۔
سرفروشی کی تمنا اب ہمارے دل میں ہے 
دیکھنا ہے زور کتنا بازوئے قاتل میں ہے۔۔!

شروع احتجاج میں جامعہ کے اندر دہشت گرد پولیس کا جم کر مقابلہ کرنے والی اور ترکی بہ ترکی جواب دے کر مسلم امہ کا سر فخر سے بلند کرنے والی۔۔۔۔اور پوری مسلم کمیونٹی کی توجہ کا مرکز  جامعہ کی دونوں طالبہ آج احتجاج میں اپنے عالمگیر نغمات اور تکبیر مسلسل کے نعروں سے عزم و استقلال اور مجاہدانہ سرفروشی کے ساتھ حکومت ہند کو للکار رہی ہے۔۔۔!!
اور مکمل جرآت کے ساتھ اپنے بلند عزائم سے دلوں کو گرما رہی ہے ۔۔۔۔جس میں ملت اسلامیہ کے درخشندہ ستارہ اور علمی لیاقت کی بنا پر امتیازی مقام رکھنے والا نڈر نوجوان۔۔ مظلوم قیدی باصلاحیت طالب علم "شرجیل امام" کے حق میں نعرہ زنی کی گئی اور شدت کے ساتھ اس کی رہائی کا مطالبہ کیا گیا۔۔۔۔۔کہ جن کی تقریر سے اہل عزیمت کی خوشبو آرہی تھی ۔۔یہ جرآت و پامردی کی وہ پرشوق آواز تھی کہ جس کا سرچشمہ اسلام کی روحانی طاقت سے ملتا ہے اور جس میں ایمان و یقین سے سرشار روحیں اپنی منزل کو چھولینے کے لیے تڑپ رہی تھی۔۔۔۔ان کی تقریر میں مدہوش ہوکر ہم بھول گئے تھے کہ ہم کس ہولناک معرکہء کار زار میں محصور ہیں ۔۔۔۔جہاں ہر طرف جرآت و پامردی اور سرگرمی و جفا کوشی کا راج تھا اور فلک شگاف نعروں سے خون کی طغیانی موج زن تھی۔۔۔۔۔یہ آواز عید گاہ میدان کے خونچکاں اور تاریخ ساز ذروں سے بلند ہوکر دارالعلوم کی بلند و بالا عمارتوں اور فلگ شگاف چوٹیوں کو چھو رہی ہے۔۔کہ جہاں سے تحریک خلافت، تحریک ترک موالات تحریک ریشمی رومال کا ایک عالمگیر غلغلہ بلند ہو اتھا ۔۔دیوبند اس عہد و عمل کا نام ہے کہ جس کا سہرا بدر و احد کے میدانوں تک  پہونچتا ہے ۔۔۔ 
سلام اے غیرت مند!
سلام اے جرآت مند! 
سلام اے حریت پسند!!
ٹوٹتی ہیں رات کی نبضیں اذاں کی ضرب سے! 

(انس بجنوری)
https://t.me/SunehriTehriren

Post Top Ad

Your Ad Spot