Sada E Waqt

چیف ایڈیٹر۔۔۔۔ڈاکٹر شرف الدین اعظمی۔۔ ایڈیٹر۔۔۔۔۔۔ مولانا سراج ہاشمی۔

Breaking

متفرق

Tuesday, February 4, 2020

جامعہ ملیہ اسلامیہ احتجاج۔( گراونڈ رپورٹ ).

از/ڈاکٹر شرف الدین اعظمی /صداٸے وقت /٣ فروری ٢٠٢٠۔
=============================
نٸی دہلی۔۔اس وقت ہندوستان کیا بلکہ یوں کہا جاٸے کی جامعہ ملیہ اسلامیہ اور شاہین باغ کا نام پوری دنیا میں سی اے اے ، این آرسی اور بھارتیہ جنتا پارٹی حکومت کی پالیسیوں کے خلاف احتجاج کے لٸیے مشہور ہے۔
جامعہ ملیہ اسلامیہ میں احتجاج جاری ہے طلبہ کے علاوہ بڑی تعداد میں عوام اور خواتین موجود رہتی ہیں ۔یہ وہی جامعہ ملیہ ہے جہاں پر پولیس کی بر بریت منظر عام پر آچکی ہے۔پولیس کے علاوہ شر پسند دہشت گرد ہندو تنظیموں کی نگاہ میں بھی یہ احتجاج کھٹکتا ہے نتیجتاً ایک شر پسند نے پولیس کی موجودگی یا یوں کہیے کہ پولیس کی سرپرستی میں گولی چلاٸی اور ایک طالب علم زخمی ہوگیا ۔۔١٥ دسمبر کی و خوفناک رات جب پولیس بغیر اجازت یونیورسٹی کیمپس میں داخل ہوتی ہے اور شر پسندی کا وہ ننگا ناچ کرتی ہے کہ انسانیت شرم سار ہوجاتی ہے۔نظم و نسق اور قانون کی دھجیاں اڑتی ہیں طلبہ کو ہاسٹل اور لاٸبریر میں گھس کر پیٹا جاتا ہے۔۔۔اسی دن تشدد کا شکار ایک ریسرچ کا  طالب علم محمد رضی اس وقت سے ہی مستقل دن رات اپنے جسم پر این آرسی اور سی اے اے کی مخالفت میں لکھی ہوٸی عبارت لپیٹے گھومتا رہتا ہے۔۔کیا جنون ہے ؟ کیا جذبہ ہے ؟۔پولیس تشدد کا شکار یہ طالب علم خوفزدہ ہوکر اپنے وطن بہار بھی جاسکتا تھا مگر اس نے ایسا نہیں کیا ۔۔نٸیے لوگوں کے لٸیے وہ کشش کا مرکز بنا ہوا ہے اور دن میں اگر ١٠٠ بار بھی اس سے ان واقعات کے متعلق پوچھا جاٸے تو بڑی ہی شاٸستگی سے پوری تفصیل بتاتا ہے اور لوگوں کے سوالوں کا جواب بھی دیتا ہے۔
یہاں پر ہمیشہ لوگ آتے جاتے رہتے ہیں ۔تقریروں کا سلسلہ جاری رہتا ہے۔ابھی کل یعنی ٢ فروری کا واقعہ ہے کہ رات کو ساڑھے گیارہ بجے ایک شر پسند نے احتجاج کے مقام کے قریب ہی اسکوٹی سے آکر فاٸرنگ کرکے دہشت پھیلانے کی کوشش کی اور بتایا جاتا ہے کہ ایک بولیرو گاڑی بھی وہاں پر موجود کچھ لوگوں کی کچلنے کی کوشش کی مگر کسی کو کوٸی نقصان نہیں ہوا۔۔
رات کے وقت یہاں پر عوام کا مجمع بہت زیادہ ہوجاتا ہے ۔سکھ سماج اور دلت سماج کے کٸی لوگ موجود رہتیے ہیں ملک کی تمام ریاستوں سے ڈیلیگیٹ آتے رہتے ہیں اور ان احتجاج کر رہے طلبہ کی تاٸید میں اپنی باتیں رکھتے ہیں۔
دہلی پولیس اور مرکزی حکومت نے ہر ممکن کوشش کی کہ ان لوگوں کو دہشتزدہ کرکے یہاں سے بھگا  دیا جاٸے ۔یونیورسٹی کو بند بھی کردیا گیا ۔مگر یہ مجاہد اپنی جگہ ڈٹے رہے۔طلبہ کے ساتھ یہاں کی طالبات بھی برابر کی شریک رہیں۔احتجاج گاہ کے قریب جگہ جگہ سی اے اے کے خلاف پینٹنگ بنی ہوٸی ہیں اور نعرے لکھے ہوٸے ہیں۔
طلبہ اور احتجاجی عوام کے عزاٸم بلند ہیں ۔ان کی تاٸید میں باہر سے آنیوالے لوگوں نے ان کے حوصلوں کو اور بلند کر رکھا ہے۔
دہلی میں اس وقت الیکشن کا دور ہے ٨ فروری کو ووٹنگ ہوگی۔بی جے پی اس وقت شاہین باغ اور جامعہ کے احتجاج کو اپنی انتخابی مہم کا ایک حصہ بنا ٸی ہوٸی ہے۔۔دہلی میں اس وقت عام آدمی پارٹی کی سرکار ہے ۔اروند کیجری وال وزیر اعلیٰ ہیں مگر دہلی پولیس کا کنٹرول ان کے ہاتھ میں نہیں ہے وہ مرکز کے ہاتھ میں ہے۔۔۔اس بات کا خدشہ ظاہر کیا جارہا ہے کہ ٨ فروری کے بعد حالات میں تبدیلی ہوگی۔۔پولیس ایکشن بھی ہوسکتا ہے طلبہ و احتجاجی گرفتار بھی ہوسکتے ہیں ۔ہندوتوادی غنڈوں کے ذریعہ پولیس کی سر پرستی میں حملے بھی کراٸے جا سکتے ہیں۔۔لہذا نہ صرف دہلی کے لوگوں کو بلکہ پورے ملک کے عوام کو ہر جگہ بڑے شہروں سے لیکر چھوٹے قصبوں اور گلی محلوں میں بھی احتجاج کرنا پڑے گا۔۔یہاں یہ بات قابل غور ہے کہ اگر یہ احتجاج کسی بھی طرح سے مرکزی حکومت کچلنے میں کامیاب ہوگٸ تو جہاں نوجوانوں کے حوصلے پست ہوں گے ان کی دو ماہ کی محنت راٸیگاں جاٸے گی ۔احتجاج میں شریک اب تک جانی و مالی قربانیاں دینے والوں کی دلشکنی کیساتھ ہی مسلمانوں کو ایک اذیتناک و خوفناک زندگی گزارنی پڑے گی۔
اس لٸیے ملک کے دیگر حصوں میں بھی اسی طرح کے احتجاج کی ضرورت ہے۔اور دوسرے لوگوں سے گزارش ہے کہ ایکبار جامعہ اور شاہین باغ کا احتجاج ضرور دیکھ لیں ۔۔اس سے حوصلہ و ہمت بڑھے گی اور طریقہ کار بھی معلوم ہوگا۔

Post Top Ad

Your Ad Spot