Sada E Waqt

چیف ایڈیٹر۔۔۔۔ڈاکٹر شرف الدین اعظمی۔۔ ایڈیٹر۔۔۔۔۔۔ مولانا سراج ہاشمی۔

Breaking

متفرق

Friday, February 14, 2020

سی اے اے تشدد : یوگی حکومت کی ’وصولی‘ پر الٰہ آباد ہائی کورٹ نے لگائی روک !

یو پی میں سی اے اے مخالف مظاہروں کے دوران ہوئے تشدد میں عوامی ملکیت کو کافی نقصان پہنچا تھا۔ اس نقصان کی بھرپائی کے لیے یوگی حکومت نے عوام سے وصولی شروع کر دی تھی جس پر عدالت نے روک لگا دی۔

الٰہ آباد ۔اتر پردیش /صداٸے وقت/ 14 فروری 2020.
==============================
پریاگ راج یعنی الٰہ آباد میں 19 دسمبر کے بعد شہریت ترمیمی قانون کے خلاف کئی مظاہروں میں تشدد برپا ہوا تھا جس میں عوامی ملکیت کو کافی نقصان پہنچا تھا۔ اس سلسلے میں یوگی حکومت نے مبینہ طور پر تشدد پھیلانے والے لوگوں سے وصولی کر کے نقصان کی بھرپائی کرنے کا فیصلہ کیا تھا اور انھیں نوٹس بھیجنے کا سلسلہ بھی شروع کر دیا تھا۔ اسی کے تحت کانپور کے ایک باشندہ محمد فیضان کو بھی نوٹس ملا تھا لیکن اس نے اعتراض ظاہر کیا۔ محمد فیضان نے اس نوٹس کے خلاف الٰہ آباد ہائی کورٹ میں عرضی داخل کر دی جس پر سماعت کرتے ہوئے اس طرح کی وصولی پر عدالت نے فی الحال روک لگا دی۔
عرضی دہندہ محمد فیضان کو عبوری راحت دیتے ہوئے جسٹس پنکج نقوی اور جسٹس سوربھ شیام کی بنچ نے ایڈیشنل ضلع مجسٹریٹ کے ذریعہ جاری نوٹس پر یہ کہتے ہوئے روک لگا دی کہ سپریم کورٹ پہلے سے ہی اس طرح کی ہدایات کی جانچ کر رہی ہے، اس لیے فی الحال وصولی پر روک لگائی جائے۔
محمد فیضان کے وکیل نے وصولی نوٹس کو عدالت میں چیلنج کیے جانے سے متعلق میڈیا کو بتایا کہ وصولی نوٹس ایک اے ڈی ایم کے ذریعہ جاری کیا گیا تھا جب کہ سپریم کورٹ کی جانب سے یہ کہا گیا ہے کہ اس طرح کا حکم صرف ہائی کورٹ جج یا سبکدوش سپریم کورٹ جج یا پھر سبکدوش ضلع جج کے ذریعہ دیا جا سکتا ہے۔

قابل ذکر ہے کہ ریاست بھر میں مظاہرین کے خلاف جاری وصولی نوٹس زیادہ تر مقامی انتظامیہ افسران کے ذریعہ جاری کیے گئے ہیں۔ بنچ نے ریاستی حکومت کو ایک مہینے کے اندر اس تعلق سے جوابی حلف نامہ داخل کرنے کی ہدایت دی تھی۔ عدالت نے اس معاملے کی اگلی سماعت کے لیے مناسب بنچ کے سامنے 20 اپریل 2020 سے شروع ہو رہے ہفتہ میں فہرست بند کرنے کی ہدایت دی تھی۔ یہ سپریم کورٹ کے سامنے کارروائی کے نتیجہ کے ماتحت ہوگا۔

Post Top Ad

Your Ad Spot