Sada E Waqt

چیف ایڈیٹر۔۔۔۔ڈاکٹر شرف الدین اعظمی۔۔ ایڈیٹر۔۔۔۔۔۔ مولانا سراج ہاشمی۔

Breaking

متفرق

Thursday, March 26, 2020

ڈبلیو ایچ او نے لاک ڈاؤن والے ممالک کو کیاانتباہ ،اس سے نہیں ختم ہوگا کورونا کا خطرہ .

ئی دہلی:/صداٸے وقت /ذراٸع /26مارچ 2020۔
==============================
 کورونا وائرس اسوقت  تیزی سے پوری دنیا میں اپنی تباہی پھیلارہا ہے اور دنیا بھر میں اسکے انفیکشن کی روک تھام کے لئے مختلف طریقے اختیار کئے جارہے ہیں۔ بیشتر ممالک میں ، ریاستوں اور  شہروں میں لاک ڈاؤن کے ذریعہ کورونا کے انفیکشن پر قابو پانے کی  کوشش کررہے ہیں ، لیکن عالمی ادارہ صحت (ڈبلیو ایچ او) کے ڈائریکٹر جنرل ٹیڈروس ادھانوم گیبریسیس نے بدھ کے روز لاک ڈاؤن کے بارے میں دنیا کے تمام ممالک کو متنبہ کیا ہے۔ انہوں نے بتایا کہ کورونا وائرس (COVID-19) کا مقابلہ کرنے کے لئے بہت سے ممالک کے ذریعہ لاک ڈاون لاگو کیا جارہا ہے جو دنیا سے وائرس کے خاتمے کے لئے کافی نہیں ہوگا۔روزانہ کی اپ ڈیٹ میں گیبریسیس نے کہا ، "بہت سے ممالک نے کورونا وائرس کے انفیکشن کے پھیلاؤ کو کم کرنے کے لئے 'لاک ڈاؤن' کا طریقہ اپنایا ہے لیکن ان کے مطابق ، اس قدم  سے وبا کا خاتمہ نہیں ہوگا۔ ہم تمام ممالک سے مطالبہ کرتے ہیں کہ  اس وقت  کوروناوائرس پر حملہ کرنے کے لئے اور طریقے  استعمال کریں۔ اب تک ۔ابھی تک آپ نے اس موقع کی  دوسری ونڈو بنائی ہے ۔
انہوں نے کہا ، "لوگوں کو گھر پر رہنے اور ان کی نقل و حرکت کو روکنے کے لئے کہا جانے سے وقت حاصل ہوگا ، جس سے صحت کے نظام پر دباؤ کم ہوگا ... لیکن اپنے آپ میں یہ وبا ختم نہیں ہوگی ۔گیبریسیس  نے کہا ، "ہم ان تمام ممالک سے کہنا چاہتے ہیں جنھوں نے نام نہاد لاک ڈاؤن طریقہ اپنایا ہے وہ اس وقت کو اس وائرس سے بچنے کےلئے استعمال کریں ۔ آپ نے اس موقع کی ایک دوسری کھڑکی تشکیل دے دی ہے ، سوال یہ ہے کہ اپ اسکا کس طرح سے استعمال کریں گے؟ "
ڈبلیو ایچ او کے سربراہ نے کہا ، "لوگوں کو تنہائی میں رکھا جارہا ہے ان کی تلاش ، الگ تھلگ ، جانچ اور علاج کرنا ایک بہترین اور تیز ترین طریقہ ہے ، لیکن اس کے علاوہ معاشرتی اور معاشی سطح پر بھی بڑے اقدامات اٹھانے ہوں گے۔
اہم بات یہ ہے کہ یہ وائرس 180 سے زیادہ ممالک میں پھیل چکا ہے اور اب تک 20 ہزار سے زیادہ افراد ہلاک ہوچکے ہیں۔ صرف چین اور اٹلی میں ، اموات کی تعداد 10،000 کو عبور کر چکی ہیں ۔ساڑھے چار لاکھ افراد اس سے متاثر ہیں۔ دنیا بھر کے ممالک میں ہنگامی صورتحال جیسے حالات ہیں۔ بہت سے ممالک نے اس کی روک تھام کے لئے لاک ڈاؤن کی راہ اپنائی ہے اور تین ارب سے زیادہ افراد لاک ڈاؤن میں رہنے پر مجبور ہیں۔

Post Top Ad

Your Ad Spot