Sada E Waqt

چیف ایڈیٹر۔۔۔۔ڈاکٹر شرف الدین اعظمی۔۔ ایڈیٹر۔۔۔۔۔۔ مولانا سراج ہاشمی۔

Breaking

متفرق

Thursday, April 23, 2020

عالمی ادارہ صحت :::::::کووڈ۔19سے طویل جنگ کے لیے تیار رہیں دنیا،ابھی ختم نہیں ہوگا کورونا کا قہر

یہ وائرس طویل مدت تک ہمارے درمیان رہنے والا ہے“۔ گیبری یسس نے کہا کہ دنیا کا کوئی بھی شخص اس وائرس کا شکار ہو سکتا ہے۔ یہ صحیح ہے کہ بہت سے ممالک میں طویل عرصے سے لاک ڈاؤن میں ہیں اور اب لوگ عام زندگی جینا چاہتے ہیں.
صداٸے وقت /ذراٸع / ایجینسیاں /٢٣ اپریل ٢٠٢٠۔
==============================
عالمی ادارہ صحت (ڈبلیو ایچ او) نے بدھ کو خبردار کیا کہ وبا بن چکے کورونا وائرس کووڈ۔19' سے طویل جنگ کے لئے دنیا کو تیار رہنا چاہیے۔ڈبلیو ایچ او کے ڈائریکٹر جنرل ڈاکٹر تیدروس گیبری یسس نے کورونا وائرس کے سلسلے میں تنظیم کی باقاعدہ پریس بریفنگ میں کہا ”زیادہ تر ممالک میں یہ وباء اب ابتدائی مرحلے میں ہے۔ ہمیں طویل راستہ طے کرنا ہے۔ یہ وائرس طویل مدت تک ہمارے درمیان رہنے والا ہے“۔ گیبری یسس نے کہا کہ دنیا کا کوئی بھی شخص اس وائرس کا شکار ہو سکتا ہے۔ یہ صحیح ہے کہ بہت سے ممالک میں طویل عرصے سے لاک ڈاؤن میں ہیں اور اب لوگ عام زندگی جینا چاہتے ہیں، لیکن ان کی اچھی صحت کے لئے ضروری ہے کہ وہ ہدایات پر عمل کریں۔
ڈبلیو ایچ او نے تمام ممالک کو واضح طور پر متنبہ کیا ہے کہ ایک غلطی یا جلدبازی یا غفلت سے بھی بچا جاسکتا ہے ۔ڈبلیو ایچ او نے چین میں ووہان کے بارے میں واضح طور پر اشارہ کرتے ہوئے کہا تھا کہ وہاں حالات معمول پر لوٹ رہے ہیں۔ ووہان میں کورونا وائرس کے انفیکشن کے نئے معاملات میں کمی کے بعد لاک ڈاؤن کو ختم کردیا گیا۔ لیکن ووہان میں ایک بار پھر کورونا انفیکشن کے نئے معاملے سامنے آرہے ہیں۔ دو ماہ پہلے کورونا سے صحت یاب ہونے والے بہت سے مریضوں میں دوبارہ کورونا کی تصدیق ہوگئی۔ ایسے میں دنیا میں رجحان کورونا کے معاملے میں بدلتا ہوا نظر آتا ہے۔ لوگ اس کی علامات نہیں دیکھے رہے ہیں۔ جو انفیکشن پھیلانے میں بہت خطرناک ثابت ہوسکتے ہیں۔
واضح رہے کہ دنیا کے بہت سارے ممالک لاک ڈاؤن میں نرمی یا پھر اسے ختم کرنے پر غور کررہے ہیں۔ اس پر ، ڈبلیو ایچ او نے انتباہ دیا کہ ایسی عجلت،سنگین نتائج بھگتنے کی کوئی وجہ نہیں بننی چاہئے۔ ڈبلیو ایچ او نے دنیا کے تمام ممالک سے اپیل کی تھی کہ وہ لاک ڈاؤن کوختم کرنے میں جلدی نہ کریں۔ انہوں نے کہا کہ حکومتوں کو آہستہ آہستہ سماجی دوری اور لاک ڈاؤن کو دور کرنا ہوگا کیونکہ کورونا کے انفیکشن کو روکنے کے لئے چوکس رہنے کی ضرورت ہے۔
یورپ کے بہت سے ممالک لاک ڈاؤن کو آہستہ آہستہ دور کرنے کی تیاری کر رہے ہیں۔ دراصل ، اس کی سب سے بڑی وجہ یہ ہے کہ جب کورونا سے ہر ملک میں ہزاروں افراد کی موت واقع ہوئی ، تو اس نے لاکھوں کروڑوں کی معیشت کو بھی متاثر کیا۔ اب تک دنیا میں 26 لاکھ سے زیادہ افراد کورونا وائرس کے انفیکشن کی وجہ سے بیمار ہوچکے ہیں۔ جبکہ 1 لاکھ 82 ہزار سے زیادہ افراد فوت ہوچکے ہیں۔

Post Top Ad

Your Ad Spot