Sada E Waqt

چیف ایڈیٹر۔۔۔۔ڈاکٹر شرف الدین اعظمی۔۔ ایڈیٹر۔۔۔۔۔۔ مولانا سراج ہاشمی۔

Breaking

متفرق

Monday, April 6, 2020

بھارت پرسب سے بڑامعاشی بحران ،سب کام پی ایم اوسے نہیں ہوناچاہیے۔۔۔۔رگھو رام راجن

حکومت اپوزیشن کے تجربہ کار لیڈروں کی مدد لے،عوام کواقتصادی مددناکافی۔

نئی دہلی /صداٸے وقت /ذراٸع / 6 اپریل 2020.
=============================
 آربی آئی کے سابق گورنر رگھورام راجن نے حکومت کو مشورہ دیا ہے کہ حکومت کوکورونا وائرس سے نمٹنے کے لیے ماہرافرادکی مددلینی چاہیے۔حزب اختلاف کے لوگوں کو بھی اس میں شامل کرنا چاہیے۔راجن نے کہا ہے کہ ہندوستان کو آزادی کے بعدمعاشی طور پر سب سے بڑی ہنگامی صورتحال کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔راجن نے متنبہ کیا ہے کہ وزیر اعظم کے دفتر میں پہلے ہی کام کے بوجھ سے دوچار لوگوں کے ذریعہ سب کچھ کرنا موثر نہیں ہوگا۔ بلکہ حزب اختلاف کے ان لوگوں سے بھی مددلی جانی چاہیے جنھیں عالمی معاشی بحران جیسے حالات سے نمٹنے کا تجربہ ہے۔ 2008-09 کے عالمی مالیاتی بحران کے دوران طلب میں بہت بڑابحران واقع ہواتھا۔ لیکن ہماری کمپنیوں کی ترقی سال بہ سال بڑھتی ہی جارہی ہے۔ ہمارا مالیاتی نظام بھی مضبوط تھا ، لیکن اب یہ کورونا بحران میں نہیں ہے ، کیوں کہ ہم کورونا وائرس سے لڑ رہے ہیں۔راجن نے کہاہے کہ صحیح حل اورترجیحات کا فیصلہ کرنے کے لی ے ملکی وسائل اور طاقتوں کا استعمال کرتے ہوئے کورونا وائرس کو شکست دی جاسکتی ہے۔نیز ، مستقبل کے لیے نئی توقعات بھی طے کی جاسکتی ہیں۔ کورونا وائرس کے معاشی اثرات کو بھی ایسی کوششوں سے بازیافت کیاجاسکتا ہے۔ اس وقت سب سے اہم چیز یہ ہے کہ زیادہ سے زیادہ جانچ کرکے وائرس کوپھیلنے سے روکیں۔معاشرتی دوری پر سختی سے عمل کیا جائے۔راجن نے مشورہ دیا ہے کہ اب لاک ڈاؤن کے بعد ایک لائحہ عمل بننا چاہیے کہ اگر وائرس کا اثر ختم نہیں ہوتا ہے تو ہم کیا کریں گے؟ طویل عرصے تک مکمل طور پر لاک ڈاؤن رکھنا ملک کے لیے مشکل ہوگا۔ لہٰذا ، ہمیں اس کے بارے میں سوچنا چاہیے کہ ہم احتیاط کے ساتھ کم انفیکشن والے علاقوں میں کچھ سرگرمیاں کس طرح شروع کرسکتے ہیں۔ کام کے مقام کے قریب ہاسٹل میں رہنے والے صحت مند نوجوانوں کی شروعات ہوسکتی ہے۔راجن کاخیال ہے کہ اس وقت غریب اور غیر تنخواہ دار متوسط طبقے کا خیال رکھنا ضروری ہے۔ ہر شخص کو براہ راست فائدہ کی منتقلی کافائدہ نہیں ملے گا کیونکہ منتقلی کی جانے والی رقم ایک ماہ کے لیے کافی نہیں لگتی ہے۔ انڈسٹری کے بارے میں بات کرتے ہوئے راجن نے کہا کہ بہت سے چھوٹے اور درمیانے کاروبار پہلے ہی دشواریوں کے شکار ہیں ، ان کے پاس اتنے وسائل نہیں ہیں۔ ان سب کو بچانا ممکن نہیں ہے ، کیونکہ مالی وسائل محدود ہیں اور بجٹ کا بھی خیال رکھنا ہوگا۔ غیر ضروری اخراجات کوبند کرنا ہوگا۔ راجن نے مشورہ دیا کہ بڑی کمپنیاں اپنے چھوٹے سپلائرز کی مددکرسکتی ہیں۔

Post Top Ad

Your Ad Spot