Sada E Waqt

چیف ایڈیٹر۔۔۔۔ڈاکٹر شرف الدین اعظمی۔۔ ایڈیٹر۔۔۔۔۔۔ مولانا سراج ہاشمی۔

Breaking

متفرق

Friday, April 24, 2020

کٸی ‏سال ‏قبل ‏لکھی ‏ہوٸی ‏میری ‏ایک ‏تحریر ‏(سفر ‏نامہ).صداٸے ‏وقت ‏کی ‏نذر۔

کئی سال قبل کی ایک تحریر صداٸے وقت /24 اپریل 2029.
==============================

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ حضرات ،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،ابھی حال میں ہی بمبئی کا سفر ہوا ،یوں تو یہ سفر کلی طور پر ذْاتی نوعیت کا تھا مگر ہمیشہ دورانِ  سفر کچھ نئے تجربات ومشاہدات ہوتے ہیں ،اس بار بھی بمبئی جاتے وقت آعظم آعظم گڑھ کے ایک شیعہ عالمِ  سے ملاقات ہوئی ۔۔موصوف فی الحال شیعہ کالج جونپور کے صدر بھی ہیں ،مسلکی معاملات کو لیکر کافی باتیں ہوئیں ،ان کے کچھ خیالات میرے لئے سوالیہ نشان بنے ہوئے ہیں ،دورانِ  گفتگو اتنا ضرور سمجھ میں آیا کی شیعہ حضرات سنت جماعت کو بھٹکے ہوئے اور غافل سمجھ رہے ہیں ،،،،،،،،،،،،،،                                                                   خیر یہ گفتگو بعد میں ،آج بطور خاص میں جو تذکرہ کرنا چاہتا ہوں وہ یہ ہے کہ واپسی میں مولانا عبد العظیم ندوی صاحب سے ملاقات ہوئی ،مولانا سے میرے پرانے مراسم ہیں مگر کافی دنوں سے با لمشافہ ملاقات نہیں ہوئی تھی ،دوران گفتگو  معلوم ہوا کہ موصوف ماہل امباری روڈ پر واقع موضع رسولپور میں ایک مدرسہ چلا رہے ہیں ،مدرسے میں پرائمری اسکول کی تعلیم سرکاری نصاب کے مطابق ہو رہی ہے ساتھ ہی اردو اور دینیات کی بھی تعلیم دے رہے ہیں ،اس کے علاوہ شعبہُ  حفظ بھی ہے ،مدرسہ ابھی ابتدائی مراحل میں ہے ،اس میں جو خاص بات ہے ،جس کا ذکر میں خصوصاً کرنا چاہتا ہوں وہ یہ ہے کہ مولانا کے اس مدرسہ میں تقریباً  140  غیر مسلم بچے زیرِ  تعلیم ہیں ،جس میں 60بچے اپنی مرضی و والدین کی رضا مندی سے اردو کی تعلیم حاصل کر رہے ہیں ،غیر مسلم لڑکیاں ،مسلم لڑکیوں کو دیکھ کر اسکارف کا استعمال کر رہی ہیں ،مولانا موصوف کے مطابق کسی غیر مسلم بچی سے اسکارف کے لئے نہیں کہا گیا جبکہ مسلم بچیوں کے لئے لازم کیا گیا ہے ،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،مولانا کے اس کارنامے سے میں بہت متاثر ہوا انہیں مبارکباد دی ،حالانکہ کی جہاں مدرسہ واقع ہے اسی کے قریب سرکاری پرائمری اسکول بھی ہے ،نزدیک میں اہل ہنود کا ایک بڑا مٹھ بھی ہے ،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،                                               میرے نزدیک یہ قومی یکجہتی کا بہت بڑا کا کام ہے ،ایسی تمام کوششوں کی سراہنا بھی کی جانی چاہئے اور تعاون بھی ،                                                                میں نے حضرت مولانا کو یقین دلایا ہے کہ میں جلد ہی انشا ء الله مدرسہ میں حاظری دوں گا اور ایک رپورٹ شائع کروں گا ،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،                                              ڈاکٹر شرف الدین آعظمی ،،صحافی روزنامہ راشٹریہ سہارا ،اردو ،

Post Top Ad

Your Ad Spot