Sada E Waqt

چیف ایڈیٹر۔۔۔۔ڈاکٹر شرف الدین اعظمی۔۔ ایڈیٹر۔۔۔۔۔۔ مولانا سراج ہاشمی۔

Breaking

متفرق

Sunday, August 30, 2020

اتر ‏پردیش ‏میں ‏برہمنوں ‏پر ‏ظلم ‏کیوں۔۔۔۔۔۔۔انوراگ ‏مشرا۔


برہمن سوساٸٹی اتر پردیش میں عام آدمی پارٹی کے ساتھ کھڑے ہونے کا منصوبہ بنارہی ہے۔۔۔۔۔۔۔۔
انوراگ مشرا۔
 جونپور۔۔اتر پردیش /صداٸے وقت /نماٸندہ۔
============================= 
عام آدمی پارٹی کے صوباٸی ناٸب صدر و سابق ضلع صدر انوراگ مشرا نے ایک پریس ریلیز جاری کرتے ہوٸٕے کہا کہ  اتر پردیش میں  یوگی حکومت غنڈہ راج کو ختم کرنے کے نام پر آئی ، لیکن غنڈوں کی حکمرانی قائم ہوگٸی ہے۔۔  تھانوں میں ذات پات دیکھ کر کام کیا جارہا ہے ، بی جے پی کے ممبر اسمبلی رادھا موہن داس اگروال نے کہا کہ اتر پردیش میں ٹھاکر راج کر رہے ہیں۔  اترپردیش میں 14 فیصد برہمن ہیں جنہوں نے مل کر قوم پرستی اور رام راجیہ کے نام پر بی جے پی کی حکومت تشکیل دی۔  خود بی جے پی حکومت کے پاس 58 برہمن ممبران اسمبلی ہیں ، جن میں نائب وزیر اعلی دنیش شرما بھی شامل ہیں۔  اس کے باوجود  بھی برہمنوں پر زبردست ظلم کیا جارہا ہے۔  ریاست میں آٸے دن  برہمنوں کا قتل کیا جارہا ہے۔  
بارہویں میں کانپور میں تعلیم حاصل کرنے والے پربھات مشرا کو پولیس نے فائرنگ کر کے ہلاک کردیا تھا ، جبکہ اس کے خلاف کوئی ایف آئی آر نہیں ہے۔
 نئی شادی شدہ خوشی دوبے  بے گناہ ہونے کے باوجود جیل میں بند ہے۔صحافی شبھم و  وکرم جوشی و منی ترپاٹھی کا قتل،پرتاپ گڑھ میں دو  لوگوں کا کلہاڑی کے ذریعہ قتل ، گورکھپور میں وکیل راجیشور پانڈے کا قتل ، ایل آئی سی ایجنٹ منوج دوبے  کا قتل ، یہ سارے معاملے اس بات کا ثبوت ہیں کہ اتر پردیش میں برہمنوں پر تشدد کیا جارہا ہے۔  بی جے پی کے ممبر اسمبلی دیومنی دوبے نے خود قانون ساز اسمبلی میں یہ سوال پوچھا کہ "ریاست میں کتنے برہمنوں کو مارا گیا؟"  بی جے پی کے ایم ایل سی امیش دویدی نے کہا کہ "برہمنوں کا انشورنس کروائیں گے" ، یعنی ان کی زندگی محفوظ نہیں ہے۔  لیکن ان تمام امور پر تمام جماعتیں خاموش ہیں۔  اس ناانصافی کے خلاف صرف عام آدمی پارٹی اور اس کے ریاستی انچارج ممبر پارلیمنٹ سنجے سنگھ ہی آواز اٹھا رہے ہیں۔  ریاست میں سب سے زیادہ تعداد میں ہونے کے باوجود برہمن برادری کو نظرانداز کیا جارہا ہے ، برہمن  پریشان ہیں کیونکہ بی جے پی نے ان کی امید کے ساتھ دھوکہ کیا ہے جس نے بی جے پی کو ووٹ دیا ہے۔  برہمن سماج نے ہمیشہ قوم اور ملک کے بارے میں سوچا ہے۔  برہمن ہمیشہ حق کے ساتھ کھڑا ہے۔  یہی وجہ ہے کہ برہمن سماج  راون کے ساتھ نہیں کھڑا ہوا ، بلکہ بھگوان رام کے ساتھ کھڑا ہوا ، اور اسے اپنا آئیڈیل بنایا  برہمن معاشرہ اس کے ساتھ کھڑا ہوگا جس کو واقعتا  قوم و وطن سے  پیار  ہوگا۔  آج برہمن سماج میں یہ بحث چل رہی ہے کہ اروند کیجریوال کی حکومت دلی میں دراصل اچھا کام کر رہی  ہے۔  دہلی حکومت سماج کے آخری فرد کو اپنی بنیادی  ضروریات  تعلیم ، صحت ،  ملازمت ، بجلی ، پانی مہیا کررہی ہے۔  اترپردیش میں بھی برہمن سوسائٹی عام آدمی پارٹی کے ساتھ کھڑے ہونے کا منصوبہ بنا رہی ہے۔

Post Top Ad

Your Ad Spot