Sada E Waqt

چیف ایڈیٹر۔۔۔۔ڈاکٹر شرف الدین اعظمی۔۔ ایڈیٹر۔۔۔۔۔۔ مولانا سراج ہاشمی۔

Breaking

متفرق

Friday, September 11, 2020

دہلی ‏سے ‏ملحق ‏غازی ‏آباد ‏میں ‏ریاست ‏اتر ‏پردیش ‏کا ‏پہلا ‏ڈیٹنشن ‏سینٹر ‏(حراستی ‏کیمپ ‏) ‏بن ‏کر ‏تیار۔۔اتر ‏پردیش ‏کا ‏پہلا ‏اور ‏ملک ‏کا ‏بارہواں ‏حراستی ‏مرکز ‏ہے۔

غازی آباد۔اتر پردیش /صداٸے وقت /ذراٸع /١١ ستمبر ٢٠٢٠۔
============================= قومی راجدھانی دہلی سے ملحق غازی آباد کے  نندی گرام میں اتر پردیش کا پہلا حراستی مرکز تیار ہے۔ اس میں  پچھلے ایک سال سے کام جاری تھا۔  اس میں یو پی میں رہاٸش پزیر غیر ملکیوں کو رکھا جاٸے گا۔اس کا افتتاح اکتوبر میں ہوسکتا ہے۔  حراستی مرکز کی  عمارت کو رنگنے اور مرمت کرنے کا کام مکمل ہوچکا ہے۔  بجلی ، پانی ، پنکھے ، بیت الخلاء وغیرہ بھی گذشتہ کچھ دنوں میں مکمل ہوگئے ہیں۔  اس میں تین بڑے ہال ہیں۔  اس میں  100 غیر ملکیوں کو رکھا جا سکتا ہے۔  سیکیورٹی کے خاطر خواہ انتظامات کئے گئے ہیں۔اس کی دیوراں پر کافی اونچاٸی تک تار لگا دٸے گٸے ہیں   مارچ میں  اس وقت کے ایس پی سٹی منیش مشرا نے سیکیورٹی انتظامات کا جائزہ لینے کے لئے مرکز کا معائنہ کیا۔
امبیڈکر  ہاسٹل کو  بنایا مرکز
 نندی گرام میں دلت طلبہ کے لئے الگ سے دو امبیڈکر ہاسٹلز تعمیر کیے گئے تھے۔  دونوں ہاسٹل میں 408 طلباء کی گنجائش تھی ۔  اس کا افتتاح 15 جنوری 2011 کو ہوا تھا۔  لڑکیوں کے لئے تعمیر  ہاسٹل پچھلے کئی سالوں سے بند ہے۔  دیکھ بھال نہ کرنے کی وجہ سے ، اس کی عمارت خستہ حال تھی۔  مرکزی حکومت کی طرف سے لڑکیوں کے  ہاسٹل  کو ڈیٹینشن سینٹر بنانے کے لئے بجٹ جاری کیا گیا تھا۔  اورمیرٹھ کی ایک تعمیراتی ایجنسی کو اس کا ٹھیکہ دیا گیا تھا  جس نے اس ہاسٹل کو حراستی کیمپ میں تبدیل کردیا ۔
 حراستی مرکز کیا ہے؟
 غیرقانونی تارکین وطن (دوسرے ممالک سے تعلق رکھنے والے شہری) کے لئے جیل میں  نظربند کرنے کے لیٸے جو حراستی کیمپ بنتا ہے اس کو حراستی  مرکز کہا جاتا ہے۔   جو غیر ملکی ایکٹ ، پاسپورٹ ایکٹ کی خلاف ورزی کرتے ہیں ، ان کو نظربندی مراکز میں رکھا جاتا ہے جب تک کہ وہ حوالگی نہ کیا جائے۔
 یہ ملک کا ١٢ واں حراستی مرکز ہے ۔
 ملک میں اس وقت 11 حراستی مراکز ہیں۔  ان میں سے چھ حراستی مراکز آسام میں ہیں۔  دوسرے مراکز دہلی ، مہپسا (گوا) ، الور جیل (راجستھان) اور امرتسر جیل (پنجاب) اور سونڈیکوپا (کرناٹک) بنگلورو کے قریب ہیں۔  پچھلے سال نومبر تک  ملک میں غیر قانونی طور پر مقیم 1043 غیر قانونی تارکین وطن کو اس میں رکھا گیا تھا۔  کانگریس حکومت نے 2009 میں آسام کی جیلوں کو نظربند مرکز بنانے کا فیصلہ کیا تھا۔  2012 میں ، آسام میں گوالپارہ ، کوکراجھار اور سلچار کی جیلوں کے اندر ایک حراستی مرکز قائم کیا گیا تھا۔  بعد میں ، جورہت تیج پور اور ڈبروگڑھ کی جیلوں میں بھی حراستی مراکز قائم کردیئے گئے۔  ملک کا سب سے بڑا حراستی مرکز گوالپارہ میں مٹیا میں تعمیر کیا جارہا ہے جہاں تین ہزار غیر قانونی تارکین وطن کو رہائش فراہم کی جاسکتی ہے۔  پنجاب اور مہاراشٹر میں دو ، دو بنگال میں ایک ایک مرکز بنانے کے لئے کام جاری ہے۔  آسام میں حراستی مراکز میں سے 98.3 فیصد بنگلہ دیش کے شہری ہیں اور باقی میانمار کے ہیں۔

Post Top Ad

Your Ad Spot