Sada E Waqt

چیف ایڈیٹر۔۔۔۔ڈاکٹر شرف الدین اعظمی۔۔ ایڈیٹر۔۔۔۔۔۔ مولانا سراج ہاشمی۔

Breaking

متفرق

Tuesday, February 16, 2021

پوروانچل یونیورسٹی کے تقسیم اسناد تقریب میں 73ہونہاروں کو ملا گولڈ میڈل. ‏

طلبا کی ثقافت کے مطابق شخصیت کی تشکیل کریں:
 آنندی بین پٹیل
تعلیم اور صحت کی سہولیات ملک کے آخری فرد تک پہنچتی ہیں:
 پروفیسر پنجاب سنگھ. 

جون پور..  اتر پردیش /صدائے وقت/نمائندہ /16فروری 2021.
=============================
 ویر بہادر سنگھ پورانچل یونیورسٹی کے 24 ویں تقسیم اسنادپروگرام میں منگل کے روزصوبے کی گورنر اور ریاست کی چانسلر آنندی بین پٹیل نے سیمینار عمارت میں 73 ہونہارطلباء۔طالبات کو گولڈ میڈل دیا۔ اس کے ساتھ ہی 67 محققین کو پی ایچ ڈی کی ڈگری تقسیم کی گئی۔ پروگرام میں مہمانوں نے درجہ 6 سے 8 تک کے 51 بچوں کو اسکول بیگ بھی تحفے میں دیا۔
پروگرام سے خطاب کرتے ہوئے گورنر آنندی بین پٹیل نے کہا کہ طلبا ء کو اپنی ثقافت کے مطابق اپنی شخصیت اور کردار کی تشکیل کرنی چاہئے،یہی اصل تعلیم ہے۔ نئی تعلیمی پالیسی2020 ملک کو قومی کردار اور شخصیت سازی کے ساتھ ترقی یافتہ قوم کے زمرے میں بنانے میں معاون ثابت ہوگی۔ انہوں نے کہا کہ طلباء پھولوں کی طرح معیار ی کے ساتھ ساتھ قابل بھی بنیں۔اطفال شادی کا سختی سے مخالفت کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ اس کی مخالفت گھر کے ممبروں سے شروع ہونا چاہئے، ایسی تقریب میں شرکت نہ کریں اور لوگوں کو شرکت کی اجازت نہ دیں۔ 
غذائیت قلت سے متاثر بچے اطفال شادی کی اصل وجہ ہیں۔ انہوں نے کہا کہ یونیورسٹی اور کالج اساتذہ کو ٹی بی سے پاک معاشرے کے لئے آگے آنا چاہئے۔انہوں نے خواتین پر مظالم اور تشدد پر سنگین سوالات اٹھائے،کہا کہ عورت ماں، بہن، بیوی، بھابھی ہے، وہ ہی کنبہ کو آگے بڑھاتی ہے۔ انہوں نے خواتین کو معاشرے میں تبدیلی کے لئے اپنی سوچ میں تبدیلی لانے پر زورد یا۔
 مہمان خصوصی رانی لکشمی بائی مرکزی زرعی یونیورسٹی جھانسی کے چانسلر پروفیسر پنجاب سنگھ نے کہا کہ نیو انڈیا کے نعرے کے ساتھ، ہندوستان ایک بار پھر اپنی کھوئی ہوئی طاقت کو دوبارہ حاصل کرنا چاہتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہندوستان کو عالمی گرو بننے کے لئے ایک بار پھر محنت کرنا ہوگی۔ اس کے ساتھ تعلیم، صحت، زراعت اور صنعت کے شعبوں میں بھی انقلابی اصلاحات لانا ہوگا۔حکومت ہند کی نئی قومی تعلیمی پالیسی2020 ایک کوشش ہے کہ ملک کے نوجوانوں کے درمیان اڑان بھرنے کے لئے اور پرانا وقار دوبارہ حاصل کریں۔انہوں نے کہا کہ ہندوستان اپنے مستقبل کے سنہری مرحلے کے قریب ہے جہاں اس کی معیشت نئی بلندیوں کو چھو سکتی ہے۔ ملک کے نوجوانوں میں توانائی، جوش ہے، لامحدود امکانات کے ساتھ تخیل کی پرواز ہے۔ خواب دیکھنے اور پورا کرنے کی ہمت ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہندوستانی تعلیم کی تاریخ ہندوستانی تہذیب کا آئینہ دار ہے اور ہماری عظیم ترقی یافتہ تہذیب کا ثبوت بھی ہے۔ تعلیم کے ساتھ ساتھ صحت بھی ایک بنیادی ایسی ضرورت ہے جو معیاری انداز میں ملک کے آخری فرد تک پہنچنا ضروری ہے۔ انہوں نے کہا کہ زراعت ملک کے جی ڈی پی میں 15 فیصد کی شراکت کرتی ہے، اس سے روزگار کے تقریبا 50فیصد مواقع بھی ملتے ہیں۔ لہذا ملک میں کسان اور زراعت کی اہمیت ہے۔ اس کو مزید مضبوط بنانے سے دیہی کاروباریوں کی حوصلہ افزائی ہوگی۔یونیورسٹی کے وائس چانسلر پروفیسر نرملا ایس موریہ نے کہا کہ یونیورسٹی نئے ریکارڈ قائم کررہی ہے۔ یہاں تک کہ کورونا کے دور میں یونیورسٹی ترقی کی راہ پر گامزن رہی۔ یونیورسٹی نے تعلیمی، انتظامی تحقیق، سیمینار، ماہانہ مباحثہ، تعمیرات، ماحولیاتی تحفظ کے پروگراموں کے ساتھ ساتھ معاشرتی متعلق دیگر کاموں کی بھی رہنمائی کی ہے۔انہوں نے کہا کہ یونیورسٹی نہ صرف ایک تعلیمی ادارہ ہے بلکہ فکری اور کردار شعور پیدا کرنے کا مرکز ہے۔ جدید لیبارٹریوں، کلاس روم، تعلیم یافتہ اساتذہ کی رہنمائی، مناسب تربیت اور غیر نصابی سرگرمیوں میں مصروفیات کثیر الجہتی ترقی کی راہ ہموار کرسکتی ہیں۔ سیکھنے کے مختلف تکنیکی وسائل کے باوجود روایتی کلاسوں میں طالب علم اور اساتذہ کا تعلیمی تعامل ان کی موثر تعمیر میں اعلی عامل ثابت ہوتا ہے۔اس سے قبل تقریب کا آغاز پر ایک جلوس نکالا گیا جس کی قیادت رجسٹرار مہندر کمار نے کی۔پروگرام کی نظامت پروفیسر اجے دیویدی  اور شکریہ ادا رجسٹرار مہندر کمار نے کیا۔اس موقع پر سابق وائس چانسلر پروفیسر پی سی پتنجلی، پروفیسر سریندر سنگھ کشواہا، ایم ایل سی برجیش سنگھ پرنشو، ڈاکٹر لینا تیواری، پروفیسر بی بی تیواری، پروفیسر مانس پانڈے، پروفیسر اویناش پارتھڈکر، پروفیسر رامنارائن، ڈاکٹر منوج مشرا، پروفیسر اجے پرتاپ سنگھ، پروفیسر اے کے سریواستو، پروفیسر وندنا رائے، پروفیسر راجیش شرما، پروفیسر دیوراج سنگھ، ڈاکٹر وجئے سنگھ، ڈاکٹر راہل سنگھ، ڈاکٹر راج کمار، ڈاکٹر منیش گپتا، ڈاکٹر پرمود یادو، اشوک سنگھ، ڈاکٹر سنتوش کمار، ڈاکٹر آلوک سنگھ، ڈاکٹر راکیش یادو، ڈاکٹر جگ دیو، ڈاکٹر آشوتوش سنگھ، ڈاکٹر پردیپ کمار، ڈاکٹر وجے پرتاپ تیواری، ڈاکٹر دگ وجے سنگھ راٹھور، ڈاکٹر سنیل کمار، ڈاکٹر کے ایس تومر سمیت دیگر عملہ موجود رہا۔

Post Top Ad

Your Ad Spot