Sada E Waqt

چیف ایڈیٹر۔۔۔۔ڈاکٹر شرف الدین اعظمی۔۔ ایڈیٹر۔۔۔۔۔۔ مولانا سراج ہاشمی۔

Breaking

متفرق

Wednesday, February 10, 2021

دونوں لیڈروں کے دو دو بوند آنسووءں نے ہندستانی سیاست میں گویا جل تهل مچادیا ہے.

از/محمد خطیب اعطمی ۔/ صدائے وقت۔/ ۱۰فروری ۲۰۲۱
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
 غلام نبی آزاد کا راجیہ سبها میں بحیثیت لیڈر آف اپوزیشن کا ٹرم پورا ہونے پر انکی طرف سے الوداعی تقریر، اسکے بعد وزیراعظم کی تقریر کے بعد سے قیاسات کا  سلسلہ زوروں پرہے.
دونوں لیڈروں کے دو دو بوند آنسووءں نے ہندستانی سیاست میں گویا جل تهل مچادیا ہے.
قیاس شروع ہوگیا ہے کہ شاید غلام نبی آزاد، کشمیر میں مستقبل کے بی جےپی کیطرف سے وزیراعلی ہوں.
کچهہ لوگوں کیلئے یہ قیاس اسلئے وزن دار معلوم ہوتا ہے کہ کیونکہ کچهہ عرصہ قبل جن لوگوں پر ادهر کی بات ادهر کرنے بالفاظ دیگر بی جےپی سے ملنےکا الزام لگایا گیا تها ان میں غلام نبی آزاد بهی تهے.
یہ کہنا غلط نہ ہوگا کہ ابتک کی سیاست میں غلام نبی آزاد کا کردار بہت صاف ستهرا اور نہایت اصول پسندانہ رہا ہے. انهوں نے کبهی اور کسی کیلئے اپنی زبان کو بے قابوں نہیں کیا.
 نریندرمودی یہ کہنا بالکل بجا ہے کہ اقتدار اور عروج پر قابو رکهنا کوئی غلام نبی آزاد سے سیکهے.
غلام نبی آزاد کی باتوں سے ہمیشہ محسوس ہوا ہے وہ اپنے اندر ملک و ملت کا غم اور فکر رکهتے ہیں.
انهوں نے ہمیشہ ہرایک سے تعلق رکها خواہ وہ علماء ہوں، ادباء ہوں یا کوئی اور طبقہ.

آج اگر انکی آنکهوں سے  گرے تو وہ الوداعی موقعہ کی مناسبت کیساتهہ کیساتهہ کشمیریوں کی حالت زار کے تذکرہ پربهی گرے. شاید انہیں اس بات کا قلق ہوا ہو کہ اتنا عرصہ سیاست میں رہتے ہوئے کشمیری مسلمانوں کیلئے وہ اتنا کچهہ نہیں کرسکے جتنا کرنا چاہئے تها. اب اگر کشمیریوں کیلئے کچهہ کرنے کی غرض سے وہ بی جےپی میں جاتے ہیں تو شاید کچهہ حرج نہ ہو_ وہ بهی اس صورت میں کہ انهوں نے دل و جان سے اپنی پوری زندگی کانگریس کی آبیاری کیلئے وقف کردی پهربهی  انپر بےوفائی کا داغ لگا دیا گیا.
ویسے بهی موقعہ بموقعہ فاروق عبداللہ سے لیکر مفتی سعید و محبوبہ مفتی تک ہر ایک نے بی جےپی کا دامن تهاما ہے.

ویسے امید نہیں کہ غلام نبی آزاد اپنی اصولی سیاست کو کبهی خیرباد کہیں گے.
 اب دیکهنا یہ ہے کہ آئندہ کانگریس غلام نبی آزاد کے تئیں کتنا ظرف دکهاتی ہے اور کتنا دامن کشادہ کرتی ہے.کیونکہ احمدپٹیل مرحوم کے بعد غلام نبی آزاد دوسرے ایسے بڑے مسلم لیڈر ہیں جو حقیقی معنوں میں پارٹی مفاد کی فکر رکهتے ہیں.

محمدخطیب اعظمی

Post Top Ad

Your Ad Spot