Sada E Waqt

چیف ایڈیٹر۔۔۔۔ڈاکٹر شرف الدین اعظمی۔۔ ایڈیٹر۔۔۔۔۔۔ مولانا سراج ہاشمی۔

Breaking

متفرق

Tuesday, May 25, 2021

اترپردیش میں سیوریج کے پانی میں کوروناوائرس ملنے کے بعدہلچل، پی جی آئی نے کی تصدیق ‏. ‏. ‏. ‏ عوام ‏میں ‏ تشویش ‏. ‏. ‏

لکھنؤ: اتر پردیش /صدائے وقت /ذرائع /25 مئی 2021. 
==============================
کورونا وباء کی دوسری لہر کے درمیان ، یوپی ریاستی حکومت کورونا بحران پر قابو پانے کا دعویٰ کررہی ہے، جبکہ اب سیوریج کے پانی میں کورونا وائرس کی تصدیق ہونے کے بعد دارالحکومت لکھنؤ میں ہلچل مچ گئی ہے۔دار الحکومت کے عوام میں اس بات کو لیکر تشویش ہے. 
 لکھنؤ پی جی آئی نے پانی کے نمونے کی جانچ کی جارہی ہے۔ جس کے بعد پانی میں کورونا وائرس کی تصدیق ہوگئی ہے۔ پی جی آئی مائکروبیولوجی ڈیپارٹمنٹ (ایچ او ڈی) کے سربراہ ڈاکٹرڈاکٹر اُجوالہ گھوشل نے بتایا کہ ملک میں سیوریج کے نمونے لینے کا کام آئی سی ایم آر-ڈبلیو ایچ او نے شروع کیا تھا۔ اس میں ، یوپی کے مختلف اضلاع سے بھی سیوریج کے نمونے بھی لئے گئے ہیں۔
ایس جی پی آئی لیب میں سیوریج کے نمونے والے پانی میں وائرس کی تصدیق ہوگئی ہے۔ انہوں نے بتایا کہ لکھنؤ کے کھدرہ کے رکپور ، گھنٹہ گھر اور مچھلی محل سے سیوریج کے پانی کے نمونے حاصل کیے گئے تھے ۔ سیوریج کے پانی کو ایسے نالے سے لیاگیا ہے جہاں پورے محلہ کا پانی جمع ہوتاہے۔ 19 مئی کو، اس نمونے کی جانچ کی گئی ، اور روک پور کھڈرا کے سیوریج کے نمونے میں کورونا وائرس پایاگیا۔ پوری صورتحال سے آئی سی ایم آر اور ڈبلیو ایچ او کو آگاہ کردیا گیا ہے۔گھوشل نے کہا کہ ابھی یہ ابتدائی مطالعہ ہے۔ مستقبل میں اس کا تفصیل سے مطالعہ کیا جائے گا۔
ڈاکٹر اُجوالہ گھوشل نے بتایا کہ کچھ عرصہ پہلے پی جی آئی کے مریضوں میں ایک تحقیق کی گئی تھی ، اس وقت پتہ چلا تھا کہ کورونا وائرس پانی تک پہنچ سکتا ہے۔ان حالات ، اس بات کا امکان موجود ہے کہ کورونا وائرس میں مبتلا تمام مریضوں کے پاخانہ (سیوریج) سے سیوریج تک پہنچ گیا ہے۔ کئی دیگر تحقیقی مقالوں میں یہ بھی انکشاف ہوا ہے کہ 50فیصدمریضوں کے پاخانہ کے وائرس سیوریج تک پہنچتے ہیں۔
پانی کی آلودگی کے بارے میں مطالعہ کرتے ہوئےڈاکٹر اُجوالہ گھوشل نے کہا کہ گندی نالیوں کے ذریعے پانی ندیوں تک پہنچتا ہے۔ ایسی صورتحال میں یہ مطالعہ کرنا باقی ہے کہ اس سے عام لوگوں کو کتنا نقصان ہوگا۔

Post Top Ad

Your Ad Spot