Sada E Waqt

چیف ایڈیٹر۔۔۔۔ڈاکٹر شرف الدین اعظمی۔۔ ایڈیٹر۔۔۔۔۔۔ مولانا سراج ہاشمی۔

Breaking

متفرق

Friday, May 21, 2021

صدرجمعیۃ علماءہندومعاون مہتمم دارالعلوم دیوبندمولاناقاری سیدمحمدعثمان منصورپوری کاسانحہ ارتحال. ‏

مولانا قاری سید محمد عثمان منصورپوری نوراللہ مرقدہ نے آج دوپہر گروگرام کے میدانتا ہسپتال میں داعی اجل کو لبیک کہا۔ حضرت مولانا مرحوم کرونا وائرس کے مابعد ہونے والی پیچیدگیوں کے شکار تھے،

نئی دہلی /صدائے وقت /ذرائع /21 مئی 2021. 
===+=+==========+=====+=======
جمعیۃ علماء ہند کے صدر اور دارالعلوم دیوبند کے معاون مہتمم مولانا قاری سید محمد عثمان منصورپوری نے آج دوپہر گروگرام کے میدانتا ہسپتال میں داعی اجل کو لبیک کہا۔ حضرت مولانا مرحوم کرونا وائرس کے مابعد ہونے والی پیچیدگیوں کے شکار تھے، 19/مئی کو ان کو میدانتا ہسپتال میں داخل کیا گیا تھا،جہاں علاج کے دور ان حرکت قلب بند ہونے کی وجہ سے وصال فرماگئے۔ آپ بیک وقت ایشیا کے دوبڑے ادارے دارالعلوم دیوبند اور جمعیۃ علماء ہند کے رہ نما تھے، مارچ 2008ء سے تادم واپسیں جمعیۃ علماء ہند کے صدر تھے۔2010ء میں حضرت مولانا مرغوب الرحمن ؒ کے وصال کے بعد آپ کو امارت شرعیہ ہند کے تحت امیر الہند رابع منتخب کیا گیا تھا۔1995 سے جمعیۃ علماء ہند کی مجلس عاملہ کے مدعو خصوصی و رکن رہے، 1979ء میں حضرت فدائے ملت ؒ مولانا سید اسعد مدنی ؒ کی قیادت میں ہونے والی’ملک و ملت بچاؤ تحریک‘میں آپ جیل بھی گئے۔فدائے ملت ؒکے وصال کے بعد تنظیم کی اصل پالیسی اور روایات کے مطابق انہوں نے مشن اور کاموں کو آگے بڑھایا۔ ان کے دور صدارت میں جمعیۃ علماء ہند نے دہشت گردی کے خلاف ملک گیر سطح پر تحریکیں چلائیں اور اور اسلام کے پیغام امن کی اشاعت کے لیے دہلی اور دیوبند میں عالمی سطح کی’امن عالم کانفرنس‘ منعقد کی. 
حضرت مولانا مرحوم ملک میں سبھی طبقوں کے درمیان فرقہ وارانہ ہم آہنگی کے لیے بھی کوشاں رہے، چنانچہ جمعیۃ علماء ہند نے اپنے اجلاس منتظمہ 2019ء میں ہندو مسلم کے درمیان فرقہ وارانہ ہم آہنگی کے لیے سدبھاؤنا منچ قائم کیا، اسی طرح 2017ء میں ایک ہزار شہروں میں ایک ساتھ امن مارچ نکالا گیا،نیز دلت مسلم اتحاد کے لیے تحریکیں چلائی گئیں۔2011ء میں انسداد فرقہ وارانہ فساد بل اور مسلم اقلیت کو ریزرویشن کے لیے’ملک وملت بچاؤ تحریک‘ چلائی گئی، جس کی قیادت آپ نے خود لکھنو میں فرمائی۔ اس کے علاوہ سال 2016ء میں اجمیر شریف میں جمعیۃ علماء ہند کا 33/واں اجلاس عام منعقد ہوا، جس میں مسلمانوں کے دو طبقے آپس میں ایک سا تھ سر جوڑ کر بیٹھے اور اتحاد کا پیغام دیا۔ آپ کی قیاد ت میں جمعیۃ علماء ہند نے دہلی فساد متاثرین اور اس سے قبل بہار، کشمیر سیلاب زدگان اور مظفرنگر و آسام فساد زدگان کی بازآبادکاری کا بڑا کارنامہ انجام دیا۔ آپ جمعیۃ علماء ہند کے جنرل سکریٹری مولانا محمود مدنی صاحب کے مربی اور استاذ تھے، صدر جمعیۃ علماء ہند منتخب ہونے کے بعد آپ نے اپنی فراست اور دانش مندی سے ہمیشہ ان کی رہ نمائی فرمائی۔مولانا مدنی نے ان کی وفات کو خاص طور سے ذاتی نقصان بتایا اور کہا کہ وہ آج اپنے ایک مربی، استاذ اور سرپرست سے محروم ہو گئے۔ آپ کوفضل و کمال، شرافت و نجابت اور تقویٰ و طہارت کے ساتھ قدرتِ فیاض سے حسنِ تربیت اور نظم و نسق کی اعلیٰ صلاحیت عطا ہوئی۔ طالبانِ علوم کے ساتھ ہمدردی، غمگساری اور فریاد رسی آپ کا خصوصی امتیاز رہا، جبکہ اصول پسندی طبعی وصف تھی۔
اس کے علاوہ آپ دارالعلوم دیوبند کے انتہائی موقر استاذحدیث تھے،1986ء سے ازہر ہند دارالعلوم دیوبند میں تدریسی فرائض کے ساتھ مختلف انتظامی ذمہ داریاں بحسن و خوبی انجام دیتے رہے۔ آپ کا درس حشو و زوائد سے پاک انتہائی متین، سنجیدہ اور عالمانہ ہوتا۔ زبان صاف ستھری اور ترجمہ انتہائی سلیس اور شستہ ہوتا تھا۔آپ 1999ء سے 2010ء تک دارالعلوم دیوبند کے نائب مہتمم رہے، حال میں رکن شوری دارالعلوم دیوبند نے آپ کو معاون مہتمم منتخب کیا، آپ فی الوقت دارالعلوم دیوبند کے قائم مقام مہتمم بھی تھے۔آپ تحفظ ختم نبوت تحریک کے لیے عالمی سطح پر معروف تھے اور یہ آپ کی ممتاز خدمات میں سے ایک تھی۔اکتوبر 1989ء میں عالمی اجلاس تحفظ ختم نبوت کا انعقاد ہوا، جس کے آپ کنوینر تھے۔ اس موقع پر ’کل ہند مجلس تحفظ نبوت‘ کا قیام عمل میں آیا، آپ ناظم منتخب ہوئے، جس پر تادم واپسیں فائزر ہے۔ اس ادارہ نے ملک کے طول و عرض میں فتنہ قادیانیت کی سرکوبی کے لیے عظیم تر خدمات انجام دیں، جو دارالعلوم کی تاریخ کا ایک سنہرا باب ہے۔ یہ تمام خدمات آپ کی ایمانی حس و حمیت، انتھک جدوجہد اور بے پناہ جذبہ کا ثمرہ ہے۔ آپ کی وفات سے ایشیاء کے دو بڑے ادارے دارالعلوم دیوبند اور جمعیۃ علماء ہند کو اور بالعموم ملت اسلامیہ ہند کو نقصان عظیم لاحق ہو ا ہے، جس کو پر کرنا مشکل ہو گا۔آج پورا ملک ایسے عظیم اور مخلص رہ نما کی وفات پر غم میں ڈوبا ہوا ہے
مولانا قاری سید محمد عثمان منصورپوری مرحوم کا تعارف
مولانا قاری سید محمد عثمان منصورپوری، شیخ الاسلام حضرت مولانا سیّد حسین احمد مدنی نوراللہ مرقدہ‘ کے داماد، دارالعلوم دیوبند کے سابق نائب مہتمم، استاذِ حدیث اور کل ہند مجلسِ تحفظ ختم نبوت کے ناظم بھی تھے۔ حسن و جمال، فضل و کمال، شرافت و نجابت اور تقویٰ و طہارت کے ساتھ قدرتِ فیاض سے حسنِ تربیت اور نظم و نسق کی اعلیٰ صلاحیت عطا ہوئی۔ طالبانِ علوم کے ساتھ ہمدردی، غمگساری اور فریاد رسی آپ کا خصوصی امتیاز رہا، جبکہ اصول پسندی طبعی وصف تھی۔ آپ کا وطن منصور پور ضلع مظفر نگر ہے، جہاں 21/اگست 1944ء کو سادات کے ایک معزز گھرانے میں پیدا ہوئے۔ والدِ گرامی نواب سیّد محمد عیسیٰ مرحوم انتہائی متمول رئیس اور زمیندار تھے۔ اسی کے ساتھ نہایت صالح، متقی اور حد درجہ پابندِ شریعت۔خلافِ شرع امور کے لیے ان کی طبیعت میں کوئی گنجائش نہ تھی۔ اولاد کو علم وعمل سے آراستہ کرنے کا بے پناہ جذبہ اور انتہائی لگن تھی، اس کی خاطر گھر چھوڑ کر دیوبند میں اقامت اختیار کرلی تھی۔ 1963ء میں دیوبند ہی میں انتقال ہوا۔ مزارِ قاسمی میں مدفون ہیں۔ آپ نے ابتدائی تعلیم وطن میں حاصل کی اور حفظِ کلام اللہ والد مرحوم کے پاس کیا۔ پھر فارسی درجات سے دورہئ حدیث تک مکمل تعلیم مادرِ علمی دارالعلوم دیوبند میں حاصل کی۔ ہمیشہ امتیازی نمبرات سے کامیاب ہوتے رہے۔ 1965ء-1375ھ میں دورہئ حدیث کے امتحان میں فرسٹ پوزیشن حاصل کی۔1966ء میں شیخ القراء حضرت قاری حفظ الرحمن صاحبؒ اور قاری عتیق صاحبؒ سے تجوید و قرأت کا فن حاصل کیا۔ ادیبِ اریب مولانا وحید الزماں کیرانویؒ سے عربی زبان و ادب میں کمال حاصل کیا اور امیر الہند حضرت مولانا سیّد اسعد مدنیؒ سے سلوک و معرفت کی تکمیل کی اور خلافت و اجازت سے مشرف ہوئے۔ تعلیم سے فراغت کے بعد پانچ سال جامعہ قاسمیہ گیا بہار میں اور گیارہ سال جامعہ اسلامیہ جامع مسجد امروہہ میں تدریسی خدمات انجام دیں۔ مختلف علوم و فنون کی کتابیں زیرِ درس رہیں۔ ساتھ ہی جمعیۃ علماء ہند کے پلیٹ فارم سے ملّی خدمات کا سلسلہ بھی جاری رہا۔ 1979ء میں ملک و ملت بچاؤ تحریک کے پہلے دور میں ایک جتھہ کی قیادت کرتے ہوئے گرفتاری دی اور دس دن تہاڑ جیل میں رہے۔ جمعیۃ علماء ہند کی مجلسِ عاملہ میں بحیثیت رکن، مدعو خصوصی شریک ہوکر اپنی قیمتی آرا و مشوروں سے مستفید کرتے رہے۔ ۶/مارچ 2008ء کو مجلسِ عاملہ نے عارضی طور پر صدر منتخب کیا اور 5/اپریل 2008ء کو مجلسِ منتظمہ نے مستقل طور پر صدر منتخب کرلیا۔ تادم واپسیں اس عظیم منصب پر فائز ہوکر خدمات انجام دیتے رہے۔ 1986ء سے ازہر ہند دارالعلوم دیوبند میں تدریسی فرائض کے ساتھ مختلف انتظامی ذمہ داریاں بحسن و خوبی انجام دیتے رہے۔ آپ کا درس حشو و زوائد سے پاک انتہائی متین، سنجیدہ اور عالمانہ ہوتا۔ زبان صاف ستھری اور ترجمہ انتہائی سلیس اور شستہ ہوتا تھا۔ اکتوبر1986ء میں عالمی اجلاس تحفظ ختم نبوت کا انعقاد ہوا، جس کے آپ کنوینر تھے۔ اس موقع پر ’کل ہند مجلس تحفظ نبوت‘ کا قیام عمل میں آیا، آپ ناظم منتخب ہوئے، جس پر تادم واپسیں فائزر ہے۔ اس ادارہ نے ملک کے طول و عرض میں فتنہئ قادیانیت کی سرکوبی کے لیے عظیم تر خدمات انجام دیں، جو دارالعلوم کی تاریخ کا ایک سنہرا باب ہے۔ یہ تمام خدمات آپ کی ایمانی حس و حمیت، انتھک جدوجہد اور بے پناہ جذبہ کا ثمرہ ہے۔

Post Top Ad

Your Ad Spot